Voice of Asia News

پابندیوں سے ایک بار پھر ثابت ہو گیا ہے کشمیر ایک پولیس اسٹیٹ ہے‘حریت کانفرنس

سرینگر(وائس آف ایشیا)مقبوضہ کشمیرمیں کل جماعتی حریت کانفرنس نے معروف کشمیری رہنمائوںشہید محمد مقبول بٹ اور شہید محمد افضل گورو کی برسیوں کے موقع پرکٹھ پتلی انتظامیہ کی طرف سے سخت پابندیوں کے نفاذ اور حریت قائدین کی نظربندی کی شدید مذمت کی ہے ۔ کشمیرمیڈیاسروس کے مطابق حریت کانفرنس کے ترجمان نے سرینگر میں جاری ایک بیان میں کہاکہ انتظامیہ نے پابندیاں عائد کر کے ایک بار پھر ثابت کردیا ہے کہ جموںوکشمیرعملاً ایک پولیس اسٹیٹ ہے اور دنیا کا سب سے بڑی جمہوریت ہونے کا بھارت کا دعویٰ محض ایک فراڈ اور دھوکہ ہے۔انہوںنے کہاکہ حریت کانفرنس نے کشمیری شہداء کو خراج عقیدت پیش کرنے اور نئی دلی کی تہاڑ جیل سے انکی میتوں کی انکے اہلخانہ کو واپسی کے مطالبے کے حق میں مکمل ہڑتال اورسونہ وار میںاقوام متحدہ کے مبصر دفتر کی طرف مار چ کی کال دی تھی تاہم انتظامیہ نے مارچ کو ناکام بنانے کیلئے متعدد آزادی پسند رہنمائوں اور کارکنوں کو گرفتار اور سخت پابندیاں نافذ کر دیں ۔انہوںنے کہا کہ وادی میں کرفیو جیسی پابندیاں عائد کرنے، حریت رہنمائوں کے خلاف کریک ڈاؤن اور یو این او آفس میں یادداشت پیش کرنے کے پروگرام پر قدغن عائد کرنے کی شدید مذمت کرتے ہوئے کہاکہ اس طرح کے بزدلانہ اور غیر جمہوری ہتھکنڈوں سے کشمیری مرعوب نہیں ہوں گے۔انہوںنے حریت کانفرنس کے چیئرمین سید علی گیلانی، میر واعظ عمر فاروق، محمد یاسین ملک، محمد اشرف صحرائی، حاجی غلام نبی سمجھی، غلام احمد گلزار، محمد اشرف لایا، بلال صدیقی، محمد یوسف نقاش، محمد یٰسین عطائی، عمر عادل ڈار، سید امتیاز حیدر، محمد یوسف بٹ، بشیر احمد چوہان اور سجاد احمد پالہ کے علاوہ دیگر آزادی پسند لیڈروں اور کارکنوں کی فوری رہائی پر زور دیا، جنہیں گزشتہ دنوں گرفتار کرکے گھروں، تھانوں یا جیلوںمیں نظربند کردیاگیا ہے۔انہوںنے کہاکہ ان رہنمائوںکی نظربندی کا کوئی قانونی یا آئینی جواز ابھی تک پیش نہیں کیا جاسکا ہے۔ حریت کانفرنس کے ترجمان نے کہا کہ مشترکہ حریت قیادت نے شہید محمد مقبول بٹ، شہید افضل گورو اور جملہ شہداء کو خراج تحسین پیش کرنے اور تہاڑ جیل میں دفن دونوں سرفروشوں کی میتوںکی واپسی کے مطالبے کیلئے ہڑتال اور مار چ کی کال دی تھی اور جب تک کشمیریوں کی امانت انہیں واپس نہیں کی جاتی ہمار ایہ مطالبہ جاری رہے گا۔انہوںنے مشترکہ حریت قیادت کی کال پر بڑی تعداد میں شرکت کے ذریعے پروگراموں کو کامیاب بنانے پر کشمیری عوام کا شکریہ ادا کرتے ہوئے اسے کشمیریوں کے مطالبہٴ آزادی کے حق میں ایک ریفرنڈم قراردیا۔ انہوںنے کہاکہ کشمیری عوام نے بھرپور شرکت کے ذریعے بھارتی حکمرانوں اور عالمی برادری کو پیغام بھیج دیا ہے کہ کشمیری قوم بھارت کے جبری قبضے کے خلاف آج بھی سراپا احتجاج ہے اور جب تک ان کے شہداء اور سرفروشوں کا مشن پائیہ تکمیل تک نہیں پہنچتا، وہ اپنی جدوجہد ہر قیمت پر اور ہر صورت میں جاری رکھیں گے اور ان کی اس جدوجہد کو بھارت اپنی فوجی طاقت کے ذریعے سے دبا نہیں سکتا ہے۔

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے