Voice of Asia News

کشمیر کی تاریخ مسخ نہیں کی جاسکتی، اکنامک الائنس

سرینگر(وائس آف ایشیا)مقبوضہ کشمیرمیں کشمیر اکنامک الائنس نے وزیر خزانہ کی طرف سے کشمیر کو سیاسی مسئلہ کے بجائے سماجی مسئلہ قرار دینے کی سخت الفاظ میں مذمت کرتے ہوئے کہا کہ ڈاکٹر درابو کی ان حرکات سے ریاست کی تاریخ مسخ نہیں ہوسکتی۔الائنس کے شریک چیئرمین فاروق احمد ڈار نے کہا کہ ڈاکٹر درابو کی طرف سے دہلی میں ایک تقریب کے دوران دیا گیا بیان آر ایس ایس اور دہلی سرکار کو خوش کرنے کیلئے دیا گیا ہے۔انہوں نے کہا سوالیہ انداز میں وزیر خزانہ سے پوچھا کہ اگر کشمیر سیاسی مسئلہ نہیں ہے، تو یہاں ایک لوگ شہری کیوں جاں بحق ہوئے،8 ہزار جبری طور پر کیوں لاپتہ ہوئے، لاکھوں لوگوں کوعقوبت خانوں میں کیوں تشدد کا نشانہ بنایا گیا، مزاحمتی لیڈروں کو آئے دن کیوں پابند سلال بنایا جا رہا ہے،کشمیر میں افسپا اور ڈسٹرب ایکٹ جیسے کالے قوانین کیوں رائج ہیں۔ڈار نے کہا کہ اسی پر بس نہیں بلکہ بھارت اقوام متحدہ میں یہ مسئلہ خود کیوں لے کر گیا، اور18قراردادیں کیوں منظور کی گئی، بھارتی وزراء اعظم اٹل بہاری واجپائی نے انسانی دائرے اور نرسہما رائو نے آسمان حد ہے ،کا اعلان کیوں کیا۔انہوں نے کہا کہ وزیر خزانہ تاریخ سے نابلد ہیں، اور انہیں اپنی قابلیت پر کچھ زیادہ ہی یقین ہیں۔کشمیر اکنامک لائنس کے شریک چیئرمین نے ڈاکٹر درابو کو کشمیر کی تاریخ مطالہ کرنے کا مشورہ دیتے ہوئے کہا کہ پہلے ہی جی ایس ٹی کو نافذ کر کے انہوں نے دہلی کو خوش کیا،اور کشمیری تاجروں کے ہاتھوں میں جہاں کشکول تھمایا، وہیں ریاست میں مالیاتی خود مختاری ختم کی،اور وہ اب کون سا نیا گل کھلانا چاہتے ہیں۔

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے