Voice of Asia News

بانڈی پورہ کے جنگلات فوج اور پیرا کمانڈوز جنگل میں چپے چپے پر تعینات

سری نگر(وائس آف ایشیا) شمالی کشمیر کے بانڈی پورہ قصبے کے جنگلات میں مسلسل5 ویں روز بھی بھارتی فوج کا آپریشن جاری رہا بھارتی فوج نے عسکریت پسندوں کی تلاش کے بہانے فضائیہ کی خدمات بھی حاصل کر لی ہیں ۔ ادھر جنوبی کشمیر کے شوپیاں قصبے میں بھارتی فورسز اور احتجاجی نوجوانوں کے درمیان جھڑوں میں کئی افراد زخمی ہو گئے ۔ تفصیلات کے مطابق بانڈی پورہ قصبے کے جنگلاتکے چپے چپے پر بھارتی فوجی اہلکاروں کو تعینات کیا گیا ۔ حکام کے مطابق15عسکریت پسند چھپے بیٹھے ہیں جنہیں مار گرانے کیلئے فضائیہ کی خدمات بھی حاصل کی گئی ہے۔ جنگل میں لگاتار گولیوں کا تبادلہ جاری ہے۔ بانڈی پورہ کے جنگلات میں فوج نے وسیع آپریشن شروع کیا ہے۔ فوج اور پیرا کمانڈوز کو جنگل میں چپے چپے پر تعینات کیا گیا ہے تاکہ عسکریت پسندوں کو مارا جاسکے۔ جنگل کو پوری طرح سے سیل کرکے بڑے پیمانے پر آپریشن شروع کیا گیا ہے۔ ادھرسوپور میں پولیس اسٹیشن میں قید نوجوان چکمہ دے کر فرار ہونے میں کامیاب ہوا۔ مفرور قیدی کو ڈھونڈ نکالنے کیلئے بڑے پیمانے پر کارروائی شروع کی گئی ہے۔ 24سالہ عبدالمجید میر ساکنہ تجر شریف سوپور پولیس اسٹیشن سے پر اسرار طورپر بھاگ گیا ۔ مذکورہ نوجوان کے خلاف کیس درج ہے۔ مفرور قیدی کو تلاش کرنے کیلئے کارروائی شروع کی گئی ہے۔ معلوم ہوا ہے کہ اس سلسلے میں تحقیقات بھی شروع کی گئی ہے کہ قیدی کس طرح سے جیل سے فرار ہوا۔ضلع شوپیان کے علاقے ڈی کے پورہ میں دیواروں پردرج بھارت مخالف اور آزادی کے حق میں نعرے اور تصاویر مٹانے کی کوشش کرنے پربھارتی فوجیوں پرزبردست پتھراؤ کے بعد علاقے میں بھارتی فورسز اور احتجاجی نوجوانوں کے درمیان جھڑپیں ہوئیں جو کئی گھنٹوں تک جاری رہیں۔بھارتی فورسز نے احتجاجی مظاہرین پر فائرنگ کی او ر آنسو گیس کا بے دریغ استعمال کیا۔فوج نے ڈرون طیارے کا استعمال کیا ۔معلوم ہوا ہے کہ گاؤں میں جونہی یہ خبر پھیلی کہ فوج گاؤں میں ڈرون طیاروں کا استعمال کررہی ہے ،تو نوجوانوں کی ٹولیاں نمودار ہوئیں اور مشتعل ہو کر فوج پر پتھراؤ کیا ۔فوج نے جوابی کارروائی میں مشتعل نوجوانوں کو تتربتر کرنے کیلئے ہوا میں گولیوں کے کئی راؤنڈ چلائے ،تاہم اس واقعے میں کوئی ہلاک یا زخمی نہیں ہوا ۔فوجی اہلکار علاقے میں بھارت مخالف وال چاکنگ کو مٹا رہے تھے ،جس دوران ان پر شدیدپتھراؤ کیا گیا ۔۔

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے