Voice of Asia News

پرویز مشرف نے سپریم کورٹ میں پیش ہونے کے لیے مہلت مانگ لی

لاہور(وائس آف ایشیا ) سابق صدر پرویزمشرف نے وطن واپس آکر عدالت پیش ہونے سے معذرت کرتے ہوئے مزید مہلت مانگ لی۔سپریم کورٹ لاہور رجسٹری میں چیف جسٹس کی سربراہی میں 4 رکنی بینچ نے پرویز مشرف کی طلبی سے متعلق کیس کی سماعت کی۔ پرویز مشرف کی جگہ ان کے وکیل قمر افضل پیش ہوئے۔چیف جسٹس نے ڈپٹی اٹارنی جنرل سے استفسار کیا کہ پتہ کریں پرویز مشرف آرہے ہیں یا نہیں کیونکہ عدالتی عملے کو بھی عید الفطر کی چھٹیوں پر جانا ہے۔ پرویز مشرف کے وکیل نے عدالت کے روبرو موقف اختیار کیا کہ ان کی پرویز مشرف سے بات ہوئی ہے اور انہوں نے پیش ہونے کے لیے مہلت مانگی ہے، وہ پاکستان آنے کا ارادہ رکھتے ہیں لیکن عید کی تعطیلات اور موجودہ حالات کے پیش نظر سفر نہیں کر سکتے، پرویز مشرف نے استدعا کی ہے کہ عدالت انہیں پاکستان آنے کی مہلت دے۔چیف جسٹس نے پرویز مشرف کے کاغذات نامزدگی منظور کرنے کی اجازت واپس لیتے ہوئے ریمارکس دیئے کہ ٹھیک ہے کیس کی سماعت غیر معینہ مدت تک ملتوی کرتے ہیں جب آپ کہیں گے تب کیس لگا دیں گے۔واضح رہے کہ سپریم کورٹ نے  سابق صدر پرویز مشرف کو آج دوپہر 2 بجے تک عدالت میں پیش ہونے کی مہلت دی تھی۔

سابق صدر پرویز مشرف کی وطن واپسی ایک بار پھر موخر ہوگئی، پاسپورٹ بحال نہ ہونے کے باعث سپریم کورٹ سے اگلی تاریخ لینے کا فیصلہ کر لیا۔سیکرٹری جنرل اے پی ایم ایل اور وکیل معظم بٹ عدالت میں پیش ہوں گے، ڈاکٹر امجد کا کہنا ہے پرویز مشرف سپریم کورٹ کے حکم کی روشنی میں آنے کو تیار ہیں، عدالتی حکم کے باوجود تاحال پاسپورٹ بحال نہیں کیا گیا، پرویز مشرف پاسپورٹ بحالی پر پاکستان آجائیں گے     یاد رہے گزشتہ روز کیس کی سماعت کے دوران چیف جسٹس پاکستانے ریمارکس دیئے کہ پرویز مشرف کو کس بات کا تحفظ چاہیے، اتنا بڑا کمانڈو خوف کیسے کھا گیا، اتنا بڑا ملک ٹیک اوور کرتے وقت خوف نہیں آیا۔ عدالت نے باور کرایا کہ پرویز مشرف واپس نہ آئے تو کاغذات نامزدگی کی جانچ پڑتال نہیں ہونے دیں گے۔چیف جسٹس ثاقب نثار نے واضح کیا کہ سپریم کورٹ نے پرویز مشرف کو بیرون ملک جانے کی اجازت نہیں دی، حکومت نے ہی مشرف کا نام ای سی ایل سے نکالا۔ عدالت نے پرویز مشرف کو وطن واپسی کیلئے آج دوپہر 2 بجے تک کی مہلت دیتے ہوئے واضح کیا کہ اگر سابق صدر نہ آئے تو قانون کے مطابق فیصلہ کر دیں گے۔

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے