Voice of Asia News

نیند کی کمی انسان کی ذہنی صلاحیتوں پر بری طرح اثر انداز ہوتی ہے

لاہور(وائس آف ایشیا) ویسے تو نیپولین بونا پارٹ ، مارگریٹ تھیچر اور براک اوباما سے لے کر ٹویٹر کے بانی جیک ڈررزے اور یاہو کی چیف ایگزیکٹو آفیسر ماریسا میئر تک تمام ہی کامیاب لوگوں کا دعویٰ ہے کہ وہ رات کے قیمتی لمحات میں سے صرف 4سے 5 گھنٹے نیند کرتے ہیں جسے سن کر آپ کچھ پریشان ہوں گے کیونکہ عام طور پر انسان کو 8گھنٹے نیند لینے کا کہا جاتا ہے اور اس بات کو ثابت کیا تحقیق نے جس کے مطابق نیند کی کمی انسان کے آئی کیو لیول اور دیگر ذہنی صلاحیتوں کو تباہ کردیتی ہے۔امریکی یونیورسٹی کی ایک ماہر پروفیسر جیسیکا پین کے مطابق مکمل نیند اور قائدین میں گہرا تعلق ہے اس لیے ان میں سے اکثریت کو۷سے9گھنٹے نیند کی ضرورت ہوتی ہے تاہم ان میں سے بھی اکثریت یہ نیند پوری نہیں کر پاتی جب کہ یہ اتنی ہی ضروری ہے جتنا جسم کے لیے کھانا اور ورزش کرنا ہے۔ جیسیکا پین کا کہنا ہے کہ جو لوگ نیند کا مطلوبہ دورانیہ پورا نہیں کر پاتے یا پھر اسے ویک اینڈ پر پوری کرنے کی کوشش کرتے ہیں ان کی یہ عادت انہیں بڑی مصیبت میں ڈال سکتی ہے لیکن اس کی خرابی کئی سال بعد سامنے آتی ہے جب انسان کو یادداشت کی کمی جیسے مسائل کا سامنا کرنا پڑتا ہے جس سے آغاز میں فیصلہ سازی، تخلیقی صلاحیتوں میں کمی اور جذباتی عمل میں ناہمواری جیسی خرابیاں جنم لیتی ہیں جو بعد میں کئی مزید بیماریوں کا باعث بن جاتی ہیں۔جیسیکا پین نے مزید وضاحت کرتے ہوئے کہا کہ سماجی اور جذباتی استحکام کا بھی نیند سے گہرا تعلق ہے اسی لیے نیند کی کمی لیڈرشپ میں بڑے مسائل پیدا کردیتی ہے کیونکہ نیند کی کمی کے باعث آپ میں چڑچڑاپن پیدا ہوجاتا ہے جو لوگوں سے سماجی رابطوں کو متاثر کرتا ہے۔ پین کے مطابق دوپہر میں کچھ دیر سونا بھی انسانی صحت کے لیے ضروری ہے بلکہ جو شخص بھی اپنی کارکردگی کو بڑھانا چاہتا ہے وہ ضروری دوپہر کو کچھ دیر نیند کرے کیونکہ دن کے اوقات میں 90 منٹ کی نیند انسان کے اندر تخلیقی صلاحیتو ں کو نکھار دیتی ہے اور زیادہ تر عالمی رہنما اس فارمولے پر عمل کرتے ہیں۔عالمی شہرت یافتہ نیورو سائنس دان تارا اسوارٹ کا کہنا ہے کہ قیادت کرنے والوں کا رات کی نیند پورا نہ کرنا ان کی کارکردگی پر تباہ کن اثرات مرتب کرتا ہے اس لیے ایک یا 2 فیصد لوگ تو4 سے 5 گھنٹے نیند کرکے بھی بہتر کام کرسکتے ہیں تاہم اکثریت کے لیے۷ سے ۸ گھنٹے کی نیند درکارہوتی ہے۔
اسوارٹ کا کہنا ہے کہ انہوں نے جب نیند کی کمی پر تحقیق شروع کی تو حیرت انگیز نتائج سامنے آئے کیونکہ بہت سے ایسے مریض جن کی عمریں۴۰ سال سے کچھ اوپر تھیں ان کو نیند کی کمی کے باعث دل کا دورہ پڑا اور نروس بریک ڈاؤن کا سامنا کرنا پڑا جب کہ کچھ ایسے بھی مریض تھے جو ذہنی دباؤ کے باعث کولیسٹرول کی زیادتی کا شکار ہوئے۔ ان کا مزید کہنا تھا کہ نیند کی کمی کا شکار لوگوں کا آئی کیو 5سے8 پوائنٹ تک گر جاتا ہے بلکہ اگر ایک رات کی نیند نہ کی جائے تو انسان کا آئی کیو ایک پوائنٹ گرجاتا ہے اور اگر نیند میں مسلسل خلل رہے تو انسان نہ سیکھنے کی بیماری کا شکار ہو سکتا ہے۔

image_pdfimage_print
شیئرکریں
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے