Voice of Asia News

جموں وکشمیر اور بھارت کی جیلوں میں قید ہزاروں کشمیریوں کو عید سے قبل رہا کیا جائے

سری نگر(وائس آف ایشیا) کل جماعتی حریت کانفرنس ع کے چیرمین میر واعظ عمرفاروق نے جموں وکشمیر اور بھارت کی مختلف ریاستوں کے جیلوں میں قید ہزاروں کشمیریوں کو عید سے قبل رہا کئے جانے کا مطالبہ کرتے ہوئے کہا ہے کہ ان قیدیون کو جیلوں میں بدترین سیاسی انتظام گیری کا نشانہ بنایا جارہا ہے اور جیلوں میں ان لوگوں کو جن میں کمسن بچوں سے لیکر80سال تک کے بزرگ اور خواتین شامل ہیں ہر طرح کی سہولیات اور مراعات سے محروم رکھا جارہا ہے ۔بیان میں کہا گیا کہ جموں وکشمیر جہاں عملا فوج کی حکمرانی ہے اور ہر جائز آواز کو طاقت اور تشدد کے بل پر کچلنے کا قانون عملا نافذ ہیں میں جمہوری اور انسانی قدروں کو بڑی بے دردی کے ساتھ پامال کیا جارہا ہے ۔بیان میں کہا گیا کہ کشمیر اور بھارت کی دیگر ریاستوں کی جیلوں جن میں سرینگر سینٹرل جیل ،تہاڑ جیل دہلی، امپھالا جیل کورٹ بلوال، ادھمپور ، کٹھوعہ، ہیرا نگر شامل ہیں میں کشمیری قیدیوں کو کسمپرسی کی حالت میں زندگی گزارنے پر مجبور کیا جارہا ہے اور کئی جیلوں میں تو ان لوگوں کو پیشہ ور مجرموں کے ساتھ رکھا گیا ہے جس کی وجہ سے ان لوگوں کی زندگیوں کو شدید خطرات لاحق ہیں۔بیان میں کہا گیا کہ کشمیریوں کی جائز جدوجہد کو کچلنے کیلئے پولیس اور فورسز کے علاوہ NIA اور ED جیسی ایجنسیوں کو استعمال میں لاکر کئی سرکردہ مزاحمتی قائدین کو نام نہاد کیسوں میں پھنسا کر دہلی کی تہاڑ جیل میں مقید کردیا گیا ہے اور ان کی مدت قید کو مختلف حربے بروئے کار لاکر بلا وجہ طول دیا جارہا ہے۔بیان میں حقوق بشر کے عالمی اداروں پر زور دیا گیا کہ وہ ان کشمیری سیاسی قیدیوں کی حالت زار کا مشاہدہ کرنے کیلئے اپنی ٹیم روانہ کریں اور بھارت پر دباؤ ڈالے کہ وہ ان قیدیوں کے تئیں روا رکھے جارہے غیر انسانی سلوک کو فوری طور بند کرے۔

image_pdfimage_print

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے