Voice of Asia News

مقبوضہ کشمیرمیں پر امن مظاہرین پر بھارتی فورسز کی طرف سے طاقت کے وحشیانہ استعمال کی مذمت

سرینگر(وائس آف ایشیا) مقبوضہ کشمیرمیں کل جماعتیحریت کانفرنس کے سینئر رہنماء اور تحریک حریت جموںوکشمیر کے چیئرمین محمد اشرف صحرائی نے مقبوضہ علاقے میں بھارتی قابض فورسز کی طرف سے پُرامن مظاہرین پر طاقت کے وحشیانہ استعمال کی شدید مذمت کرتے ہوئے کہاہے کہ بھارت نے کشمیریوں کی پر امن جدوجہد آزادی کے خلاف با ضابطہ جنگ شروع کر رکھی ہے ۔کشمیرمیڈیاسروس کے مطابق محمد اشرف صحرائی نے سرینگر میں جاری ایک بیان میں کولگام کے علاقے ریڈ ونی میں ایک معصوم بچی سمیت تین نہتے کشمیریوں شاکر احمد کھانڈے ،ارشاد مجید ،اور عندلیبہ کو بلا جواز طورپر شہید کئے جانے کو کشمیر کی خونین تاریخ کا ایک اور سانحہ قرار دیا ۔انہوںنے شہداء کو خراج عقیدت پیش کرتے ہوئے سوگوار خاندانون سے دلی ہمدردی اور یکجہتی کا اظہار کیا۔انہوں نے کہا کہ سانحہ کولگام ہو یا ظلم وجبر کے دیگر واقعات، سبھی بھارتی جبرواستبداد کے عکاس ہیںاوراب وقت آگیا ہے کہ جب ہمیں بحیثیت قوم اس جبر کے خلاف صف آراء ہونا پڑے گا۔محمد اشرف صحرائی نے کہا کہ بھارت کی فسطائی حکومت اور اس کی مقامی کٹھ پتلیوںکی طرف سے کشمیریوں کی نسل کُشی اس بات کا بین ثبوت ہے کہ ان کیلئے جموںو کشمیر محض ایک مقبوضہ کالونی اور کشمیری ان کے مفتوحہ غلام ہیں جن کے قتل عام کیلئے انہوںنے اپنی فورسز کو کھلی چھوٹ دے رکھی ہے ۔انہوں نے کہا کہ کشمیری کسی بھی حال میں بھارتی ظلم و بربریت کے سامنے سرنگوں نہیں کریں گے اوران مظالم کے خلاف صف آرا ہونے کا وقت آگیا ہے ۔ سینئر حریت رہنماء نے شہید بُرہان مظفروانی اور تمام کشمیری شہداء کوزبردست خراج عقیدت پیش کرتے ہوئے کہا کہ برہان کی شہادت اور 2016ء کی عوامی تحریک نے کشمیریوں کی جدوجہد کو ایک نئی جلا اور نیا ولولہ عطا کیا ہے جس میں شہید برہان وانی اور ان کے ساتھیوں سمیت 126 عام شہریوں کے مقدس لہو کا رنگ صاف جھلک رہا ہے۔اشرف صحرائی نے دختران ملت کی سربراہ آسیہ اندرابی اورانکی ساتھیوں فہمیدہ صوفی اور ناہیدہ نسرین کوبھارتی تحقیقاتی ادارے این آئی اے کی طرف سے نئی دلی کی تہاڑ جیل منتقل کرنے کی شدید مذمت کرتے ہوئے کہاکہ خواتین کو سیاسی انتقام کانشانہ بنانا بزدلی کی انتہاء ہے ۔ انہوںنے کہا کہ کشمیری قوم بالخصوص خواتین کو حق خودارادیت کے مطالبے پر بدترین اذیتوں کے علاوہ قیدوبند کی صعوبتوں میں مبتلا کیا جارہا ہے جو کہ سراسر اقوامِ متحدہ کے انسانی حقوق کے چارٹر کی خلاف ورزی ہے۔ انہوں نے انسانی حقوق کی مقامی اور بین الاقوامی تنظیموں سے اپیل کی کہ وہ مقبوضہ علاقے میں بھارتی فوج،، ایجنسیوں اور پولیس کی جانب خواتین ڈھائے جانیوالے مظالم کا سخت نوٹس لیں ۔

image_pdfimage_print

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے