Voice of Asia News

گوگل پر اینڈرائیڈ کی خلاف ورزیوں پر یورپی یونین کاپانچ ارب ڈالرز جرمانہ عائد

برسلز( وائس آف ایشیا )یورپی یونین نے امریکی کمپنی گوگل پر اس کے اینڈرائیڈ موبائل آپریٹنگ سسٹم کی خلاف ورزیوں پر ریکارڈ چار ارب تیس کروڑ یورو ( پانچ ارب ڈالرز) جرمانہ عاید کردیا ہے۔غیرملکی خبررساں ادارے کے مطابق یورپی کمیشن کی مسابقتی کمشنر مارگریتھ ویسٹاگر نے بدھ کو اس فیصلے کا اعلان کیا اور کہا کہ گوگل نے تین بنیادی شعبوں میں اینڈرائیڈ مارکیٹ کی خلاف ورزی کا ارتکاب کیا ہے۔گوگل اپنے سرچ انجن اور کروم ایپلی کیشنز کو ایک آپریٹنگ سسٹم میں مجتمع کررہی ہے اور اس نے مبینہ طور پر موبائل فون بنانے والی کمپنیوں کو ایسی ڈیوائسز کی تیاری سے روک دیا ہے جن کے ذریعے اینڈرائیڈ کے مختلف ورڑنز کو چلایا جاسکتا ہے۔ اس نے فون تیار کرنے والی بعض بڑی کمپنیوں اور موبائل نیٹ ورک آپریٹر کو اس مقصد کے لیے بھاری رقوم دی ہیں کہ وہ صرف گوگل کی سرچ ایپ کو دستی فون سیٹ میں استعمال کریں۔

یورپی کمیشن نے گوگل سے مطالبہ کیا کہ وہ اس فیصلے کے 90 روز کے اندر اپنے اس تمام غیر قانونی کام کو موثر انداز میں ختم کردے۔اس کا یہ مطلب ہے کہ اب گوگل کو فون ساز کمپنیوں کو دستی سیٹوں میں گوگل پلے اسٹور کی پیش کش کے لیے کروم اور گوگل سرچ کے پری انسٹال پر مجبور کرنے یا دباؤ ڈالنے کا سلسلہ بند کرنا ہوگا۔۔گوگل کو فون ساز کمپنیوں کو اینڈرائیڈ کے مختلف ورڑنز کو استعمال کرنے سے روکنے کی روش بھی ختم کرنا ہوگی ۔یورپی کمیشن نے اپنے فیصلے میں کہا ہے کہ گوگل نے ایسا کوئی قابل اعتبار ٹھوس ثبوت پیش نہیں کیا ہے جس سے یہ پتا چلتا ہو کہ اینڈرائیڈ فنی نقائص سے متاثر ہوگا یا ایپلی کیشنز کی سپورٹ میں ناکام رہے گا۔۔گوگل نے یورپی کمیشن کے اس فیصلے کے خلاف اپیل دائر کرنے کا ا علان کیا ہے۔اس بڑے سرچ انجن کے ترجمان نے ایک بیان میں کہا ہے کہ ’’ اینڈرائیڈ اب ہر کسی کے لیے زیادہ انتخاب پیش کرتا ہے۔ایک متحرک ایکو سسٹم ، تیز رفتار جدت اور کم قیمتیں تیزی سے بڑھتی ہوئی مسابقت کی کلاسیکی نشانیاں ہیں‘‘۔واضح رہے کہ مارکیٹ ریسرچ فرم اسٹریٹجی اینالٹکس کے مطابق اینڈرائیڈ سے دنیا کے 80 فی صد اسمارٹ فونز چلتے ہیں۔یورپی کمیشن گذشتہ سال سے اینڈرائیڈ کے خلاف جامع تحقیقات کررہا تھا۔اس کے حریفوں نے گوگل کے خلاف سوفٹ وئیر کی مارکیٹ میں برتری کے لیے غلط طور طریقے استعمال کر نے کی شکایت کی تھی۔گوگل کے خلاف سب سے پہلے فئیر سرچ نے 2013ء میں شکایت کی تھی ۔اس کے علاوہ نوکیا ، مائیکرو سوفٹ اور اوریکل نے بھی شکایت کی تھی۔مائیکرو سوفٹ کے سابق چیف ایگزیکٹو آفیسر اسٹیو بالمر نے تب کہا تھا کہ گوگل نے اپنی اجارہ داری قائم کررکھی ہے اور حکام کو اس کو کنٹرول کرنا چاہیے۔۔یورپی یونیننے گذشتہ سال گوگل پر سرچ کے نتائج میں الٹ پھیر پر دو ارب ستر کروڑ ڈالرز جرمانہ عاید کیا تھا۔یہ اس کی آن لائن خریداری خدمات کے سرچ نتائج میں رد وبدل پر کیا گیا تھا۔۔گوگل نے اس کے خلاف بھی اپیل دائر کی تھی مگر اس کا ابھی فیصلہ نہیں ہوا اور اب اس پراس سے دٴْگنا پانچ ارب ڈالرز کا بھاری جرمانہ عاید کردیا گیا ہے۔ اس اقدام سے یورپی یونین اور امریکا کے درمیان جاری تجارتی جنگ میں مزید شدت آسکتی ہے۔یورپی کمیشن فیس بٴْک ، انٹیل ، مائکراو سوفٹ پر بھی مسابقتی ذمے داریاں پوری نہ کرنے جرمانے عاید کرچکا ہے۔کمیشن کی مسابقتی کمشنر مارگریتھ ویسٹاگر نے ان امریکی کمپنیوں پر یورپی یونین کے رکن بعض ممالک کے ٹیکس قوانین کی خلاف ورزیوں پر بھی جرمانے عاید کیے ہیں ۔ان کا بالاصرار کا کہنا تھاکہ وہ صارفین کے حقوق کے تحفظ کے لیے قوانین کا نفاذ کررہی ہیں۔

image_pdfimage_print

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے