Voice of Asia News

نیند کی کمی ایک بڑا مسئلہ ہے

لاہور(وائس آف ایشیا)ہم میں سے کچھ لوگ ہر صبح بڑے جوش سے بستر سے باہر نکل کر اپنے دن کا آغاز کرنا چاہتے ہیں ، وہیں کچھ لوگ ایسے بھی ہیں جو اٹھنے کے لئے الارم گھڑی کا سہارا لیتے ہیں جس میں ایک سنوذ بٹن ہو تاکہ انہیں اٹھنے اور کام پر جانے میں تاخیر نہ ہو ہم میں سے کچھ لوگ ایسے بھی ہوں گے جو بات کرتے کرتے دیر تک بیداررہ سکتے ہیں جبکہ کچھ لوگ ایسے بھی ہوں گے جو روشنی بند کر کچھ سنتے ہوئے سونا چاہتے ہیں ۔
کیلی فورنیا یونیورسٹی کے ڈاکٹر لوئیس پٹاچے کا کہنا ہے کہ اصل میں ہماری یہ عادت ہمارے جین سے مقرر ہوتی ہے وہ کہتے ہیں ، ” ہمیں یہ بات پسند ہو یا نہ ہو لیکن ہمارے ماں – باپ ہمیں وقت سے بستر پر جانے کی تاکیدکرتے رہتے ہیں۔سائنسداں ایک شخص کے جین اور دن کے کسی خاص وقت میں اس کی سرگرمی کو سمجھنے کی اہمیت کو محسوس کر رہے ہیں مشی گن میں ایک پروفیسر ربگ کہتے ہیں ، ” یورپ میں میں جن سے بات چیت کرتا ہوں انہوں نے دیکھا ہو گا کہ انہیں صبح – صبح میری ای میل ملتا ہے . وہ کہتے ہیں ، ” صبح اٹھنے کی عادت ہی میں پرندوں کو دیکھ پاتا ہوں جو میرا شغل ہے . دوسرے لوگوں کے مقابلے صبح اٹھنا اور چڑیوں کو دیکھنا اب میرے لئے آسان ہے . یہ عادت ان کے خاندان میں بھی ہے . وہ کہتے ہیں ، ” میری ماں ہمیشہ صبح 4 بجے ہم سب کو جگا دیتی تھیں اور میری بیٹی صبح اٹھ کر کام کرتی ہے . “
ڈاکٹر لوس پٹاچے صبح اٹھنے والے رک اور ان جیسے خاندانوں کا مطالعہ کر رہے ہیں جو ایڈوانس پھیذ سنڈروم کا شکار وہ اس تحقیقی علاقے میں اس وقت اترے جب ان کے ساتھی ڈاکٹر کرس جونز ۶۹سال کے ایک شخص سے ملے جو جلدی کلک کریں نیند کھل جانے کی وجہ سے پریشان تھے پٹاچے اور جونس نے ان کا خیال رکھا . لوس پٹاچے کا کہنا ہے ، ” ہم نے یہ پایا کہ یہ ایک جینیاتی علامات ہے اور پتہ چلا کہ گسوتر ۲کے پاس تبدیل جین موجود ہے . ویسے انہیں یہ پہلے سے اندازہ تھا کہ پھل پر لگنے والی اور چوہے میں اسی طرح جین کے اتپرورتت ہونے سے ان میں حیاتیاتی عمل کی رفتار تیز ہو جاتی ہے انہوں نے دن میں دیر تک سونے اور رات میں جاگنے والے خاندانوں کا مطالعہ بھی کیا جنہیں ڈلیڈ پھیذ سنڈروم تھا . ان کا خیال تھا کہ ایسا ایک ہی جین میں مختلف اتپرورتن کی وجہ سے تھا ۔
ہم سب میں اندرونی حیاتیاتی عمل والی گھڑیاں ہوتی ہیں . یہ ماسٹر گھڑی ہزاروں عصبی خلیات سے بنی ہوتی ہے اور یہ دماغ کے اپوتھیلیمس حصے میں موجود ہوتا ہے اپوتھیلیمس تمام طرح کے جسمانی افعال مثلا ہارمون نکالنے کے ساتھ ہی جسم کے درجہ حرارت اور پانی کی مقدار کو باقاعدہ کرتا ہے یہ اندرونی گھڑی ہر روز روشنی کی بنیاد پر دوبارہ مقرر ہوتی ہے . یہ لگ سکتا ہے ایک دن میں اگر ۲۴گھنٹے ہی ہوتے ہیں تو تمام کے جسم کی گھڑیاں ایک جیسی ہی چلنی چاہئے یونیورسٹی آف سری کے ریسرچ سینٹر کے سربراہ پروفیسر جان دجہ کا کہنا ہے ، ” اگر آپ کی گھڑی تیز ہے تو آپ کو سب کچھ جلدی کریں گے اور اگر آپ کی گھڑی سست ہے تو آپ دیر سے کوئی کام کریں گے . ہماری گھڑیاں زندگی بھر کا تعین نہیں رہتی ہیں . جن کے بھی چھوٹے بچے ہوتے ہیں ان کو یہ اندازہ ہے کہ بچے صبح جلدی اٹھتے ہیں جیسے کہ کسی بزرگ شخص میں بھی یہی عادت رہتی ہے اگرچہ ہمارے جسم کی اندرونی گھڑی کی چاہے جو بھی ہو لیکن ہمیں اپنے سماج کی بنائی ہوئی ۹ سے ۵ بجے کی معمول سے تال میل بٹھانا پڑتا ہے لڈوگ میںیونیورسٹی کے پروفیسر تل رونینبرگ نے اس عمر کے نیند کے رجحانات پر نظر ڈالی ہے ان کا کہنا ہے ، ” کشور کا ہر کام دیر سے کرنا بے حد مشہور ہے . بچپن سے کشور ہونے کے مرحلے میں جاتے – جاتے ۱۹؍ سال کی خواتین اور ۲۱سال کے مرد میں یہ تاخیر کی انتہا جاتی ہے . یہ تحقیق حیرت انگیز ہونے کے ساتھ ہی واضح بھی تھا . ” ہمارے ڈیٹا بیس میں دو لاکھ سے جائدادا شریک ہیں . ہم دنیا کے ایک نیند والے نقشے کو تیار کرنے کی امید کر رہے ہیں ۔

امریکہ میں براؤن یونیورسٹی میں سائیکاٹری کی ایک پروفیسر مریم اسکول دیر سے کھولے جانے کے لئے مہم چلا رہی ہیں وہ کہتی ہیں ، ” اسکول گریڈ ہمیشہ اچھا نہیں ہوتا لیکن مجھے لگتا ہے کہ کسی کی نیند کا کم ہونا ایک بڑا مسئلہ ہے اور اس کا تعلق ڈپریشن ، اداسی اور بچوں میں حوصلہ افزائی کی کمی سے منسلک ہے . جب اسکول دیر سے کھلتے ہیں جو بچوں کے مزاج کو بہتر ہوتا ہے . اگرچہ بہت سے لوگ صبح ۹بجے سے ۵ بجے تک کام کرنے کو ترجیح دیتے ہیں اگرچہ وہ تھک جاتے ہ
وں ۔

پروفیسر رونینبرگ کام والے میں نیند کی کمی کی پیمائش کے لئے ایک دلچسپ طریقے کا ذکر کرتے ہیں جس دوران ہم بستر پر سے اٹھنے کے لئے الارم گھڑی پر انحصار ہوتے ہیں ان کا کہنا ہے کہ عام طور پر لوگ کے دوران جلدی سوتے ہیں جبکہ چھٹی کے دنوں میں دیر سے سوتے ہیں ان کا کہنا ہے ، ” ہمیں اپنے کام کرنے کے وقت میں تبدیلی کرنا چاہئے . لیکن اگر ایسا نہیں ہو پاتا ہے تو ہمیں روشنی کے لئے حکمت عملی طے کرنی چاہئے . ” ہمیں کام پر جاتے وقت کسی احاطہ کئے گئے گاڑی کے بجائے موٹر سائیکل پر جانے کی کوشش کرنی چاہئے . سورج کے ڈوبنے پر ہمیں ویسی چیزوں کا استعمال کرنا چاہئے جس میں نیلی روشنی نہ ہو مثلا کمپیوٹر سکرین اور دیگر الیکٹرانک آلات

image_pdfimage_print

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے