Voice of Asia News

پاکستان افغانستان میں کسی دہشت گرد گروپ کو سپورٹ نہیں کررہا، آرمی چیف

راولپنڈی(وائس آف ایشیا) آرمی چیف جنرل قمر جاوید باجوہ نے کہا ہے کہ افغانستان کا غزنی سے ہلاک یا زخمی دہشت گردوں کی پاکستان واپسی کا الزام غلط اور بے بنیاد ہے پاکستان افغانستان میں کسی دہشت گرد گروپ کو سپورٹ نہیں کررہا،کالعدم تحریک طالبان پاکستان کے کئی دھڑے افغانستان میں روپوش ہیں، افغانستان میں موجود دہشت گردوں کو پاکستان سے کسی قسم کی مدد نہیں مل رہی،پاکستان افغانستان میں دیرپا امن کیلئے پاکستان تمام اقدامات کی حمایت جاری رکھے گا۔پاک فوج کے شعبہ تعلقات عامہ (آئی ایس پی آر)کے مطابق آرمی چیف نے افغانستان میں دہشت گردی کی حالیہ لہر پر تشویش اور قیمتی جانوں کے ضیاع پر افسوس کا اظہار کیا ہے۔سربراہ پاک فوج کا کہنا تھا کہ پاکستانی بڑی تعداد میں افغانستان میں مختلف کاروباری سرگرمیاں یا مزدوری کرتے ہیں، افغانستان میں قیام پذیر پاکستانی بھی افغانیوں کے ساتھ دہشت گرد حملوں کا شکار ہوجاتے ہیں، افغانستان میں دہشت گردی کا شکار ہونے والے پاکستانیوں کو دہشت گرد کہنا بدقسمتی ہے جب کہ کالعدم تحریک طالبان پاکستان کے کئی دھڑے افغانستان میں روپوش ہیں۔آرمی چیف نے کہا کہ تحریک طالبان پاکستان (ٹی ٹی پی)افغانستان میں افغان شناخت کے ساتھ چھپی ہوئی ہے جس کے زخمی، لاشیں بھی طبی مدد کے لیے پاکستان منتقل کی جاتی ہیں، اسی طرح افغان مہاجرین اور ان کے رشتہ دار بھی یہی عمل کرتے رہتے ہیں، افغان صدر کے ساتھ جن اقدامات کا وعدہ کیا گیا ہے اس پر قائم ہیں، افغانستان کو اپنے اندر دیکھنے کی ضرورت ہے کیوں کہ مسئلہ وہاں ہے، افغانستان میں دیرپا امن کیلئے پاکستان تمام اقدامات کی حمایت جاری رکھے گا۔جنرل قمر جاوید باجوہ کا کہنا تھا کہ غزنی سے ہلاک یا زخمی دہشت گردوں کی پاکستان واپسی کا الزام غلط اور بے بنیاد ہے کیوں کہ پاکستان افغانستان میں کسی دہشت گرد گروپ کو سپورٹ نہیں کررہا اور افغانستان میں موجود دہشت گردوں کو پاکستان سے کسی قسم کی مدد نہیں مل رہی۔

image_pdfimage_print

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے