Voice of Asia News

لباس ثقافت و روایات کا حصہ ہوتے ہیں

لاہور(وائس آف ایشیا)لباس ثقافت و روایات کا حصہ ہوتے ہیں۔ جدید دور کے ساتھ لباس میں کئی تبدیلیاں آتی ہیں لیکن روایتی لباس کی جگہ کوئی نہیں لے سکتا۔پاکستان میں بھی خاص طور پر سندھی، بلوچی لباس بہت خوبصورت ہوتے ہیں اور انہیں روایتی تہواروں کے موقع پر بہت شوق سے پہنا جاتا ہے۔آئیے دنیا بھر کے روایتی لباسوں پر ایک نظر ڈالتے ہیں

:اسپین

D11

اسپین کا روایتی لباس ’فلیمنکو‘ ہے۔ گھیر دار فراک جیسا یہ لباس سرخ، سیاہ، اور سفید رنگ میں ہوتا ہے۔

:ناروے

D10

ناروے کا روایتی لباس ’بوناد‘ ہے۔ شروع میں صرف دیہاتوں میں اسے استعمال کیا جاتا تھا لیکن جدید فیشن کے بعد اب یہ شہروں میں بھی استعمال ہوتا ہے البتہ یہ مہنگا ہوتا ہے۔

:ترکی

D9

ترکی کی ثقافت یورپی، عربی اور یونانی ثقافت کا مجموعہ ہے۔ اس کا روایتی لباس ’سلوار اور انتاری‘ کہلاتا ہے۔

:انڈونیشیا

d8

انڈونیشیا کا روایتی لباس ’قبال‘ کہلاتا ہے۔

:چین

d2

چین کی قدیم تاریخ کے پیش نظر اس کے ہر دور میں لباس بدلتے رہتے ہیں۔ اس کا ایک لباس ’ہنفو‘ ہے جبکہ دوسرا ’کیپاؤ‘ کہلاتا ہے۔

:افغانستان

D12.

گہرے رنگوں سے مزین افغانستان کا روایتی لباس ’فراک پرتوگ‘ کہلاتا ہے۔روس کا روایتی لباس ایرانی ملاوٹ کے ساتھ ’سارافان‘ کہلاتا ہے۔

:روس

d3

image_pdfimage_print

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے