Voice of Asia News

ملکی برآمدات کو مستحکم کرنے کیلئے سٹرٹیجک ٹریڈ پالیسی

اسلام آباد ( و ائس آف ایشیا) وفاقی حکومت نے ملکی برآمدات کو دوگنا کرنے کے لئے سٹرٹیجک ٹریڈ پالیسی فریم ورک (ایس ٹی پی ایف )2018تا2023 کی تیاری پر کام شروع کر دیا ہے جس کا مقصد حکومت کے پانچ سالہ اقتدار کے دوران ملکی برآمدات کو 46 ارب ڈالر تک لے کر جانا ہے ۔ذرائع کے مطابق حکومت کی جانب سے پالیسی کا مسودہ تیار کرلیا گیا ہے اور اس کو تمام متعلقہ سٹیک ہولڈر کے ساتھ شیئر کیا جارہا ہے ،وزارت کامرس کے ترجمان نے اس حوالے سے کہا کہ اس پالیسی میں ترمیم اور بہتری کیلئے سٹیک ہولڈر کے ساتھ مشاورت میں کچھ ٹائم لگ سکتا ہے جبکہ اس سے قبل سابقہ پی ایم ایل این کی حکومت کی جانب سے آ ئندہ پانچ سال کے لئے اس قسم کی تجارتی پالیسی کا اعلان نہیں کیا گیا اور یہ معاملہ نئی آنیوالی حکومت کے لئے چھوڑ دیا گیا اس سے قبل ایس ٹی پی ایف 2016-18 کی رواں سال 30 جون کو بغیر اپنے اہداف حاصل کئے مدت ختم ہوگئی تاہم موجودہ حکومت کی کوشش ہے ملکی برآمدات کو آئندہ پانچ سالوں کے دوران دوگنا کیا جائے تا کہ ملک کو درپیش وسیع پیمانے پرمالیاتی خسارے کو کم کیا جا سکے ۔سیکرٹری تجارت یونس ڈھاگا کی جانب سے حال ہی میں پارلیمانی کمیٹی کو 46 ملین ڈالر کی مجوزہ پالیسی 2018 کے بارے میں بریفنگ دی گئی تھی جبکہ اس نئی پالیسی میں ایکسپورٹ سیکٹر کے خام مال پرمرحلہ وار ٹیرف کم کرنے کے لئے سفارشات دی گئیں جبکہ ملکی کرنسی کو مستحکم کرنے سمیت دیگر تجاویز بھی شامل ہیں ۔ذرائع کا کہنا ہے کہ اس سے قبل ایس ٹی پی ایف 2015-18 اپنے مطلوبہ نتائج حاصل کرنے میں بری طرح ناکام رہی جس سے پاکستانی برآمدات گزشتہ مالی سال کے دوران ریکارڈ23.2 ارب ڈالر رہی جبکہ سابقہ حکومت نے بزنس کمیونٹی ،کرنسی کی مالیت سمیت دیگر معاملات پر بھی خاص توجہ نہیں دی جس سے ملک کا مالیاتی خسارہ بڑھا تاہم موجودہ حکومت مالیاتی خسارے کو کم کرنے کے لئے بھر پور اقدامات اٹھارہی ہے۔

image_pdfimage_print

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے