Voice of Asia News

پی ایچ ڈی سکالر منان وانی کی شہادت پر مقبوضہ کشمیر میں ہڑتال، احتجاجی مظاہرے

سری نگر(وائس آف ایشیا) عسکری تنظیم حزب المجاہدین کے کمانڈر پی ایچ ڈی سکالر منان وانی کی شہادت پر جمعہ کو مقبوضہ کشمیر میں احتجاجی ہڑتال سے کاروبار زندگی معطل ہو کر رہ گیا، تعلیمی ادارے بازار ، دفاتر بند رہے ۔ مقبوضہ کشمیر بھر میں احتجاجی مظاہرے کیے گئے۔مقبوضہ کشمیر کی مشترکہ آزادی پسند قیادت سیدعلی گیلانی، میرواعظ عمرفاروق اورمحمدیاسین ملک نے ہڑتال کی اپیل کی تھی ۔بھارتی فوج نے ڈاکٹرمنان وانی کو جمعرات کو اپنے ساتھی عاشق حسین سمیت ضلع کپواڑہ میں ہندواڑہ کے علاقے Shatgund میں تلاشی کی کارروائی کے دوران شہید کردیاتھا۔پی ایچ دی سکالر منان وانی اور عاشق حسین کو لنگیٹ قصبے میں سپرد خاک کر دیا گیا۔ نماز جنازہ میں50 ہزار سے زیادہ شہریوں نے شرکت کی ۔ اس دوران احتجاجی مظاہرین اور بھارتی فورسز کے درمیاں جھڑپوں میں درجنوں شہری زخمی ہوگئے ، جن میں 8افراد کو گولیاں اور پیلٹ لگے۔شاٹھ گنڈ بالاکے مضافاتی دیہات ہرل،پرنگرو،قلم آباد،آڑورہ،تیرن،شاٹھ گنڈ پائین اور دیگر علاقوں شدید جھڑپیں ہو ئیں ۔فورسز اور پولیس نے مظارین کو منتشر کرنے کیلئے شلنگ کا سہارا لیا۔ تاہم بعد میں پیلٹ کا استعمال کیا گیا اور مظاہرین پر گولیاں بھی چلائیں گئیں جس سے 8مظاہرین زخمی ہوئے، جن میں 2کو گولیاں اور 6کو پیلت لگے۔دو زخمیوں کو سرینگر منتقل کردیا گیا ہے۔کپوارہ میں انٹر نیٹ سروس بند رہی ۔ادھرکپوارہ، ترہگام،کرالہ پورہ، لنگیٹ، کرالہ گنڈ، ہندوارہ،لال پورہ اور دیگر علاقوں میں نوجوان سڑکوں پر نکل آئے اور انہوں نے پتھراؤ کیا۔ شہادت کے بعدمنان وانی اور اسکے ساتھی عاشق حسین کی لاشیں شاٹھ گنڈ بالا سے ہندوارہ پولیس لائنز لائی گئیں جہاں انہیں لواحقین کے حوالے کیا گیا۔اس دوران منان وانی کی لاش جلوس کی صورت میں آبائی گاؤں روانہ کی گئی جبکہ عاشق حسین کی لاش بھی لنگیٹ پہنچائی گئی۔عاشق حسین کی نماز جنازہ عید گاہ لنگیٹ میں ادا کی گئی جس میں ہزاروں لوگ شریک ہوئے اور بعد میں جلوس کی صورت میں تلواری لیجا کر سپرد خاک کیا گیا۔منان وانی کی لاش ٹکی پورہ پہنچنے کے بعد فورسز نے ٹکی پورہ جانے والے تمام راستے سیل کردیئے اور کسی کو بھی وہاں جانے کی اجازت نہیں دی گئی۔ہر ایک جگہ پر ناکے لگائے گئے تھے، سڑکیں بند کردی گئی تھیں اور لوگوں کے چلنے پھرنے پر روک لگائی گئی، لیکن اسکے باوجود ہزاروں لوگ ٹکی پورہ پہنچنے میں کابیاب ہوئے۔اس دوران لوگ جب مشتعل ہوئے تو انہوں نے ٹکی پورہ بس سٹینڈ اوربڑی بیراہ آرمی کیمپ میں فورسز اہلکاروں پر شدید پتھراؤ کیا۔جس کے جواب میں مظاہرین پر شلنگ کی گئی۔اس دوران ہزشاروں مرد و زن لولاب کے مختلف علاقوں سے پہلے ہی ٹکی پورہ پہنچ گئے تھے جن میں ایک کثیر تعداد جنوبی کشمیر سے بھی تھی۔پلوامہ،ترال، پانپور، اونتی پورہ اور جنوبی کشمیر کے دیگر علاقوں سے بھی لوگ نماز جنازہ میں شرکت کیلئے آئے ہوئے تھے۔نماز مغرب کے بعد منان وانی کی نماز جنازہ اپنے آبائی گھر کے بالکل مقابل میں انگلش میڈیم پبلک سکول کے صحن میں ادا کی گئی، جس میں قریب 50ہزار لوگوں نے شرکت کی اور بعد میں انہیں مزار شہدا میں سپرد خاک کیا گیا۔ اسکالرکمانڈرمنانی وانی کی شہادت پرکشمیریونیورسٹی کے طالب علموں نے کیمپس میں جمع ہوکراحتجاج کیا،اورپھرکمانڈرکی غائبانہ نمازجنازہ بھی اداکی۔ طلبہ نے آزادی واسلام کے حق میں نعرے بازی بھی کی تاہم وہ پرامن رہے ۔اس دوران احتجاج میں شامل یونیورسٹی طلبہ نے صفیں بانڈھ لیں اور غائبانہ نمازجنازہ اداکی ۔

image_pdfimage_print

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے