Voice of Asia News

جنوبی پنجاب کی طرح سندھ میں بھی نئے صوبے بننے چاہئیں، مفتاح اسماعیل

اسلام آباد( وائس آف ایشیا)مسلم لیگ (ن)کے راہنماء اور سابق وزیرخزانہ ڈاکٹر مفتاح اسماعیل نے کہا ہے کہ نوازشریف حکومت قائم ہونے سے قبل کراچی میں امن کمیٹی ہوا کرتی تھی اور شہر میں قتل و غارت گری، بھتہ خوری اور اغوا برائے تاوان کی وارداتیں عام تھیں، مسلم لیگ (ن) نے اس ظلم اور تاریکی کے دور کو ختم کیا، مسلم لیگ (ن) ہی نے وفاق کے فنڈز سے کراچی میں گرین لائن بچھائی، بجٹ تقریر میں کراچی میں ڈی سیلی نیشن پلانٹ لگانے کا اعلان کیا، جنوبی پنجاب کی طرح سندھ میں بھی نئے صوبے بننے چاہئیں، دوبارہ و اقتدار میں آئے تو کراچی سے ٹرانسپورٹ اور پانی کی قلت کا مسئلہ ختم کر دیں گے۔ایک انٹرویو میں سابق وزیرخزانہ نے کہا کہ اگلے برس کراچی میں بجلی کی طلب 3700سے 3800میگا واٹ تک پہنچ جائے گی ، یہ کمی پوری کرنے کے لیے 600سے700میگا واٹ کا انتظام کرنا پڑے گا، لیکن کے ای یہ کمی پوری کرتی نظر نہیں آ رہی،یہ کہنا غلط بیانی ہو گی کہ بجلی کی لوڈ شیڈنگ ختم ہو گئی ہے،اس وقت مجموعی طور پر کم و بیش 4000میگاواٹ کی کمی کا سامنا ہے، جولائی تک نیلم، جہلم پاور پراجیکٹ بھی مکمل ہو جائے گا، جس سے 975میگا واٹ بجلی ملے گی اور تربیلا فورتھ ایکسٹینشن بھی مکمل ہو جائے گی، جس سے 1400میگاواٹ بجلی ملے گی، جولائی میں حالات بہتر ہو جائیں گے تاہم ترسیل کے نظام میں مزید بہتری کی گنجائش موجود ہے اور یہ بہتر ہو سکتا ہے.انہوں نے کہا کہ کالا باغ ڈیم ایک بہترین آبی ذخیرہ ثابت ہو گا، لیکن یہ منصوبہ متنازع ہو چکا ہے، تو اس کے بجائے دوسرا منصوبہ شروع کر دیا جائے. انہوں نے کہا کہ اگر میاں نواز شریف ووٹ کو عزت دینے کی بات کرتے ہیں، تو اس کا ہرگز یہ مقصد نہیں کہ وہ عدلیہ یا اسٹیبلشمنٹ کی عزت نہ کرنے کی بات کر رہے ہیں، ہمارے دور میں معاشی سرگرمیوں میں تیزی آئی،آئندہ دنوں شرحِ نمو میں مزید اضافہ اور افراطِ زر میں کمی واقع ہو گی، روپے کی قدر میں کمی سے برآمدات میں اضافہ ہونا شروع ہوا .انہوں نے کہا کہ ہم نے روپے کی قدر میں کمی کی اور جس سے برآمدات میں اضافہ ہوا، ہم نے ایک بنیادی غلطی یہ کی تھی کہ روپے کی قدر کو مصنوعی طور پر گرنے سے روکے رکھا اور اس کے نتیجے میں ہمیں بین الاقوامی مارکیٹ میں اربوں ڈالرز raise کرنا پڑے. ڈاکٹر مفتاح اسماعیل ایک ممتاز صنعت کار اور ماہر معیشت ہیں پاکستان واپسی سے قبل وہ آئی ایم ایف سے وابستہ رہے. ڈاکٹر مفتاح اسماعیل نے کہا کہ ملک کی آبادی 7کروڑ سے 20کروڑ تک پہنچ چکی ہے، لیکن تربیلا اور منگلا کے علاوہ کوئی نیا ڈیم نہیں بنا‘ اب کم از کم 700ارب روپے کی لاگت سے بھاشا ڈیم تو تعمیر کیا جائے گا.۔

image_pdfimage_print

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے