Voice of Asia News

امریکی سفیر افغانستان میں 17سال سے جاری تنازع خاتمے کیلئے پرامید

کابل( وائس آف ایشیا ) امریکی سفیر زلمے خلیل زاد نے امید ظاہر کی ہے کہ افغانستان میں عسکریت پسندوں کی جانب سے بڑھتی ہوئی دہشت گردی کی کارروائیوں کے باوجود آئندہ 5 ماہ میں افغان حکومت اور طالبان میں امن معاہدہ طے پا جائے گا۔ افغانستان کی صورتحال کے حوالے سے ہونے والی بات چیت کے دوسرے مرحلے کے بعد کابل لوٹ پر افغان نژاد امریکی سفیر نے حیرت انگیز طور پر گزشتہ 17 سال سے جاری اس تنازع کے خاتمے کے پر مثبت ردِ عمل کا اظہار کیا۔کابل کے لیے سابق امریکی سفیر رہنے والے زلمے خلیل زاد طالبان کو افغان حکومت سے مذاکرات کرنے کے لیے راضی کرنے کی امریکی کوششوں کی سربراہی کررہے ہیں۔رواں برس ستمبر میں افغان حل کے لیے خصوصی طور پر سفیر بنائے جانے کے بعد انہوں نے قطر میں فریقین سے ملاقاتوں کا سلسلہ جاری رکھا ہوا ہے۔دوسری جانب اس بات کا بھی اندیشہ ہے کہ افغانستان میں آئندہ برس 20 اپریل کو ہونے والے صدارتی انتخابات کی وجہ سے امن کے لیے مذاکراتی عمل متاثر ہوسکتا ہے۔تاہم کابل میں ذرائع ابلاغ سے گفتگو کرتے ہوئے زلمے خلیل زاد کا کہنا تھا کہ میں خاصہ پر امید ہوں مجھے امید ہے طالبان اور دیگر افغان صدارتی انتخابات سے قبل کسی حتمی امن معاہدے پر سمجھوتہ کرلیں گے۔انہوں نے بتایا کہ طالبان سمجھتے ہیں کہ وہ بھی عسکریت پسندی سے کامیاب نہیں ہوسکتے لہذا میرے خیال میں یہ مفاہمت اور امن کے لیے ایک نادر موقع ہے۔ان کا مزید کہنا تھا کہ حکومت افغانستان ملک میں امن چاہتی ہے جس کے لیے میں تمام متعلقہ فریقین سے رابطے میں ہوں تمام افغان گروہوں کے ساتھ گفتگو جاری ہے۔طالبان رہنماں اور عسکری گروہ کے قریبی ذرائع کا کہنا تھا کہ قطر میں، جہاں ان کا سیاسی دفتر قائم ہے، امریکی سفیر زلمے خلیل زاد کے ساتھ 3 روزہ مذاکرات ہوئے۔

image_pdfimage_print

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے