ISLAMABAD: Sheikh Rasheed Ahmad Joint Candidate for PM of opposition parties talk with media outside Parliament House after getting the nomination papers from Speaker National Assembly Ayaz Sadiq office. INP PHOTO
Voice of Asia News

ڈیل یا ڈھیل نہیں بلکہ اب باقاعدہ پیکج کی بات ہو رہی ہے

اسلام آباد (وائس آف ایشیا)شیخ رشید کا کہنا ہے کہ ڈیل یا ڈھیل نہیں بلکہ اب باقاعدہ پیکج کی بات ہو رہی ہے، جس پیکج کی بات ہو رہی ہے اس میں حسن ، حسین ، مریم اور اسحاق ڈار بھی شامل ہیں۔ تفصیلات کے مطابق وزیر ریلوے شیخ رشید کی جانب سے کہا گیا ہے کہ ڈیل یا ڈھیل کی باتیں اب پرانی ہوگئی ہیں۔ اب شریف خاندان اپنے لیے پیکج حاصل کرنے کی کوشش کر رہا ہے۔وزیر ریلوے شیخ رشید کا کہنا ہے کہ جس پیکج کی بات ہو رہی ہے اس میں حسن ، حسین ، مریم اور اسحاق ڈار بھی شامل ہیں۔ کوئی ڈھیل یا ڈیل وزیراعظم کی اجازت کے بغیر نہیں ہوسکتی۔ اس حوالے سے 8 فروری کو قوم کے سامنے تازہ ترین اپ ڈیٹس لاوں گا۔ واضح رہیکہ سابق وزیر اعظم نواز شریف کے گرد جب سے گھیرا تنگ ہوا ہے تب سے ہی این آر او کی بازگشت سنائی دے رہی ہے۔جس وقت بیگم کلثوم نواز کا انتقال ہوا تو این آر او کی خبریں مزید زور پکڑ گئیں۔وزیر اعظم کے دورہ سعودی عرب کے موقع پر سزا معطلی کے بعد نواز شریف ،مریم نواز اور کیپٹن (ر)صفدر کی رہائی نے این آر او کے تاثر کو مزید تقویت دی۔تاہم اس حوالے سے حکومت بھی بارہا اس بات کو دہراتی رہی ہے کہ مسلم لیگ ن نواز شریف کے لیے این آر او چاہتی ہے لیکن ہم کسی قسم کی ڈیل کے لیے تیار نہیں ہیں۔اس حوالے سے مسلم لیگ ن کے رہنماوں نے ہمیشہ ہی ڈیل کی خبروں کی تردید کی ہے۔تاہم ایک مرتبہ پھر این آر او کی آوازیں سنائی دے رہی ہیں۔وفاقی وزیر ریلوے شیخ رشید کا مزید کہنا ہے کہ شہباز شریف اس وقت ڈیل کی کوششوں میں ہیں اور وہ کس کے ذریعے ڈیل کرنا چاہ رہے ہیں یہ بات میں وزیر اعظم سے پوچھ کر بتاوں گا۔انہوں نے یہ بھی کہا میں آپکو بتا دوں کہ نواز شریف شہباز شریف جتنے چالاک آدمی نہیں ہیں۔1999 میں بھی جو ڈیل ہوئی تھی وہ شہباز شریف اور برگیڈئیر نیاز کی کوششوں سے ہوئی تھی۔اسی ڈیل کے حوالے سے بات کرتے ہوئے معروف صحافی خاور گھمن نے کچھ روز قبل بتایا کہ شریف فیملی کے لیے بڑی شدت اور اہتمام کے ساتھ این آر او کی کوششیں کی جارہی ہیں۔اانہوں نے بتایا کہ جنرل (ر) قیوم کے ذریعے یہ کوششیں کی جارہی ہیں۔انکا کہنا وہ آجکل راہداریوں میں پائے جارہے ہیں اورمرکزی سطح پر بات چیت جاری ہے اور اس کا کیا نتیجہ نکلتا ہے وہ تو آنے والا وقت ہی بتائے گا۔انہوں نے یہ بھی کہا کہ چوہدری نثار بھی خفیہ انداز میں متحرک ہو چکے ہیں اور انکی جانب سے پارٹی قیادت کے ساتھ رابطوں کا سلسلہ جاری ہے اور یہ بات بھی ہمیں نظر انداز نہیں کرنی چاہیے کہ جب بھی شریف خاندان پر برا وقت پڑا ہے تو چوہدری نثار کی جانب سے انکی ریلیف کی کوششیں کی گئی ہیں تاہم اب موجودہ صورتحال میں اونٹ کس کروٹ بیٹھے گا یہ آنے والا وقت ہی بتا سکتا ہے۔

image_pdfimage_print

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے