Voice of Asia News

مقبوضہ کشمیر میں خون خرابے کی ذمہ داری بھارتی حکمرانوں پر عائد ہوتی ہے، گیلانی

سرینگر( وائس آف ایشیا) مقبوضہ کشمیر میں کل جماعتی حریت کانفرنس کے چیئرمین سید علی گیلانی نے کہا ہے کہ مقبوضہ علاقے میں جاری خون خرابے کی تمام تر ذمہ داری بھارتی حکمرانوں پر عائد ہوتی ہے جو مسئلہ کشمیر کو اس کے تاریخی پسِ منظر کی روشنی میں حل کرنے کے بجائے صرف اور صرف بندوق اور بارود سے حل کرنا چاہتے ہیں۔ ان خیالات کا اظہار انہوں نے بھارتی فوجیوں کے ہاتھوں ضلع پلوامہ کے علاقے لتر میں شہید ہونے والے کشمیری نوجوان کو شاندار خراج عقیدت پیش کرتے ہوئے اپنے ایک بیان میں کیا۔انہوں نے کہا کہ بھارت نے کشمیریوں کی آزادی کو جبری طور پر چھین رکھاہے جس کے حصول کیلئے کشمیری عوام عظیم اور بے مثال قربیاں دے رہے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ کشمیری نوجوان اپنی قوم کی مظلومیت اور محکومیت ختم کرنے کے لیے اپنی عزیز جانوں کا نذرانہ پیش کررہے ہیں لہٰذا یہ ہماری ذمہ داری ہیں کہ ہم ان کی قربانیوں کی لاج رکھتے ہوئے مقصد کے حصول تک جدوجہد کو ہر قیمت پر جاری رکھیں۔سید علی گیلانی نے کہا کہ جموں کشمیر کی غیر یقینی صورتحال اور عدم استحکام کی وجہ سے بڑے پیمانے پر قیمتی انسانی زندگیوں کا ضیاع ہو رہا ہے ، جس کی تمام تر ذمہ داری بھارتی حکمرانوں پر عائد ہوتی ہے ، جو کشمیری عوام کی خواہشات اور اُمنگوں کا احترام کرنے کے بجائے ضد اور ہٹ دھرمی پر اڑے ہوئے ہیں اور خطے پر طاقت کے زور پر اپنا جبری قبضہ جاری رکھنا چاہتے ہیں۔انہوں نے بھارتی فورسز کی طرف سے پلوامہ کے کئی دیہات میں لوگوں کے گھروں پر چھاپوں، لوگوں کی مارپیٹ اور 9نوجوانوں کی گرفتار ی کی مذمت کرتے ہوئے کہا کہ نام نہاد تلاشی کارروائیوں کے نام پر عام لوگوں کو سخت عتاب کا نشانہ بنایا جا رہا ہے جو انسانی حقوق کی سنگین پامالی ہے۔ انہوں نے کہا کہ کشمیریوں کا واحد قصور یہ ہے کہ انہوں نے بھارت کے جبری قبضے کو کبھی قبول نہیں کیا ہے مگر بھارت جموں وکشمیر کے زمینی حقائق کو تسلیم کرنے کے بجائے حقِ خودارادیت کی تحریک کو دبانے کے لیے فوجی طاقت کا بے تحاشا استعمال کر ریا ہے جو عالمی برادری کیلئے چشم کشا ہے۔

image_pdfimage_print

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے