Voice of Asia News

پی آئی سی جانے سے انکار ، نواز شریف کو ان کی خواہش پر دوبارہ کوٹ لکھپت جیل منتقل کر دیا گیا

لاہور( وائس آف ایشیا ) سابق وزیراعظم نوازشریف کو اسپتال سے کوٹ لکھپت جیل منتقل کردیا گیا۔تفصیلات کے مطابق سابق وزیراعظم نوازشریف گزشتہ چند روز سے خرابی صحت کی بنا پر لاہور کے سروسز اسپتال میں داخل تھے جہاں میڈیکل بورڈ نے ان کے مختلف ٹیسٹ کیے اور ان کی صحت کا تفصیلی معائنہ بھی کیا گیا۔گزشتہ روز میڈیکل بورڈ نے نوازشریف کا معاملہ محکمہ داخلہ کو ریفر کیا تھا اور ان کو فوری طور پر امراضِ قلب کے اسپتال منتقل کرنے کی سفارش کی تھی تاہم سابق وزیراعظم نے اسپتال کی بجائے واپس جیل جانے پر اصرار کیا تھا۔سابق وزیراعظم نے جمعرات کو ملاقاتیوں کے روز اہلخانہ سے ملاقات کی جن میں ان کی والدہ اور صاحبزادی مریم نواز بھی شامل تھیں۔نوازشریف کو ملاقاتوں کے بعد جیل حکام نے سروسز اسپتال سے کوٹ لکھپت جیل منتقل کیا گیا۔سابق وزیراعظم کی اسپتال سے جیل منتقلی کے موقع پر سیکیورٹی کے سخت انتظامات کیے گئے تھے۔نواز شریف گزشتہ 6 روزسے سروسز اسپتال لاہور میں داخل تھے، جہاں ڈاکٹروں نے ان کے مختلف ٹیسٹ کیے اور اور ان کی صحت کا تفصیلی معائنہ کیا اور میڈیکل رپورٹ پیش کی جس میں نوازشریف کو جیل کے بجائے اسپتال میں ہی رکھنے کی سفارش کی گئی۔میڈیکل بورڈ کی رپورٹ کے پیش نظر پنجاب حکومت نے نوازشریف کو سروسز اسپتال سے پنجاب انسٹی ٹیوٹ آف کارڈیالوجی منتقل کرنے کا فیصلہ کیا تاہم نوازشریف نے پی آئی سی جانے سے انکار کرتے ہوئے کہا کہ انہیں واپس جیل لے جایا جائے۔نوازشریف کی خواہش پر انہیں سروسز اسپتال سے واپس کوٹ لکھپت جیل منتقل کیا گیا جب کہ ڈاکٹرز کا کہنا ہے کہ نوازشریف کو چیک اپ کے لیے دوبارہ اسپتال منتقل کرنے کی ضرورت پڑسکتی ہے۔نواز شریف کے ہسپتال منتقل ہونے کے بعد ڈیل کی باتیں کی جا رہی تھیں ان کے دوبارہ جیل جانے سے ڈیل کی افواہیں دم توڑ گئیں ۔

image_pdfimage_print

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے