Voice of Asia News

اقوام متحدہ کی کشمیر قرار دادیں دس ہزار ٹینکوں اور توپوں سے زیاد ہ طاقتور ہیں

سری نگر(وائس آف ایشیا) قومی محاذِ آزادی کے سربراہ اعظم انقلابی نے بھارت کو مشورہ دیا ہے کہ وہ پلوامہ واقعے پر سنجیدہ غور وفکر کرے کہ اس طرح کا ماحول کیونکر پیدا ہوا اور اس مسئلے کے حل کیلئے کون سی راہیں تلاش کی جاسکتی ہیں۔انہوں نے کہاکہ حقائق کے پیش نظر سید علی گیلانی ، میر واعظ عمر فاروق اور محمد یسین ملک پر لازم ہے کہ وہ ایک پریس کانفرنس یا سیمینار میں پلوامہ واقعہ کا معروضی جائزہ پیش کرتے ہوئے بھارتی رہنماوں پر واضح کریں کہ ہم کشمیریوں کی نگاہوں میں پنڈت جواہر لال نہرو کے وعدہ رائے شماری اور کشمیر سے متعلق اقوام متحدہ کی قرار دادوں کے تناظر میں brawn-assertion کی ضرورت نہیں۔ نہرو کا وعدہ رائے شماری اور UNO کی کشمیر قرار دادیں دس ہزار ٹینکوں اور توپوں سے زیاد ہ طاقتور ہیں۔ ہاں کشمیر کی نئی نسل کے جگر پارے جب دیکھتے ہیں کہ بھارتی حکمرانوں نے کشمیر میں مکمل سیاسی گھٹن اور حبس کا سماں پیدا کرتے کرتے سینئر مزاحمتی رہنماوں کے لیے جیلوں اور تھانوں کے دروازے کھولے ہیں تو وہ پہاڑوں کا رخ کرتے ہیں اور جذبات کے اظہار کی راہیں تلاش کرتے ہیں۔ انہوں نے کہاکہ اچھا ہوا کہ سعودی ولی عہد محمد بن سلمان صاحب دہلی آئے اور یہاں انہوں نے strategic restraint کی اہمیت اور افادیت بیان کرتے کرتے مسائل کے تصفیہ کے لیے مذاکرات کے طریقہ کار پر اصرار کیا۔

image_pdfimage_print

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے