Voice of Asia News

شہزادی ریما بنت بندر نے سفارتی رموز اپنے والد سے سیکھے

ریاض( وائس آف ایشیا )حال ہی میں سعودی عرب نے شاہی خاندان کی خانوادی ریما بنت بندر بن سلطان کو امریکا میں سعودی عرب کی سفیر تعینات کیاہے۔ وہ مملکت کی پہلی خاتون ہیں جنہیں کسی ملک میں سفیر مقرر کیا گیا ہے۔ انہیں امریکا تعینات شہزادہ خالد بن سلمان کی جگہ سفیر مقرر کیا گیا۔ شہزادہ خالد بن سلمان کو سعودی عرب میں نائب وزیر دفاع کا قلم دان سونپا گیا ہے۔شہزادی ریما بنت بندر بن سلطان کیامریکا میں سفیر مقرر کیے جانے پر وہ پوری دنیا کے ابلاغی حلقوں میں زیربحث ہیں۔شہزادی ریما 24 اکتوبر 1983 کو امریکا میں اپنے والد شہزادہ بندر بن سلطان کے ہمراہ واشنگٹن میں سعودی سفارت خانے میں داخل ہوئیں۔ شہزادی ریما کے والد نے 22 سال تک دونوں ملکوں کے اہم تاریخی ادوار میں سفارت کاری کے فرائض انجام دیئے۔ امریکا میں قیام کے دوران شہزادی ریما نے سفارتی آداب و رموز اپنے والد شہزادہ بندر سلطان سے سیکھے۔ یہی وجہ ہے کہ انہوں نے مختلف شعبہ ہائے زندگی میں کامیابی کے ساتھ خدمات انجام دیں۔ ان کی جرات، ہمت اور سفارتی رموز سے آگاہی کی بنا پر امریکا جیسے طاقت ور ملک میں انہیں سفیر مقرر کیا گیا۔شہزادی ریما بنت بندر بن سلطان کی امریکا میں سفیر کے طور پرتعیناتی کے بعد علاقائی اور عالمی میڈیا پر ان کے حوالے سے کافی بحث کی گئی۔ شہزادی ریما کرشماتی شخصیت کی حامل ہیں جو اب تک پرائیویٹ سیکٹر اور حکومتی اداروں میں گراں قدر خدمات انجام دے چکی ہیں۔شہزادی ریما نے امریکا میں سفیر مقرر کیے جانے پر خادم الحرمین الشریفین اور ولی عہد شہزادہ محمد بن سلمان کی طرف سے اعتمادکا اظہار کرنے پر ان کا دل کی گہرائی سے شکریہ ادا کیا ہے اور کہا ہے کہ وہ امریکا میں پوری ذمہ داری کے ساتھ اپنے فرائض انجام دیں گی اور سفارتی محاذ پر سعودی عرب کا ہرممکن دفاع کریں گی۔

image_pdfimage_print

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے