Voice of Asia News

بھارت تحریک آزادی کو دبانے کیلئے نت نئی سازشیں اور حربے اختیار کر رہا ہے

جموں(وائس آف ایشیا)مقبوضہ کشمیر میں کل جماعتی حریت کانفرنس کی اکائی جموں کشمیر پیپلز موؤمنٹ نے کہا ہے کہ بھارت کشمیریوں کی تحریک آزادی کو دبانے کیلئے نت نئی سازشیں اور حربے اختیار کر رہا ہے۔ پیپلز موومنٹ کے چیئرمین میر شاہد سلیم نے جموں میں ایک سیمینار سے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ بھارت میں قائم ہند و انتہا پسند تنظیم راشٹریہ سویم سیوک سنگھ کی پشت پناہی والی بھارتیہ جنتا پارٹی کی حکومت کشمیریوں کو آزادی کے مطابق سے باز رکھنے کیلئے اور جموں کشمیر کی متنازعہ حیثیت کو نقصان پہچانے کیلئے نئے نئے ہتھکنڈے آزما رہی ہے ۔انہوں نے کہا کہ جموں وکشمیر کے سٹیٹ سبجیکٹ قانون 35۔ اے کو عدالت کے ذریعے منسوخ کرانے کی کوشش کی جا رہی ہے تاکہ علاقے میں مسلمانوں کی اکثریت کو اقلیت میں بدلا جا سکے۔میر شاہد سلیم نے کہا کہ جموں وکشمیر کو فرقہ وارانہ بنیادوں پر تقسیم کرنے کی بھی سازشیں رچائی جا رہی ہیں اور لداخ کو الگ ڈویژن بنانے کا اقدام بھی اسی سازش کا حصہ ہے۔ سیمینار سے سیاسی و سماجی کارکن آئی ڈی کھجوریہ نے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ جموں کشمیر ایک متنازعہ خطہ ہے جس کے مستقبل کا فیصلہ ہوناابھی باقی ہے اور بھارت کو چاہئے کہ نت نئے حربے اختیار کر کے ریاست کی بندر بانٹ کرنے کے بجائے مسئلہ کشمیر کو حل کرے ۔سیمینار سے عبدلحمید خان، چوہدری محمد شریف، عبدلجبار، نذیر احمد، نور حسین ، شریف احمد کھانڈے اور شبیر احمد گنائی نے بھی خطاب کیا۔

image_pdfimage_print