Voice of Asia News

ڈالر ملکی تاریخ کی ریکارڈ سطح پر آ گیا اوپن مارکیٹ میں ڈالر 143 روپے 50 پیسے کا ہو گیا

کراچی(وائس آف ایشیا) پریشان عوام کے لیے ایک بعد ایک بری خبر سامنے آ رہی ہے۔میڈیا رپورٹس میں بتایا گیا ہے کہ جہاں حکومت نے پٹرولیم مصنوعات کی قیمتوں میں اضافہ کر دیا وہاں دوسری طرف کراچی اسٹاک مارکیٹ کھلتے ہی 200پوائنٹس گر گئی۔جب کہ ڈالر ملکی تاریخ کی رکارڈ سطح پر آ گیا۔انٹر بینک میں ڈالر 30پیسے مہنگا ہونے کے بعد 141روپے 50 پیسے کا ہو گیا جب کہ اوپن مارکیٹ میں ڈالر کی قیمت 70 پیسے بڑھ گئی۔اوپن مارکیٹ میں ڈالر 143 روپے 50 پیسے کا ہو گیا ہے۔جب کہ سونے کی قیمت بھی بلند ترین سطح پر پہنچ گئی ہے۔لاہور میں سونا فی تولہ 275 روپے مہنگا ہو گیا جس کے بعد سونے کی قیمت 71 ہزار روپے فی تولہ ہو گئی۔ایک رپورٹ کے مطابق منی چینجرز کا کہنا ہے کہ روپے کی قیمت مسلسل گر رہی ہے جس کی وجہ سے مارکیٹ بہت غیرمستحکم ہو گئی ہے اور لوگ بہت زیادہ ڈالر خرید رہے ہیں اور مارکیٹ میں ڈالر کم ہوجانے کی وجہ سے مارکیٹ بھی پلس ہو گئی ہے۔پاکستان تحریک انصاف کے حکومت میں آنے کے وقت ڈالر کی قیمت 123روپے تھی لیکن اس میں مسلسل گراوٹ کی وجہ سے اب اس کی قیمت143روپے50پیسے پر پہنچ چکی ہے۔ اقتصادی ماہرین کا کہنا ہے کہ کرنٹ اکاؤنٹ خسارے میں کمی کے باوجود دالر کی قیمت میں آضافہ ہونے کا خدشہ ہے۔ ان کا کہنا ہے کہ ایکسچینج ریٹ اگر مصنوعی طور پر بڑھ رہا ہے تو روپے کی قیمت میں ایڈجسٹمنٹ کرنی ہی پڑے گی۔ ماہرین کے مطابق آئی ایم ایف سے قرضہ ملنے تک روپے کی قیمت میں مزید آضافہ ہو گا۔ بیرونِ ممالک سے 9ارب ڈالر سے زیادہ رقم ملنے کے باوجود روپے کی قدر میں گراوٹ ہے۔جب کہ دوسری جانب حکومت نے پٹرولیم مصنوعات کی قیمتوں میں اضافہ کر دیا ہے۔ پٹرول اور ڈیزل کی فی لیٹر قیمت میں 6روپے اضافہ کر دیا ہے۔

image_pdfimage_print