Voice of Asia News

پاک فضائیہ کا 27 فروری کا واقعہ تاریخ کا حصہ بن چکا، اپنے دفاع میں دو بھارتی طیارے مار گرائے، آئی ایس پی آر

اسلام آبا (وائس آف ایشیا) آئی ایس پی آر کا کہنا ہے کہ 27فروری کو بھارتی جہاز گرانے کے لیے کاروائی جے ایف 17 تھنڈر طیاروں نے کی۔دو بھارتی جہازوں نے حدود کی خلاف ورزی کی تو پاک فضائیہ نے نشانہ بنایا۔ پاک بھارت کی حالیہ کشیدگی میں 27 فروری کا واقعہ تاریخ کا حصہ بن چکا ہے۔آئی ایس پی آر کا کہنا ہے کہ بھارتی جہازوں کو ایف 16 نے نشانہ بنایا یا جے ایف 17 نے؟ سوال بے معنی ہے۔بھارتی فضائیہ نے حملہ کیا تو پاک فضائیہ کے تمام طیارے بشمول ایف 16 فضا میں موجود تھے۔اگر ایف 16نے کاروائی کی پھر بھی نشانہ دو بھارتی جہاز ہی بنے۔پاکستان اپنے دفاع میں ہر صلاحیت کو استعمال کرنے کی صلاحیت رکھتا ہے۔خیال رہے اس سے قبل بھی ترجمان پاک فوج میجرجنرل آصف غفورنے غیرملکی خبررساں ادارے کو انٹرویودیتے ہوئے کہا تھا کہ بھارتی طیاروں نے 26 فروری کوفضائی حدود کی خلاف ورزی کرتے ہوئے پے لوڈ پھینکے، اپنی فضائی حدود میں رہتے ہوئے مقبوضہ کشمیرمیں 4 اہداف کونشانہ بنایا، 27 فروری کوپاکستان نیعام آبادی کونشانہ بنائے بغیرجوابی کارروائی کا فیصلہ کیا، بھارتیوں کوبتانا چاہتے تھے کہ ان کے فوجی اہداف کونشانہ بنانے کی صلاحیت رکھتے ہیں۔میجرجنرل آصف غفور نے کہا کہ پاکستان نے نشانہ بنانے کیلیے ایسی جگہ کا انتخاب کیا جہاں انفرااسٹرکچر اورآبادی نہیں تھی، کہا جاسکتا ہے کہ یہ ہتھیار حقیقی جنگ روکنے اورسیاسی راستہ اختیارکرنے کیلیے ہیں، بھارتی طیارہ گرانے کیلئے ایف 16 طیارہ استعمال نہیں بلکہ پاکستان میں تیارکردہ جے ایف 17 تھنڈراستعمال کیا گیا۔ہمارے سارے طیارے فضا میں تھے جس کی وڈیو موجود ہے۔ میجر جنرل آصف غفور نے کہا کہ پاکستان بھارت کے ساتھ ثالثی کیلئے روسی کردارکو خوش آمدید کہے گا، افغان امن عمل میں بھی روسی کردارکو سراہتے ہیں اورروس کے ساتھ ایوی ایشن، فضائی دفاعی نظام، ٹینک شکن نظام پرمذاکرات جاری ہیں۔

image_pdfimage_print