Voice of Asia News

تنازعہ کشمیر کو اگر حل نہ کیا گیا تو خطے کے دو ایٹمی طاقتوں میں جنگ ہو گی اشرف صحرائی

سری نگر( وائس آف ایشیا)تحریک حریت جموں وکشمیر کے چیئرمین محمد اشرف صحرائی نے کہا ہے کہ رمضا ن المبارک کے مقد س مہینے میں بھارتی فورسز کی طرف سے جنوبی کشمیر کے مختلف علاقوں میں گرفتاریوں کا نیا سلسلہ شروع کرنے کی شدید مذمت کی ہے۔۔تحریک حریت جموں وکشمیر کے چیئرمین محمد اشرف صحرائی نے بھارتی فورسز کی طرف سے جنوبی کشمیرکے شوپیان، پلوامہ،کولگام ،ترال اور دیگر علاقوں میں بڑی تعداد میں نوجوانوں کی بلاجواز اور غیر قانونی گرفتاری پر سخت تشویش کا اظہار کیا ہے۔ محمد اشرف صحرائی نے سرینگر سے جاری ایک بیان میں کہا کہ قابض حکمرانوں کی جبر واستبداد کی بڑھتی ہوئی کارروائیوں اور اوچھتے ہتھکنڈوں سے مقبوضہ وادی میں حالات مزید ابتر ہوں گے ۔انھوں نے کہا کہ بھارتی فورسزکو رات کے وقت گھروں پر چھاپوں، خواتین، بچوں اور معمر افراد سمیت مکینوں کو زدوکوب ، املاک کو تہس نہس اور نوجوانوں کو گرفتار کرنے کی کھلی چھٹی دی گئی ہے۔محمد اشرف صحرائی نے حریت رہنماؤں اور کارکنوں محمد یوسف فلاحی، عبدالغنی بٹ ،محمد امین آہنگر ،سید امتیاز حیدر ،منظور احمد گنائی ،نذیر احمد مانتو، جاوید احمد پھلے، محمد حسین وگے، غلام محمد مسگر، عبدالحمید پرے، دانش مشتاق ملک،ناصر عبداﷲ ،بشیر احمد بٹ ،سجاد احمد بٹ ،عبدالاحد تیلی، عبدالاحد میر،فاروق احمد شاہ، محمد رمضان شیخ ،عبدلطیف ڈار ،سجاد احمد بٹ، ،تعشوق احمد بانڈے،قاری عبدالاحد ،مشتاق احمد ہرہ، محمد یسین تانترے تاسین احمد ہرہ اور دیگر سینکڑوں لوگوں کی مسلسل غیر قانونی نظر بندی اور ان کی گرتی ہوئی صحت پر سخت تشویش کا اظہار کرتے ہوئے کہا کہ نظر بندفوں کے ساتھ جو ظالمانہ سلوک روا رکھا گیا ہے وہ انتہائی مجرمانہ ہے ۔انہوں نے غیر قانونی گرفتاریوں کا سلسلہ فوری طور پر بند کرنے اور تمام نظر بندوں کی عیدسے پہلے پہلے رہائی پر زور دیا۔ محمد اشرف صحرائی نے کہا کہ بھارتی حکمران اور مقبوضہ کشمیر میں انکے کٹھ پتلی فوجی طاقت کے بل پر کشمیریوں کی حق پر مبنی آواز کو دبانے میں بری طرح ناکام ہو چکے ہیں ۔انھوں نے عالمی برادری کی توجہ مقبوضہ علاقے کی بگڑتی ہوئی صورتحال کی طرف سے دلانے ہوئے کہا کہ تنازعہ کشمیر کو اگر حل نہ کیا گیا تو خطے کے دو ایٹمی طاقت کے حامل ملکوں کے درمیان ایک ہولناک جنگ کے امکان کو ہرگز رد نہیں کیا جاسکتا۔
وائس آف ایشیا15مئی2019 خبر نمبر4

image_pdfimage_print