Voice of Asia News

عدالت نے ڈاکٹر عدنان کو جیل سے باہر آکر بیان بازی سے روک دیا

لاہور ( وائس آف ایشیا) لاہور ہائیکورٹ میں نواز شریف سے ہفتے میں دو مرتبہ ملاقات کی اجازت کی درخواست پر سماعت ہوئی،میڈیا رپورٹس کے مطابق عدالت کی طرف سے ڈاکٹر عدنان کو جیل ڈاکٹرز کی سربراہی میں نواز شریف کے معائنے کی اجازت دی گئی۔عدالت نے کہا ہے کہ ڈاکٹر عدنان جیل ڈاکٹرز کی سربراہی میں معائنہ کرنا چاہیں تو کر سکتے ہیں۔ڈاکٹر عدنان نواز شریف کے اہلخانہ کے ساتھ ہفتے میں ایک بار نواز شریف کا معائنہ کر سکتے ہیں۔عدالت نے ڈاکٹر عدنان کو جیل سے باہر آکر بیان بازی سے بھی روک دیا۔عدالت نے حکم دیا ہے کہ ڈاکٹر عدنان باہر آ کر سیاسی بیان بازی نہیں کریں گے۔خیال رہے مسلم لیگ ن کی نائب صدر مریم نواز نے جیل میں نواز شریف سے ہفتے میں دو روز ملاقات کی اجازت نہ دینے کا اقدام لاہور ہائیکورٹ میں چلینج کیا تھا۔۔ مریم نواز کی لاہور ہائی کورٹ میں دائر درخواست میں پنجاب حکومت کو فریق بنایا گیا تھا۔درخواست میں مریم نواز نے موقف اپنایا کہ محکمہ داخلہ پنجاب نے نواز شریف سے ہفتے میں صرف ایک روز ملنے کی اجازت دی ہے، درخواست گزار کے والد دل سمیت متعدد عارضوں میں مبتلا ہیں، پنجاب حکومت کی جانب سے ملاقات کا ایک دن طے کیا جانا غیر قانونی ہے۔ درخواست میں کہا گیا کہ پنجاب حکومت نے نواز شریف سے کارکنوں اور پارلیمنٹرینز کی ملاقات پر بھی پابندی عائد کر دی ہے، نواز شریف پر جیل حکام کی جانب سے پابندیاں خلاف قانون اور غیر ا?ئینی ہیں۔عدالت سے استدعا ہے کہ نواز شریف سے ہفتے میں دو روز ملاقات کیلئے مختص کرنے کا حکم دیا جائے۔آج عدالت نے درخواست پر سماعت کرتے ہوئے نواز شریف کے ذاتی معالج ڈاکٹر عدنان کو جیل ڈاکٹرز کی سربراہی میں نواز شریف کے معائنے کی اجازت دی ہے۔

image_pdfimage_print
شیئرکریں
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •