Voice of Asia News

سیدعلی گیلانی کی یاسین ملک کی عدالتی تحویل میں توسیع اورآسیہ اندرابی کے گھر کو ضبط کرنے کی مذمت

سرینگر( وائس آف ایشیا) مقبوضہ کشمیر میں کل جماعتی حریت کانفرنس کے چیئرمین سید علی گیلانی نے غیر قانونی طورپر نظربند حریت رہنما ایازمحمد اکبر کی اہلیہ کی بگڑتی ہوئی صحت، لبریشن فرنٹ کے چیئرمین محمدیاسین ملک کی عدالتی تحویل میں توسیع ، دختران ملت کی نظر بند سربراہ آسیہ اندرابی کے گھر کو سرینگرمیں ضبط کرنے اور اپنے نواسے انیس الاسلام کو این آئی اے کی جانب سے دوبارہ نئی دلی طلب کرنے کی شدیدمذمت کی ہے ۔کشمیرمیڈیاسروس کے مطابق سیدعلی گیلانی نے سرینگر میں جاری ایک بیان میں کہاکہ بھارتی حکمرانوں نے تمام انسانی، اخلاقی اور قانونی اقدار کو پامال کرتے ہوئے کشمیر کے آزادی پسند عوام کو سیاسی انتقام کا نشانہ بناکر جموں وکشمیر پر اپنے جبری تسلط کو طول دینا چاہتے ہیں۔ انہوں نے کہاکہ بھارت کشمیری عوام سے اتنا خوفزدہ ہے کہ وہ سیاسی سطح پر مقابلہ کرنے کے بجائے انہیں اپنی فوج اور ایجنسیوں کے ذریعے دیوارکے ساتھ لگارہا ہے۔ انہوں نے کہا کہ حریت رہنما ایاز اکبر کی اہلیہ موت وحیات کی کشمکش میں مبتلا ہیں اورگزشتہ 2سال سے تہاڑ جیل میں نظربند اپنے شوہر کی رہائی کی منتظر ہیں۔ تاہم بے رحم قابض حکمران انہیں اپنے شوہر سے ملنے کا موقع فراہم نہیں کررہے ہیں۔سیدعلی گیلانی نے کہا کہ ایاز اکبر کی اہلیہ کینسر کے مہلک مرض میں مبتلا ہیں اور ایسی حالت میں اُن کے شریک حیات کو انکے پاس ہونا چاہیے ، لیکن آزادی کا مطالبہ اور اپنے حقوق کی جنگ لڑنے والے ان حریت پسندوں کو دانستہ طورپر اپنے گھروں سے ہزاروں میل دور رکھ کر ایک مسلسل دردوکرب میں مبتلا کیاجارہا ہے ۔انہوں نے لبریشن فرنٹ کے چیئرمین محمدیاسین ملک 7اگست تک پھر سے این آئی کی تحویل میں دے کر تہاڑ جیل میں ان کی غیر قانونی نظربندی کو طول دینے پر افسوس کا اظہار کرتے ہوئے کہا کہ دنیا بھر میں لوگ اپنے جائز اور پیدائشی حقوق کے حصول کے لیے جمہوری طریقوں سے جدوجہد کرتے ہیں، تاہم جموں وکشمیر دنیا کا واحد خطہ ہے جہاں اپنے سلب شدہ حقوق کے خلاف آواز اٹھانے کی اجازت نہیں ہے۔ انہوں نے کہا کہ یاسین ملک کئی امراض میں مبتلا ہیں اور ان کی مسلسل نظربندی سے انکی تکالیف میں مزید اضافہ ہونے کا اندیشہ ہے۔ حریت چیئرمین نے تہاڑ جیل میں نظربند دختران ملت کی سربراہ آسیہ اندرابی کے گھر کواین آئی اے کی جانب سے ضبط کئے جانے کی شدید مذمت کرتے ہوئے کہا کہ خاتون راہنما کے گھر کو ضبط کر کے ان کے اہل خانہ کو بے گھر کردیاگیا ہے۔ انہوں نے کہا کہ آسیہ اندرابی کے غیر قانونی طورپر شوہر گزشتہ 27سال سے لاقانونیت کی زندہ مثال بنے ہوئے ہیں، لیکن قابض حکمران ان کے عزم وہمت سے اس قدر خوفزدہ ہیں کہ اب ان کے گھر کو بھی ضبط کر لیاگیا ہے ۔سیدعلی گیلانی نے اپنے نواسے انیس الاسلام کو دووبارہ این آئی اے کی طرف سے نئی دلی طلب کرنے پر شدید تشویش ظاہر کرتے ہوئے کہاکہ انکا عزم وحوصلہ کمزور کرنے کیلئے بھارتی حکمران انکے اہلخانہ کو نشانہ بنارہے ہیں اورانہیں ذہنی عذاب میں مبتلا کرنے کیلئے انکے بیٹوں ، دامادوں اور معصوم نواسوں کو بھی ظلم وبربریت کا نشانہ بنارہے ہیں۔تاہم انہوں نے کہاکہ ایسے اوچھے ہتھکنڈوں سے کسی قوم کو ماضی میں غلام بنایا جاسکا ہے اور نہ ہی ی مستقبل میں کبھی ایسا ممکن ہوگا۔
وائس آف ایشیا11جولائی 2019 خبر نمبر137

image_pdfimage_print
شیئرکریں
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •