Voice of Asia News

کشمیر ی عوام 13جولائی1931کے شہداء کی عظیم الشان قربانیو سمجھتے ہیں‘ صدر آزاد کشمیر

مظفرآباد( وائس آف ایشیا) صدر آزادجموں و کشمیر سردار محمدمسعود خان نے کہا ہے کہ کشمیر ی عوام 13جولائی1931کے شہداء کی عظیم الشان قربانیوں کو اپنے لیے مشعل راہ سمجھتے ہوئے آج بھی بھارت کی آٹھ لاکھ سے زائد قابض مسلح افواج کے خلاف بھرپور عزم اور حوصلہ کے ساتھ سینہ سپر ہیں اور بھارت سے آزادی اور اپنے پیدائشی حق حق خودارادیت کے حصول کی جنگ لڑ رہے ہیں، اب وہ دن زیادہ دور نہیں جب مقبوضہ ریاست جموں و کشمیر میں بھارتی ظلم و استبداد کی تاریک رات ڈھل جائے گی اور آزادی کا سورج طلوع ہو گا ۔13جولائی یوم شہدائے کشمیر کے موقع پر اپنے خصوصی پیغام میں صدر آزاد جموں کشمیر نے کہا کہ میں اس موقع پر اپنے مقبوضہ کشمیر کے بہن بھائیوں کویقین دلاتا ہوں کہ وہ آزادی کیلئے جو قربانیاں دے رہے ہیں و ہ ضرور رنگ لائیں گی ۔ کشمیر بھارت کے قبضہ سے آزاد ہو گا اور الحاق پاکستان کا نصب العین پورا ہو کر رہے گا ۔ صدر آزاد کشمیر نے کہا کہ جولائی 1931کے اوائل میں ایک حق گو مسلمان عبد القدیر نے سری نگر کی جامع مسجد میں نماز جمعہ کے اجتماع سے خطاب کے دوران ڈوگرہ سامراج کی ریاست جموں و کشمیر میں اسلام دشمن سرگرمیوں اور کشمیری مسلمانوں پر روا رکھے گئے مظالم کے حوالے سے ریاستی مسلمانوں کے جذبہ آزادی اور دین اسلام سے محبت کو جگایا اور ان کے احساس حمیت کو جھنجوڑا ۔ جس پر ڈوگرہ حکمرانوں نے عبد القدیر کو حق گوئی کی پاداش میں پابند سلاسل کر دیا اوراس کے خلاف مقدمہ قائم کر دیا گیا انہوں نے کہا کہ سری نگر کے مسلمان چاہتے تھے کہ مقدمہ کی کارروائی کھلے عام کی جائے جبکہ ڈوگرہ حکومت ہر گز یہ نہ چاہتی تھی کہ مقدمہ کے نام پر ہونے والے ڈرامہ کو دیکھا یا سنا جا سکے ۔ڈوگرہ حکومت کی اس بزدلانہ کاروائی کے خلاف لوگوں کی ایک بڑی تعداد نے سری نگر جیل کے احاطہ میں جمع ہو کر احتجاج کیا ۔ جبکہ ڈوگروں نے اس پر امن احتجاج کا جواب اندھا دھند فائرنگ سے دیا۔ جس کے نتیجے میں شمع حق کے بائیس پروانوں نے جام شہادت نوش کیا اور کشمیری مسلمانوں کے سامنے ایک ایسی روشن مثال قائم کر دی جس پر عمل کرتے ہوئے کشمیر ی مسلمان آج بھی اپنی جان و مال کی لازوال قربانیاں دیکر داستان شجاعت رقم کر رہے ہیں ۔

image_pdfimage_print
شیئرکریں
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •