Voice of Asia News

سعودی عرب نے ہمیشہ لبنان کے ہر مکتبہ فکر کا ساتھ دیا ہے،سابق لبنانی وزیراعظم

بیروت ( وائس آف ایشیا)لبنان کے سابق وزیر اعظم فؤاد السنیورہ نے کہا ہے کہ ایران، لبنان کو ریت کی بوری کی طرح استعمال کرنا چاہتا ہے تاکہ خود کو اس کے پیچھے چھپا سکے۔غیرملکی خبررساں ادارے کے مطابق سعودی فرمانروا شاہ سلمان بن عبدالعزیز کے ساتھ دو لبنانی سابق وزائے اعظم تمام سلام ونجیب میقاتی کے ہمراہ ملاقات کے بعد عرب ٹی وی کو انٹرویومیں کہناتھا کہ ہمیں ریاست لبنان اور حزب اﷲ کے درمیان مناسب فاصلہ رکھنے کے طریقے سوچنا ہوں گے۔ان کا کہنا تھا کہ شاہ سلمان سے تینوں سابق لبنانی وزرائے اعظم کی ملاقات کا مقصد خادم الحرمین الشریفین تک پورے لبنان کی بات کرنا تھااس ملاقات کا مطلب یہ نہیں نکالا جا سکتا کہ ہم نے کسی خاص فرقہ کی بات کی۔فؤاد السنیورہ نے کہا کہ سعودی عرب نے ہمیشہ لبنان کے ہر مکتبہ فکر کا ساتھ دیا ہے۔ انھوں نے واضح کیا کہ لبنان کے بعض حلقے طائف میں طے پانے والے معاہدے میں تبدیلیوں سے متعلق بات کی جرات کر رہے ہیں۔ہم نے شاہ سلمان سے اس بات پر تبادلہ خیال کیا ہے کہ لبنان کے استحکام کی خاطر سعودی عرب بیروت کی ایک مرتبہ پھرمدد کے لیے آگے بڑھے۔ ہم نے سعودی فرمانروا کو بتایا کہ لبنان اس وقت انتہائی مشکل دور سے گذر رہا ہے۔فؤاد السنیورہ نے کہا کہ وہ سمجھتے ہیں کہ لبنان کو اپنی سمت درست کرنے کے لئے سعودی فرمانروا کے تعاون کی ضرورت ہے۔ انھوں نے کہا کہ ہمارے دورہ سعودی عرب کا مقصد لبنان کے موجودہ وزیر اعظم سعد الحریری کے نقطہ نظر کی حمایت کرنا ہے۔
وائس آف ایشیا16جولائی 2019 خبر نمبر91

image_pdfimage_print
شیئرکریں
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •