Voice of Asia News

صرف شہباز شریف نہیں پورے خاندان کے اثاثے منجمد ہوں گے

لاہور ( وائس آف ایشیا) نیب نے مسلم لیگ ن کے صدر اور اپوزیشن لیڈر قومی اسمبلی شہباز شریف کے اثاثے منجمد کرنے کا فیصلہ کیا تھا۔تاہم اب نیب نے شہباز شریف سمیت اُن کے اہل خانہ کے اثاثے بھی منجمد کرنے کا فیصلہ کر لیا۔میڈیا رپورٹس میں بتایا گیا ہے کہ سلمان شہباز، حمزہ شہباز اور ان کی اہلیہ کے اثاثے بھی منجمد کرنے کا فیصلہ کیا گیا ہے۔نصرت شہباز کے 22 کروڑ 56لاکھ 35 ہزار کے اثاثے منجمد کرنے کا فیصلہ کیا گیا ہے،جب کہ نصرت شہباز کئی قیمتی گاڑیوں، زیورات،پرائز بانڈ سمیت کئی کمپنیز کی شریک مالک ہیں۔حمزہ شہباز کے 41 کروڑ 11 لاکھ کے اثاثے منجمد کیے جائیں گے۔199بینک ٹرانزیکشنز میں سے 126 سلمان شہباز کے نام پر کی گئیں۔شہباز شریف کے خاندان کے خلاگ منی لانڈرنگ کے شاہد بھی ملے ہیں۔شہباز شریف کی چنیوٹ میں بھی زرعی زمین موجود ہے۔نصرت شہباز کے نام پر بھی کئی جائیدادیں موجود ہیں۔شہباز شریف کے اہل خانہ کے کئی بینک اکاؤنٹس بھی ہیں۔شہاز شریف نے نسرت شہباز کو تحفے میں کیی مکان بھی دئیے۔نیب نے اس حوالے سے تحقیقات کیں جس کے بعد نیب نے شہباز شریف کے اہل خانہ کے اثاثے بھی منجمد کرنے کا اصولی فیصلہ کر لیا ہے۔اس سے قبل نیب نے شہباز شریف کے خلاف بڑے کارروائی کرنے کا فیصلہ کرتے ہوئے ناجائز ذرائع سے حاصل اثاثوں کو منجمد کرنے کی کارروائی کا فیصلہ کیا تھا۔نیب نے شہباز شریف کے 96 ایچ ماڈل ٹاؤن لاہور، ڈنگہ گلی میں بنگلہ اور خیبرپختونخواہ میں رہائشی گھر کے خلاف خط لکھا۔ ذرائع نے بتایا کہ شہباز شریف کی قیمتی گاڑیوں کے خلاف بھی ضابطے کی کارروائی کے لیے خط تحریر کیا گیا۔ نیب ذرائع کے مطابق یہ تمام اثاثے شہباز شریف نے ٹی ٹی آمدنی سے خریدے گئے۔ ذرائع کا کہنا ہے کہ نیب لاہور پہلے مرحلے میں ناجائز اثاثے منجمد کرے گا

image_pdfimage_print
شیئرکریں
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •