Breaking News
Voice of Asia News

مریم نواز کی احتساب عدالت سے ریلیف ملنے پر نیب پر دلچسپ تنقید

اسلام آباد ( وائس آف ایشیا ) احتساب عدالت نے مریم نواز کے خلاف نیب کی جعلی ٹرسٹ ڈیڈ کی درخواست مسترد کر دی ہے،اسی حوالے سے اب مریم نواز نے سماجی رابطے کی ویب سائٹ ٹویٹر پر ٹویٹ کیا ہے اور کہا ہے کہ جیسے جج ارشد ملک کو میری پریس کانفرنس کے بعد اچانک یاد آیا کے انکو رشوت کی پیشکش کی گئی اور بلیک میل کیا گیا، اسی طرح نیب کی یادداشت ایک سال بعد لوٹ آئی اور اسکو یاد آیا کے مجھے مزید سزا ملنی چاہیے۔ہڑبڑاہٹ میں جج اور نیب اپنا ہی تماشہ بنا بیٹھے۔مریم نواز نے ایک اور ٹویٹ میں کہا کہ اصل بات یہ کہ جج ارشد ملک کی غلطی اور انسانی کمزوری کی سزا بےگناہ نواز شریف کو کیوں ملی؟ جج کے گناہ کی سزا نواز شریف کیوں بھگتے؟ جج کو ہٹا دیا گیا مگر اسکا غلط فیصلہ کیوں برقرار ہے؟ نواز شریف آج بھی کیوں قید خانے میں ہے؟ کوئی جواب اور جواز ہے اس بات کا؟یاد رہے کہ اسلام آباد کی احتساب عدالت نے ایون فیلڈ ریفرنس کیس میں سابق وزیرِاعظم نواز شریف کو 10 سال قید، ایک ارب 29 کروڑ روپے جُرمانہ، مریم نوازکو سات سال قید، 32 کروڑ روپے جُرمانہ، شریف فیملی کے ایون فیلڈ اپارٹمنٹس بحقِ سرکار ضبط کرنے کا حکم اور کیپٹن ریٹائرڈ صفدر کو بھی ایک سال قید بامشقت کی سزا سنائی تھی۔جس کے بعد سابق وزیراعظم نواز شریف، ان کی بیٹی مریم نواز اور داماد کیپٹن (ر) صفدر کی جانب سے ایون فیلڈ ریفرنس میں سزا کا فیصلہ اسلام آباد ہائیکورٹ میں چیلنج کیا گیا تھا۔ بعد ازاں گذشتہ برس ستمبر میں اسلام آباد ہائیکورٹ نے ایون فیلڈ ریفرنس میں احتساب عدالت کی جانب سے سابق وزیراعظم نواز شریف،ان کی صاحبزادی مریم نواز اور داماد کیپٹن (ر) صفدر کو سنائی گئی سزا معطل کرتے ہوئے تینوں کی رہائی کا حکم دے دیا تھا جس کے بعد انہیں اڈیالہجیل سے رہا کردیا گیا تھا۔

image_pdfimage_print
شیئرکریں
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •