Voice of Asia News

جذبہ ایمانی سے لیس افواج پاکستان:محمد قیصر چوہان

 
اس دھرتی کو بھلا کیا خطرہ جس پرجنم لینے والے سپوت اس کی عظمت پر سر کٹانے کاعزم لئے جوان ہوں،جہاں ہربچے کو حرمت دین پر فدا ہونے کا جذبہ گھٹی میں دیاجائے، جو لوگ خبر رکھتے ہوں کہ زندہ اقوام کی تاریخ شہداء کے لہو سے رقم ہوا کرتی ہے۔ جہاں کے پیرو جواں جانثاری کی ہر داد سے واقف ہوں، موت سے آنکھیں چار کرنا جن کا شغل ہے۔جو عیاری و مکاری کامقابلہ جو انمردی و بہادری سے کریں، وہ قافلہ بھٹک ہی نہیں سکتا جس کی رہنمائی سنت رسولﷺ کرے۔ میدان بدرجن کے اجداد کی سپاہ گری کاگواہ اور قسطنطنیہ عظمت کا راوی ہو جس کی ہیبت سے پہاڑوں کے دل دبل اٹھیں،اوردریا راستہ بدل لیں۔
جذبہ ایمانی سے لیس ا فواج پاکستان کا شمار اپنی مہارت، کارکردگی اور صلاحیت کی بنیاد پر دنیا کی بہترین افواج میں ہوتا ہے۔ پاک فوج کے جوان اور آفیسرز اپنی بہادری اور خدا داد صلاحیتوں کی وجہ سے دُنیا بھر میں مشہور ہیں۔یہ جذبہ شہادت ہی ہے جو پاک فوج کو دُنیا کی دیگر افواج سے ممتاز بناتا ہے ۔یہ بہادر سپوت ملکی بقاء اور سلامتی کیلئے اپنی جانوں کا نذرانہ دے کر پوری قوم کو زندگی دیتے ہیں۔کسی شاعر نے بل لکل ٹھیک کہا ہے ،شہید کی جو موت ہے ،وہ قوم کی حیات ہے۔ہماری بہادر، جفاکش،نڈر ا فواج نے پاکستان کی سلامتی اور دہشت گردی کے خاتمے کیلئے جو گراں قدر قربانیاں دی ہیں ان کو پوری دُنیا سراہتی ہے۔ پاک فوج نہ صرف ملکی سرحدوں کی پاسبان ہے بلکہ اندرون ملک بھی امن و امان کو یقینی بنانے، سیلاب، زلزلہ سمیت مصیبت کی ہرگھڑی میں وہ سب سے آگے رہی ہے۔ بیرونی اور اندرونی محاذوں پر اس نے اپنے فرائض بہترین انداز میں سرانجام دیئے ہیں۔ یہ پاک فوج کے جوان ہی ہیں جو سیاچن جیسے کٹھن محاذ پر جہاں ہر قدم پر موت منہ کھولے کھڑی ہے اپنی جانوں پر کھیل کر ملک و قوم کی حفاظت کر رہے ہیں۔ پاک فوج کے جوانوں کی جگ رتوں کے باعث ہی قوم میٹھی نیند سوتی ہے۔’’پاک فوج کا نصب العین‘‘ ایمان، تقویٰ اورجہاد فی سبیل اﷲ‘‘ ہے۔ یہ دنیا کی واحد اسلامی فوج ہے جو ایٹمی قوت سے مسلح ہے۔ پاک فوج کا قیام 14 اگست 1947 کوپاکستان کی آزادی کے ساتھ ہی عمل میں آگیا تھا۔
پاک فوج کی 72 برس کی تاریخ اس حقیقت کو بھی اُجاگر کرتی ہے کہ اس نے وطن عزیز کی سلامتی، خود مختاری اور آزادی کو یقینی بنانے کیلئے دفاعی اعتبار سے گرانقدر خدمات انجام دیں۔ صرف یہی نہیں پاک فوج نے دنیا کے مختلف علاقوں میں امن قائم کرنے کی خاطر اقوام متحدہ کے امن دستوں میں شامل ہو کر قابل تحسین کردار ادا کیا۔ اسی طرح جب 9/11 کے بعد دہشت گردی کے خلاف عالمی جنگ کا طبل بجایا گیا تو پاک فوج اس کے سرخیل دستے میں شامل ہوئی چنانچہ گزشتہ 17 برس کے عرصہ میں پاک فوج نے جان و مال کی ناقابل تلافی قربانیاں دے کر دہشت گردوں اور انتہا پسندوں کی کمر توڑ کر رکھ دی ہے۔ اسی باعث نہایت وثوق سے کہا جاتا ہے کہ پاک فوج کا مستقبل نہایت تابناک ہے۔ اس کا اندازہ یوں کیا جا سکتا ہے کہ مسلح افواج کے شعبہ تعلقات عامہ کے مطابق برطانوی فوج کے چیف آف جنرل سٹاف نکولس پیٹرک نے پاک فوج کے کیڈٹ شہروز شاہد کوبہترین ٹریننگ، تعلیم، جسمانی فٹنس پر برطانیہ کی جانب سے اوورسیز انٹرنیشنل میڈل دیا۔ پاک فوج کے مستقبل کیلئے ایک ایسی علامت ہے جو ایک طرف تو امن اور بقاء کی ضمانت کا درجہ رکھتی ہے اور دوسری طرف یہ دہشت گرد اور انتہا پسند عناصر سمیت پاک سرزمین کے دشمنوں کیلئے ایک للکار بھی قرار دی جا سکتی ہے۔ بین الاقوامی برادری کو خوب احساس بلکہ یقین ہے کہ پاکستان نا صرف جنوبی ایشیا بلکہ دنیا بھر میں قیام امن کی خاطر نتیجہ خیز کردار ادا کر رہا ہے۔ اس سلسلے میں وطن عزیز کی سیاسی اور عسکری قیادت میں مکمل ذہنی ہم آہنگی موجود ہے اور عوام اپنی فوج کے پرجوش حامی ہیں۔ ستر سالہ تاریخ کی جھولی میں واحد ادارہ فوج ہی تو ہے جس پر فخر کیا جا سکتا ہے۔ اس فخر کے کئی ایک پہلو ہیں ان پہلوؤں میں خدمات بھی ہیں ، ترقی بھی، انسانی خدمات بھی، قومی جذبہ بھی، فوجی مہارت بھی، قربانیوں کی لازوال داستانیں بھی۔
موجودہ دورکے چیلنجز اورحالات اس امرکی متقاضی ہیں کہ ہم ملکی دفاع کیلئے ہر دم تیار اورچاہک وست رہیں۔ مجھے یقین اوراعتماد ہے کہ پاکستان آرمی، بحری اور فضائی افواج قوم کے شانہ بشانہ نا صرف ملک کا دفاع انتہائی موثرانداز میں کر سکتی ہیں بلکہ اندرونی اور بیرونی سطح پر در پیش چیلنجز سے بھی بطریق احسن نمٹ کر سکتی ہیں۔ پاکستان ایئر فورس اس وقت مضبوط، طاقتور اورچوکس ہے۔ اﷲ تعالیٰ کی مہربانی اورپاکستانی عوام کی دعاؤں سے مادر وطن کی فضائی سرحدوں کی حفاظت کیلئے پاک فضائیہ ہمہ وقت چوکس اور مستعد ہے۔پاکستان نیوی کو اپنے محدودوسائل کے باوجود کسی بھی ہنگامی صورتحال سے نمٹنے کیلئے تیار رہنے کی ضرورت ہے۔ اﷲ تعالیٰ کے فضل و کرم سے پاکستان نیوی آج دشمن کے ہرحملے کو ناکام بنانے، مادر وطن کی سمندری حدود کادفاع اور ہر قسم کے چیلنجز کامقابلہ کرنے کیلئے ہمہ وقت تیار ہے۔ دفاعی میدان میں جدید ٹیکنالوجی کی ترقی کو مد نظر رکھتے ہوئے پاکستان نیوی دفاع پیداوار کے میدان میں ایک موثر خود انحصاری کی پالیسی پر گامزن ہے۔اس نے مقامی طورپر جدید ٹیکنالوجی سے آراستہ آبدوزیں، میزائل بوٹس اورمائن ہنٹرز بنانے میں بڑی کامیابی حاصل کی ہے اوراس طرح پاکستان کی دفاعی اور اقتصادی ترقی میں اہم کردار ادا کیا ہے۔
مجھے یقین واثق ہے کہ افواج پاکستان آزمائش کی ہر گھڑی میں لگن اور پیشہ ورانہ مہارت کاشاندار مظاہرہ کرتے ہوئے ہر طرح کی جارحیت کو ناکام بنانے کیلئے قوم کی توقعات پر پوری اتریں گی۔ آج پاکستان کا دفاع ہم سے تقاضا کرتا ہے کہ ہم وطن کو مضبوط و مستحکم بنانے کیلئے عوام کو مضبوط و مستحکم بنائیں۔ اندرونی اتحان قائم کریں اورعوام اور اکابر پاکستان کے درمیان محبت، ایثار اور والہانہ پن کے اس جذبے کو تازہ کریں جو دفاع پاکستان کی بنیادی ضرورت ہے۔ کسی بھی فوجی حکمران سے شکایات ہو سکتی ہے، اس کی پالیسی سے اختلاف بھی کیاجا سکتا ہے لیکن فوج بحیثیت ادارہ ہماری سرحدوں کی محافظ ہے لہٰذا اس کی عزت و احترام ہم سب پر واجب ہے۔
اﷲ تعالیٰ پاکستان کوقائم و دائم رکھے……آمین
qaiserchohan81@gmail.com

image_pdfimage_print
شیئرکریں
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •