Voice of Asia News

مقبوضہ کشمیر جانے کیلئے ڈاکٹروں نے بھارت سے ویزا مانگ لیا

 
اسلام آباد(وائس آف ایشیا ) پاکستانی ڈاکٹروں کے نمائندگان نے بھارتی ہائی کمیشن سے مقبوضہ کشمیر تک انسانیت کی بنیاد پر ادویات کے ساتھ رسائی دینے کی درخواست کردی۔میڈیا رپورٹ کے مطابق یونیورسٹی آف ہیلتھ سائنسز (یو ایچ ایس) کے پروفیسر ڈاکٹر جاوید اکرم نے میڈیاسے گفتگو کرتے ہوئے کہا کہ ‘میں نے بھارتی ہائی کمیشن کے فرسٹ سیکریٹری (اکانومکس اینڈ کامرس) اشیش شرما سے ملاقات کی اور انہیں مقبوضہ کشمیر جانے کے خواہش مند 21 ڈاکٹروں کو ویزا جاری کرنے کی درخواست کی تاکہ وہاں مسلمان، ہندو، سکھ برادری وغیرہ کو علاج فراہم کیا جاسکے جو مہینے بھر سے جاری مقبوضہ وادی میں کرفیو کی وجہ سے صحت کی سہولیات سے محروم ہیں’۔ انہوں نے یہ بھی کہا کہ ان کی ٹیم اپنے ہمراہ ادویات بھی لے کر جائے گی۔اس ملاقات کے بارے میں ڈاکٹر جاوید اکرم نے کہا کہ فرسٹ سیکریٹری سے گفتگو کے دوران متعدد امور زیر بحث آئے جن میں صحت کے شعبے میں باہمی تعاون بھی شامل ہے۔ان کا کہنا تھا کہ ‘میں نے مقبوضہ کشمیر میں عوام کے ساتھ ہونے والے مظالم کا معاملہ بھی اٹھایا اور اشیش شرما سے 21 ڈاکٹروں کی ٹیم کو ویزا دلانے میں اپنا کردار ادا کرنے کا کہا، میں نے انہیں یہ بھی بتایا کہ ہم وہاں موبائل فونز، گھڑیوں کے بغیر جانے کو بھی تیار ہیں۔انہوں نے کہا کہ ‘ملاقات کے آغاز میں اشیش شرما کا کہنا تھا کہ مقبوضہ کشمیر میں انسانی بحران نہیں ہے اور صورتحال کنٹرول میں ہے تاہم اس پر میں نے کہا کہ ہمیں پھر وہاں جانے کی اجازت دی جانی چاہیے اور واپسی پر ہم پریس کانفرنس کرکے عوام کو بتائیں گے کہ کشمیر کی صورتحال ٹھیک ہے۔انہوں نے بتایا کہ ‘سفیر نے کہا کہ محفوظ راستہ فراہم کرنا ممکن نہیں جس پر میں نے کہا کہ ہم اس خطرے کا سامنا کرنے کو تیار ہیں اور یہ بات ہم آپ کو لکھ کر دیں گے کہ کسی بھی سانحے کی صورت میں ہم اس کے خود ذمہ دار ہوں گے۔پروفیسر ڈاکٹر جاوید اکرم کا کہنا تھا کہ ‘آغاز میں اشیش شرما اس خط کو لینے کو تیار نہیں تھے تاہم بعد ازاں انہوں نے اسے وصول کیا، ہم نے ان سے معاملہ بھارتی حکومت کے سامنے اٹھانے اور ۔ہمیں مقبوضہ کشمیر میں لائن آف کنٹرول کے ذریعے داخل ہونے کی اجازت دینے کا کہا اور یہ بھی کہا کہ انکار کی صورت میں ہم وہاں بغیر ویزا کے جانے کی کوشش کریں گے’۔بھارتی ڈپٹی ہائی کمشنر کو لکھے گئے خط کے مطابق مقبوضہ جموں و کشمیر میں ڈاکٹروں نے عوامی صحت کی صورتحال پر تشویش کا اظہار کیا۔
وائس آف ایشیا 6 ستمبر 2019 خبر نمبر7a

image_pdfimage_print
شیئرکریں
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •