Voice of Asia News

مقبوضہ کشمیر، امتحانی تاریخوں سے دسویں اور بارھویں جماعت کے طلباء پریشان

سرینگر (وائس آف ایشیا)مقبوضہ وادی کشمیر میں گزشتہ دو ماہ سے جاری نامسائد او غیریقینی صورتحال کے باعث تعلیمی اداروں میں بھی تعلیمی سرگرمیاں بالکل ٹھپ ہیں لیکن اسکے باوجود’’ کشمیر بورڈ آف سکول ایجوکیشن ‘‘ نے دسویں اور بارھویں جماعتوں کے سالانہ امتحانات کیلئے ڈیٹ شیٹ جاری کر دیے ہیں جسکی وجہ سے طلباء سخت پریشان ہیں۔ کشمیر میڈیاسروس کے مطابق دسویں جماعت کے امتحانات رواں ماہ کی 29تاریخ سے شروع ہو کر 16نومبر جبکہ 12ویں کے امتحانات 30اکتوبر سے شروع ہو کر 28نومبر کو ختم ہونگے ۔سالانہ امتحانات میں میٹرک کے 65ہزار جبکہ بارھویں جماعت کے 48ہزار طلباء شرکت کر رہے ہیں۔ طلباء اورانکے والدین نے امتحانات کے انعقاد کیلئے جاری کر دہ دیٹ شیٹوں پر سخت حیرانگی کا اظہار کیا ہے ۔ دسویں جماعت کی ایک طالبہ نے اپنا نام ظاہر نہ کرنے کی شرط پر بتایا کہ جاری کردہ ڈیٹ شیٹ نے انکی ذہنی پریشانی میں مزید اضافہ کر دیا ہے ۔ طالبہ نے کہا کہ انہوں نے نصف سے بھی کم نصاب مکمل کیا ہے۔امتحانی پرچے کیسے ہونگے اور کتنے نصاب پر مشتمل ہونگے انہیں کچھ پتہ نہیں ہے۔ ایک اور طالب علم نے کہا کہ وہ حیران ہے کہ وہ امتحان کس چیز کا دیں گے اور کس طرح دیں گے۔ طالب علم نے کہا کہ وہ دو ماہ سے گھروں میں بیٹھے ہیں اور آدھا نصاب بھی مکمل نہیں کیا ہے۔ 12جماعت کے ایک طالب علم نے کہا کہ انہوں نے پریکٹیکل بھی نہیں کیے ہیں اور بورڈ نے ڈیٹ شیٹ جاری کر دیا جس کا کوئی جواز نہیں ۔
وائس آف ایشیا12اکتوبر2019 خبر نمبر82

image_pdfimage_print
شیئرکریں
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •