Voice of Asia News

برطانیہ میں منعقدہ سیمینار میں کشمیری خواتین کی حالت زار کو اجاگر کیاگیا

لندن( وائس آف ایشیا)برطانیہ کے شہر یارک شائر میں ’’خواتین پر تشدد کا خاتمہ‘‘کے زیرعنوان ایک سیمینار منعقد ہوا جس میں خاص طورپر کشمیری خواتین پر توجہ مرکوز کی گئی اور اس کا اہتمام کشمیر ویمنز موومنٹ برطانیہ و یورپ اور شیفیلڈ سسٹرز فار کشمیرنے ساؤتھ یارک شائر کے علاقے شیفیلڈ میں ٹاؤن ہال کے کونسل چیمبرز میں کیا تھا۔ کشمیرمیڈیا سروس کے مطابق سیمینار میں سیاسی رہنماؤں ، تارکین وطن کشمیریوں کی قیادت، کونسلرز، انسانی حقوق کے کارکنوں، ججزاور صحافیوں نے شرکت کی۔ کشمیر ویمنز موومنٹ برطانیہ و یورپ کی چیئر پرسن شمیم شال نے شرکاء کو مقبوضہ کشمیر میں بھارت کی فسطائی حکومت کی طرف سے کئے گئے حالیہ غیر قانونی اقدامات کے نتیجے میں پیدا ہونے والے مسائل سے آگاہ کیا۔ انہوں نے کہاکہ بھارتی حکومت نے مقبوضہ کشمیر کی معیشت تباہ کرکے اور بھارتی شہریوں کو سہولیات فراہم کرکے علاقے میں آبادی کا تناسب تبدیل کرنے کے منصوبے پر عملدر آمد شروع کردیا ہے تاکہ جموں وکشمیر کی مسلم اکثریت کو اقلیت میں تبدیل کیا جائے۔ بیرسٹر عبدالمجید ترمبو نے سیمینار سے خطاب کرتے ہوئے تنازعہ کشمیر کے قانونی پہلو پر روشنی ڈالتے ہوئے کہاکہ کشمیر ی عوام حق خودارادیت کے لئے جدوجہد کررہے ہیں جس کا وعدہ ان سے اقوام متحدہ کی قراردادوں میں کیا گیا ہے۔ پروفیسر نذیر احمد شال نے کہاکہ بھارت اور پاکستان کے درمیان دوطرفہ معاہدوں سے حق خودارادیت کے بارے میں بین الاقوامی قانون پر کوئی اثر نہیں پڑے گا اور کشمیری عوام حق خودارادیت کے حصول کے لیے جدوجہد کررہے ہیں۔ سیمینار سے شیفیلڈ سسٹرز فارکشمیر کی چیئر پرسن ظاہرہ ناز، وائس چیئر پرسن نگہت بشارت، پارلیمانی امیدواران Gill Furniss, Clive Betts, Paul Blomfield,ٹریڈ یونینسٹMaxine Bowler،Dr Madeliene Scherb،ڈاکٹر نگہت افتخار،فلسطین کے شاہد عبدالسلام، کشمیر سوسائٹی کے رانا شمع نذیر اورتحسین کوثر نے بھی خطاب کیا۔ سیمینار کے موقع پر آرگنائزیشن آف کشمیر کوئلیشن نے ایک نمائش کا بھی اہتمام کیا جس میں کشمیریوں پرڈھائے جانے والے بھارتی مظالم کو اجاگر کیاگیا۔
وائس آف ایشیا2 0دسمبر2019 خبر نمبر90

image_pdfimage_print
شیئرکریں
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •