Voice of Asia News

وزیر خارجہ کی سری لنکا کے نو منتخب صدر سے ملاقات ،دو طرفہ تعلقات پر تبادلہ خیال

اسلام آباد ( وائس آف ایشیا)وزیر خارجہ شاہ محمود قریشی نے کہا ہے کہ پاکستان اور سری لنکا کے مابین باہمی تجارت اور سرمایہ کاری کے فروغ کیلئے وسیع مواقع موجود ہیں جن سے استفادہ دونوں ممالک کے لیے سود مند ثابت ہو گا۔وزیر خارجہ مخدوم شاہ محمود قریشی وفد کے ہمراہ صدارتی سیکرٹریٹ کولمبو گئے ۔وزیر خارجہ نے سری لنکا کے نو منتخب صدر گو ٹابایا راجا پاکسا سے ملاقات کی ۔دوران ملاقات دو طرفہ تعلقات، خطے کی صورتحال سمیت باہمی دلچسپی کے امور پر تبادلہ خیال کیا گیا ۔ڈی جی جنوبی ایشیا و ترجمان وزارت خارجہ ڈاکٹر محمد فیصل، سری لنکا میں پاکستانی ہائی کمیشن کے سینئر حکام بھی اس موقع پر موجود تھے ۔وزیر خارجہ نے صدر گو ٹابایا راجا پاکسا کو پاکستان کی قیادت اور عوام کی طرف سے سری لنکا کے ساتویں صدر منتخب ہونے پر دلی مبارکباد پیش کی۔وزیر خارجہ نے صدر سری لنکا کو صدر پاکستان عارف علوی کی جانب سے تہنیتی خط بھی دیا جس میں صدر سری لنکا کو مبارکباد کے ساتھ ساتھ دورہ ء پاکستان کی دعوت دی گئی ہے ۔شاہ محمود قریشی نے کہا کہ ہمارے لیے یہ امر بھی قابل مسرت ہے کہ 70 کی دہائی میں پاکستان سے عسکری تربیت حاصل کرنے والی شخصیت، آج سری لنکا کی صدارت کا منصب سنبھالے ہوئے ہے ۔انہوں نے کہا کہ ہمیں یقین ہے کہ آپ کے منصب سنبھالنے کے بعد پاکستان اور سری لنکا کے درمیان برادرانہ تعلقات مزید مستحکم ہونگے ۔انہوں نے کہا کہ سری لنکا کی عوام نے جس طرح دہشت گردی کے عفریت کا ڈٹ کر مقابلہ کیا ہے وہ قابل تحسین ہے ۔انہوں نے کہا کہ خشک سالی ہو، سیلاب ہو یا کسی قدرتی آفت کا سامنا ہو تو پاکستان کی عوام اپنے سری لنکن بھائیوں کے ساتھ شانہ بشانہ کھڑے نظر آئے ۔وزیر خارجہ نے سری لنکن صدر کو پاکستان کی طرف سے شروع کی گئی معاشی سفارتکاری سے آگاہ کرتے ہوئے کہا کہ پاکستان اور سری لنکا کے مابین باہمی تجارت اور سرمایہ کاری کے فروغ کیلئے وسیع مواقع موجود ہیں جن سے استفادہ دونوں ممالک کے لیے سود مند ثابت ہو گا ۔سری لنکن صدر نے وزیر خارجہ مخدوم شاہ محمود قریشی کو سری لنکا آمد پر خوش آمدید کہتے ہوئے تہنیتی پیغامات اور دورہ ء پاکستان کی دعوت پر صدر پاکستان اور پاکستان کی اعلیٰ قیادت کا خصوصی شکریہ ادا کیا۔
وائس آف ایشیا2 0دسمبر2019 خبر نمبر94

image_pdfimage_print
شیئرکریں
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •