Voice of Asia News

اقوام ِمتحدہ کےامن مشن میں تعینات پاکستانی خواتین نے دنیا بھر میں پاکستان کا نام بلند کردیا

نیویارک (وائس آف ایشیا)اقوام ِمتحدہ کےامن مشن میں تعینات پاکستانی خواتین نے دنیا بھر میں پاکستان کا نام بلند کردیا ، امن مشن میں پاکستانی خواتین فوجی، پولیس افسر، سافٹ ویئرانجینئر کے طور پر کام کر رہی ہیں۔تفصیلات کے مطابق پاکستانی خواتین دنیا میں فروغ امن میں پیش پیش ہیں، اقوام متحدہ میں پاکستانی خواتین پیس کیپرزکی کارکردگی نےدھاک بٹھا دی ، پاکستانی خواتین کے15 رکنی دستے کوگزشتہ ہفتے تمغوں سے نوازا گیا۔پاکستانی خواتین اقوام متحدہ امن مشن کانگو میں امن کےلیےسرگرم عمل ہیں، انھوں  نے نہ صرف ملک کا نام روشن اور مثبت تشخص اجاگر کیا بلکہ دنیاکےلیےپاکستانی باہمت خواتین جرات وبہادری کی عظیم مثال بن کرابھریں۔سیکرٹری جنرل اقوام متحدہ کا  16 فروری سے 4روزہ دورہ پاکستان بھی ان خدمات کااعتراف ہے۔پاکستانی خواتین نےاقوام متحدہ کےجھنڈے کیساتھ سبز ہلالی پرچم بھی سربلند کیا، امن مشن دستےمیں شامل پاکستانی خواتین فوجی،پولیس افسر، سافٹ ویئرانجینئر ، ماہرنفسیات، ڈاکٹروں اور صنفی مشیر کےطور پر خدمات انجام دے رہی ہیں۔اقوام متحدہ کی چھتری تلے تاحال 78 پاکستانی خواتین امن مشن کاحصہ ہیں ، پاکستان 19 جون 2019 میں کانگومیں خواتین دستےتعینات کرنے والاپہلا ملک ہے ، کانگومیں 2خواتین دستےتعینات ہیں جبکہ وسطی جمہوریہ افریقہ میں مارچ تک دستہ تعینات ہوگا۔اقوام متحدہ امن مشن میں ابتک 450 خواتین امن خدمات انجام دے چکی ہیں ، میجر سامیہ رحمان کوکانگو میں بہترین کارکردگی پر اقوام متحدہ تعریفی سندعطا کی گئی جبکہ میجرعروج عارف کو5 گھنٹے میں25 کلومیٹرطے کرنے پر پہلی ڈینکن مارچ خاتون کااعزاز حاصل ہیں اور میجر سادیہ دو سال کیلئے اقوام متحدہ تربیتی ٹیم کا قابل فخر حصہ ہیں ۔عالمی امن و استحکام مرکزسے 39 خواتین اور عالمی اداروں سے23 خواتین  امن مشن اہلکاروں نے تربیت حاصل کی۔ایلس ویلز نے بھی پاکستانی خواتین کی تعریفوں کے پل باندھ دیے اور پاکستانی خواتین کےفروغ امن کےلیےکردار کو خراج تحسین پیش کرتے ہوئے کہا پاکستانی خواتین کاکردارنہایت متاثر کن،امن کےلیےخدمات کلیدی ہیں۔

image_pdfimage_print
شیئرکریں
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •