Voice of Asia News

مقبوضہ جموں وکشمیر,بھارتی فوج میں بھی کورونا وائرس پھیلنا شروع ہوگیا

لداخ (وائس آف ایشیا)مقبوضہ جموں وکشمیرمیں لداخ میں ، ایک بھارتی فوجی کاکورونا وائرس ٹیسٹ مثبت آیا ہے۔جس کے بعد ، اس کے 10 ساتھیوں کو بدھ کے روز قرنطینہ میں منتقل کر دیا گیا ہے۔ وزارت داخلہ نے سی اے پی ایف سے کہا ہے کہ فوجیوں کی چھٹیاں بند کردیں۔ دریں اثنا ، لداخ رجمنٹٹل سنٹر میں تقریباً800 افراد کو لاک ڈاون میں رکھا گیا ہے۔ہندوستانی فوج کے سینئر ذرائع نے تصدیق کرتے ہوئے کہا کہ لداخ اسکاوٹس سے تعلق رکھنے والے ایک لانس نائک میں کوویڈ۔19 کا مثبت ٹیسٹ رپورٹ ہوا ہے۔ رپورٹ میں بتایا گیا ہے کہ متاثرہ فوجی کے والد زیارات کے لئے ایران گئے تھے اور 27 فروری کو واپس آئے۔ ان کے والد کو 29 فروری کو لداخ ہارٹ فاونڈیشن میں داخل کرایا گیا اور 6 مارچ کو کووڈ 19 کے لئے مثبت پایا گیا۔جس کے بعد انہیں ایس این ایم (نم نوربو میموریا)میں آئسولیشن میں رکھا گیا۔متاثرہ فوجی 25 فروری سے یکم مارچ تک چھٹی پر تھا اور 2 مارچ کو واپس آیا۔اس فوجی کو بھی 7 مارچ کو قرنطینہ میں رکھا گیا جہاں16 مارچ کو اس کا ٹیسٹ مثبت ہوا۔اب وہ ایس این ایم اسپتال میں آئسولیشن میں ہے۔ اسی اسپتال میں اس کی بہن ، بیوی اور دو بچے بھی ہیں۔دریں اثنا ، لداخ میں ایسے مریضوں کی تعداد چار ہوگئی ہے۔حکام نے دنیا بھر میں کورونا وائرس پھیلنے کے پیش نظر اس علاقے میں غیر ملکیوں کے داخلے پر پابندی عائد کردی ہے۔ لیفٹیننٹ گورنر کے مشیر بصیر احمد خان نے اس سلسلے میں احکامات جاری کردیئے ہیں۔ سیکرٹری سیاحت ، ڈائریکٹر سیاحت اور ڈی سی سے کہا گیا ہے کہ وہ فوری طور پر آرڈر پر عمل درآمد کو یقینی بنائیں۔دنیا بھر میں متاثرہ افراد کی تعداد ایک لاکھ 90 ہزار سے تجاوز کرگئی ہے۔ بھارتی فوج میں کرونا وائرس کا اس حد تک خوف پایا جاتا ہے کہ افسران نے سپاہیوں کا اپنے دفاتر میں داخلہ بند کر دیا ہے، بھارتی فوج کے سپاہی چھٹی لینے کے لئے افسران کے پاس جاتے ہیں تو انہیں دروازے سے ہی باہر بھجوا دیا جاتا ہے۔
وائس آف ایشیا18مارچ2020 خبر نمبر93

image_pdfimage_print
شیئرکریں
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •