Voice of Asia News

بھارت جموںوکشمیر کی مسلم اکثریتی حیثیت تبدیل کرنا چاہتا ہے، صمد انقلابی

سرینگر(وائس آف ایشیا )غیرقانونی طورپربھارت کے زیرقبضہ جموں و کشمیر میںاسلامی تنظیم آزادی جموں وکشمیر کے چیئرمین عبدالصمد انقلابی نے کہاہے کہ ہندو انتہاپسند تنظیم راشٹریہ سویم سیوک سنگھ کی سرپرستی میں قائم نریندر مودی کی فسطائی بھارتی حکومت نے غیر انسانی ہتھکنڈوں کے ذریعے جموںو کشمیر کے لوگوں کو ان کی شناخت سے محروم کرنے کی سازش رچا ئی ہے اور وہ جموںوکشمیر کی مسلم اکثریتی حیثیت کو تبدیل کرنا چاہتی ہے۔کشمیر میڈیا سروس کے مطابق عبدالصمد انقلابی نے سرینگر میں جاری ایک بیان میں کہاکہ جموں وکشمیر میں نئے ڈومیسائل قوانین کا نفاذ اس مذموم بھارتی منصوبے کا حصہ ہے جس کے تحت وہ جموں وکشمیرکے لوگوں کی صدیوں پرانی شناخت اور تہذیب مٹانا چاہتا ہے۔انہوں نے کہاکہ جموں کشمیر کو ہندو اکثریتی ریاست میں تبدیل کرنے کے لئے اب تک لاکھوں غیر ریاستی باشندوں کو ڈومیسائل سرٹیفکیٹس جاری کئے گئے ہیں۔انہوں نے کہاکہ بھارتیہ جنتا پارٹی کہہ رہی ہے کہ وہ جموںو کشمیر میں قبل از اسلام کی ہندو تہذیب واپس لائے گی اور وہ اس مقصد کے لئے مقبوضہ جموںو کشمیر میں مسلمانوں کی نسل کشی کررہی ہے ۔ انہوں نے کہاکہ بھارت جموں وکشمیر میں اہم مقامات کے مسلمان نام تبدیل کر کے ان کے ہندو نام رکھ رہا ہے جو جموں وکشمیر کو ہندو تہذیب کی طرف دھکیلنے کے منصوبے کا حصہ ہے۔ عبدالصمد انقلابی نے انسانی حقوق کے عالمی اداروں سے اپیل کی کہ وہ کشمیریوں کے حقوق کے لیے اپنی آواز بلند کریں اور جموں وکشمیر میں عالمی قوانیں کی دھجیاں اڑانے پر بھارت کو عالمی عدالت انصاف میں کھڑاکریں۔

image_pdfimage_print
شیئرکریں
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے