Voice of Asia News

روس:کورونا وائرس سینی ٹائزر پینے سے سات لوگ جاں بحق

ماسکو(وائس آف ایشیا )جب سے کورونا آیا ہے تو دو چیزیں ہماری نارمل زندگی کا لازمی حصہ بن کر رہ گئی ہیں۔ایک تو فیس ماسک اور دوسرا ہینڈ سینی ٹائزر۔اس سے قبل تو یہ دونوں چیزیں ہم نے ڈاکٹرز اور دوسرے طبی عملے کے استعمال کے نام کر رکھی تھیں مگر اب ہر شخص کے یہ استعمال کی چیز بن چکے ہیں۔تاہم کچھ لوگوں نے سینی ٹائزر کو ہاتھوں پر لگانے کی بجائے پینا بھی شروع کر دیا اور سینی ٹائزر پینے کی وجہ سے سات لوگوں کی موت واقع ہو گئی جبکہ دو لوگ ابھی بھی موت کے بستر پر ایڑیاں رگڑ رہے ہیں۔یہ واقعہ روس کے علاقے یاکوتیہ میں پیش آیا ہے جہاں رات گئے جاری ایک پارٹی میں مشروب کم پڑ جانے کی بنا پر تماشا کرنے والے 9افراد نے کورونا وائرس سے بچا کے لیے لایا گیا سینی ٹائزر مشروب کی جگہ پی لیا جس کے بعد ان کی حالت غیر ہو گئی۔ان 9افراد میں سے سات افرد جان سے ہاتھ دھو بیٹھے جبکہ باقی کے دو افراد اسپتال کے انتہائی نگہداشت کے وارڈ میں داخل اور زندگی موت کی کشمکش میں مبتلا ہیں۔سب سے پہلے وفات پانے والے تین لوگوں میں ایک 49سالہ خاتون تھیں جبکہ دو مرد جن میں سے ایک 27اور دوسرا 59سال کی عمر میں بتایا گیا ہے۔یہ تینوں افراد موقعہ پر ہی زندگی کی بازی ہار گئے تھے جبکہ مزید لوگ ایک دن اسپتال میں گزارنے کے بعد موت کے منہ میں چلے گئے۔ڈاکٹرز کا کہنا تھا کہ آغاز میں ہم نے اندازہ لگایا کہ زہریلا مشروب پینے کی بنا پر ان کی حالت غیر ہوئی اور یہ موت کے منہ میں چلے گئے اور بعدازاں ان کی حالت سے لگا کہ انہیں زہر دیا جا سکتا ہے مگر جب ٹیسٹ رپورٹ سامنے آئی تو سبھی حیران رہ گئے کیونکہ ان لوگوں نے کورونا وائرس سے بچا کے لیے استعمال ہونے والا ہینڈ سینی ٹائزر پی لیا تھا جو کہ کسی زہر سے کم نہیں۔لہذا اب طبی ماہرین نے سب کو متنبہ کیا ہے کہ ہینڈ سینی ٹائزر کو حلق میں انڈیلنے سے گریز کریں کیونکہ اس کے اندر موجود جراثیم کش محلول آپ کی جان بھی لے سکتا ہے۔

image_pdfimage_print
شیئرکریں
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے