Voice of Asia News

بھارتی فوجیوں کی مقبوضہ جموںوکشمیر میں محاصرے اورتلاشی کی کارروائیاں

سرینگر(وائس آف ایشیا ) غیر قانونی طور پر بھارت کے زیر قبضہ جموں و کشمیر میںبھارتی فوجیوں نے اتوار کو بارہمولہ ، پونچھ اور پلوامہ اضلاع میں بڑے پیمانے پر محاصرے اورتلاشی کی کارروائیاں کیں۔کشمیرمیڈیاسروس کے مطابق بھارتی فوج ، پیراملٹری سینٹرل ریزرو پولیس فورس اور پولیس کے سپیشل آپریشن گروپ کی مشترکہ ٹیموں نے سوپور کے علاقے وارپورہ اور مینڈھر کے متعدد گائوں کا محاصرہ کیا اور گھر گھر تلاشی لی۔فوجیوں نے پلوامہ کے علاقے چھت پورہ میں ایک کارروائی کے دوران حریت کارکن نثاراحمد راتھرسمیت کم از کم دو افراد کو گرفتار کیا۔بھارتی تحقیقاتی ادارے انفورسمنٹ ڈائریکٹوریٹ کے اہلکاروں نے بھارتی فوج اور پولیس اہلکاروں کی مدد سے اتوار کو سرینگر اور اسلام آباد اضلاع میں متعدد مقامات پرچھاپے مارے۔تحقیقات ایجنسی نے زرعی صنعت ، شہری تعمیرات اور رئیل اسٹیٹ کے کاروبار سے وابستہ سرینگر میں چھ اور اسلام آباد میں ایک مقامی تاجر کے دفتر پر چھاپے مارے۔امورکشمیر کے ماہرین نے بڑھتے ہوئے چھاپوں پر تبصرہ کرتے ہوئے کہا کہ مقامی تاجروں کو تنگ کرنے کا مقصد ان کی حوصلہ شکنی کرکے بھارت کے ہندو تاجروں کے لئے علاقے میں داخلے کی راہ ہموار کرنا ہے۔دریں اثناء کل جماعتی حریت کانفرنس کے ترجمان نے سرینگر میں جاری ایک بیان میں اقوام متحدہ کی جنرل اسمبلی میں حق خودارادیت کے بارے میں قرار داد پیش کرنے پر پاکستان کی تعریف کرتے ہوئے عالمی برادری پر زور دیا ہے کہ وہ کشمیری عوام سے کیاگیااپنا وعدہ پورا کرے۔یہ قرارداد اقوام متحدہ میں پاکستان کے مستقل مندوب منیر اکرم نے پیش کی تھی اور 71 ممالک کے مندوبین نے اس کی حمایت کی تھی۔ ترجمان نے مقبوضہ جموںوکشمیر میں جاری بھارتی ریاستی دہشت گردی کی مذمت کرتے ہوئے اقوام متحدہ سے اپیل کی کہ وہ تنازعہ کشمیر کو اپنی منظورشدہ قراردادوں اور کشمیری عوام کی امنگوں کی روشنی میں حل کرے۔ سول سوسائٹی فورم کے چیئرمین عبدالقیوم وانی نے سرینگر میں ایک بیان میں مختلف بھارتی جیلوں میںنظربند تمام کشمیری قیدیوں کی فوری رہائی کا مطالبہ کیاہے۔انہوں نے بھارتی جیلوں سے نظربند کشمیریوںکو سرینگر منتقل کرنے کا بھی مطالبہ کیا۔کشمیرمیڈیاسروس کے شعبہ تحقیق کی جانب سے اتوار کو جاری کی گئی ایک تجزیاتی رپورٹ میں کشمیر کاز کی غیر متزلزل حمایت کرنے پراسلامی تعاون تنظیم کو سراہاگیا۔ رپورٹ میں کہا گیا ہے کہ او آئی سی نے متعدد قراردادیں منظورکی ہیں جن میںکشمیریوں پر بھارتی مظالم کی مذمت کی گئی ہے اور اقوام متحدہ کی متعلقہ قراردادوں کے مطابق تنازعہ کشمیر کے پرامن حل کے عزم کا اظہارکیاگیاہیں۔رپورٹ میں تنظیم پر زوردیاگیا ہے کہ وہ مقبوضہ علاقے کی سنگین صورتحال پر غورکے لئے ہنگامی اجلاس بلائے۔ ضلع پونچھ میں نمبل چوکی پر تعینات بھاتی فوج کے ایک اہلکار نے اپنی سروس رائفل سے خود کو گولی مارکر خودکشی کرلی۔ اس واقعے سے جنوری 2007 سے مقبوضہ جموںوکشمیر میں خودکشی کرنے والے بھارتی فوجی اور پولیس اہلکاروں کی تعداد بڑھ کر 481 ہوگئی ہے۔

image_pdfimage_print
شیئرکریں
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے