Voice of Asia News

وزیراعظم نے وزیراعلیٰ گلگت بلتستان کے نام کی منظوری دے دی

اسلام آباد(وائس آف ایشیا)وزیراعظم عمران خان نے وزیراعلیٰ گلگت بلتستان کے نام کی منظوری دے دی، وزیراعلیٰ کیلئے ایڈووکیٹ خالد خورشید کا نام فائنل کرلیا گیا، وزیراعلیٰ کیلئے وزیراعظم کو پارٹی کی جانب سے دو نام بھجوائے گئے تھے۔ ذرائع کے مطابق وزیر اعظم عمران خان نے گلگت بلتستان میں حکومت سازی کا کام شروع کردیا ہے، وزیراعلیٰ گلگت بلتستان کی حتمی منظوری کیلئے دو ناموں میں سے بیرسٹر خورشید شاہ کا نام فائنل کرلیا گیا ہے۔گزشتہ روز تحریک انصاف نے گلگت بلتستان کے وزیراعلیٰ کے لیے 2 نام شارٹ لسٹ کیے تھے۔ بیرسٹر خالد خورشید اور فتح اللہ خان کے نام حتمی منظوری کیلئے وزیراعظم کو بجھوائے گئے تھے۔ اسی طرح الیکشن کمیشن نے ٹیکنوکریٹس اور خواتین کی مخصوص نشستوں کا بھی اعلان کردیا ہے۔جس کے تحت خواتین کی 6 مخصوص اور ٹیکنو کریٹس کی 3 نشستوں کا اعلان کیا گیا ہے۔الیکشن کمیشن گلگت بلتستان کی جانب سے جاری نوٹیفکیشن کے مطابق ٹیکنوکریٹس کی 3 میں سے 2 نشستیں پاکستان تحریک انصاف (پی ٹی آئی) کے جبکہ ایک نشست پیپلزپارٹی کے حصے میں آئی۔ گلگت بلتستان اسمبلی میں پی ٹی آئی کے اکبر علی اور فضل رحیم جبکہ پیپلزپارٹی کے غلام شہزاد ٹیکنوکریٹس نشست پر منتخب ہوئے ہیں۔ جبکہ خواتین کی 6 مخصوص نشستوں میں سے 4 پی ٹی آئی کو ملیں جبکہ ایک مخصوص نشست پیپلزپارٹی اور ایک ن لیگ نے حاصل کی ہے۔نوٹیفیکیشن کے مطابق خواتین کی مخصوص 4 نشستوں پر پی ٹی آئی کی کنیز فاطمہ، ثریا زمان، دلشاد بانو اور کلثوم الیاس منتخب ہوئیں، پیپلزپارٹی کی سعدیہ دانش اور ن لیگ کی صنم بی بی خواتین کی مخصوص نشستوں پر اسمبلی میں پہنچی ہیں۔ واضح رہے کہ گلگت بلتستان کی قانون ساز اسمبلی کے سرکاری نتائج کے مطابق تحریک انصاف نے 10 نشستوں پر کامیابی حاصل کی ہے جبکہ 6 کامیاب آزاد امیدواروں نے پی ٹی آئی میں شمولیت اختیار کی جس کے بعد پی ٹی آئی کی کل نشستوں کی تعداد 16 ہو گئی تھی ۔ اب خواتین کی 4 اور ٹیکنوکریٹس کی 2 نشستیں ملنے کے بعد پی ٹی آئی کو گلگت بلتستان اسمبلی کی کُل 33 میں سے 22 نشستیں مل چکی ہیں، جس کے بعد تحریک انصاف گلگت بلتستان میں حکومت بنانے کی واضح پوزیشن میں آ چکی ہے ۔

image_pdfimage_print
شیئرکریں
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے