Voice of Asia News

پاکستان کسی کیمپ پالیٹکس پر یقین نہیں رکھتا،سب کے ساتھ مل کر چلنا چاہتا ہے ۔ آرمی چیف 

اسلام آباد ( وائس آف ایشیا ) آرمی چیف جنرل قمر جاوید باجوہ کا کہنا ہے کہ پاکستان کسی کیمپ پالیٹکس پر یقین نہیں رکھتا، پاکستان سب کے ساتھ مل کر چلنا چاہتا ہے۔آرمی چیف جنرل قمر جاوید باجوہ نے سیکیورٹی ڈائیلاگ کی تقریب سے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ پاکستان یوکرین بحران کے حل کے لیے سیز فائر اور ڈائیلاگ پر یقین رکھتا ہے۔پاکستان روس اور یوکرین کے درمیان جنگ بندی کا بھی مطالبہ کر رہا ہے۔یوکرین کے خلاف روسی جارحیت افسوسناک ہے۔پاکستان چاہتا ہے یوکرین میں فوری جنگ بندی کی جائے۔پاکستان نے یوکرین میں انسانی امداد بھیجی ہے، اور مدد جاری رکھے گا۔پاکستان کسی کیمپ پالیٹکس پر یقین نہیں رکھتا، سب کے ساتھ مل کر چلنا چاہتا ہے۔ہم امریکا سے بھی بہترین تعلقات چاہتے ہیں، امریکا پاکستان کی سب سے بڑی ایکسپورٹ مارکیٹ ہیں۔ہمارے امریکا کے ساتھ تعلقات کی طویل تاریخ ہے۔آرمی چیف نے کہا کہ ہم چین اور امریکا دونوں سے اس طرح اپنے اچھے تعلقات بڑھانا چاہتے ہیں کہ ایک کی وجہ سے دوسرے سے تعلقات متاثر نہ ہوں۔ہمارے یورپی یونین اور جاپان کے ساتھ بھی اچھے تعلقات ہیں۔ آرمی چیف نے بھارت کی طرف سے میزائل گرنے پر تشویش کا اظہار کیا اور کہا بھارت کی طرف سے میزائل کا پاکستان میں گرنا انتہائی تشویش کا باعث ہے۔پاکستان نے بھارت کے میزائل گرنے کی تحققیقات کا مطالبہ کیا ہے۔بھارت پاکستان اور دنیا کو بتائے کہ اس کے ایٹمی اثاثے محفوظ ہیں ؟۔پاکستان چاہتا ہے کہ بھارت کے ساتھ آبی تنازعہ بھی ڈائیلاگ اور ڈپلومیسی سے حل ہوں۔ پاکستان مذاکرات پر یقین رکھتا ہے۔انہوں نے کہا ہم نے دہشتگردی کے خلاف بڑی کامیابی حاصل کی ہیں۔آخری دہشتگرد کے خاتمے تک کوشش جاری رہے گی۔انہوں نے کہا کہ خطے کی سیکورٹی اور استحکام ہماری پالیسی ہے۔پاکستان اہم اقتصادی خطے میں و اقع ہے۔پاکستان خطے کے مسائل کو شراکت داری سے حل کرنے پر گامزن ہے۔معیشت اور شہریوں کی سلامتی اہم ہے۔شہریوں کی خوشحالی اور سلامتی ہماری ترجیح ہے۔آرمی چیف نے کہا کہ مقاصد کے حصول کے لیے ملک کے اندر اور باہر امن کی ضرورت ہے،خطے کو دہشتگردی، موسمیاتی تبدیلی اور غربت جیسے چیلنجز کا سامنا ہے۔

image_pdfimage_print
شیئرکریں