Voice of Asia News

مسلح افواج کا موقف وہی ہے جو قومی سلامتی کمیٹی کے اعلامیے میں کہا گیا ؛ ترجمان پاک فوج

راولپنڈی ( وائس آف ایشیا )اپوزیشن جماعتوں کی جانب سے ملک کی موجودہ سیاسی صورتحال سے متعلق عسکری حکام سے وضاحت طلب کیے جانے پر ترجمان پاک فوج کا موقف آگیا۔ ہم نیوز کے مطابق ترجمان پاک فوج میجر جنرل بابر افتخار نے کہا ہے کہ مسلح افواج کا موقف وہی ہے جو قومی سلامتی کمیٹی کے اعلامیے میں کہا گیا ، معاملہ عدالت میں زیر سماعت ہے ، اس لیے معاملے پر زیادہ بات نہیں کرنا چاہتے۔خیال رہے کہ پاکستان پیپلز پارٹی کے چئیرمین بلاول بھٹو زرداری نے ترجمان پاک فوج سے قومی سلامتی کمیٹی کے اجلاس کی وضاحت طلب کی تھی ، انہوں نے دفتر خارجہ اور وزارت دفاع سے بھی وضاحت مانگی اور کہا کہ سابق وزیراعظم عمران خان اپنی بغاوت کو جواز دینے کے لیے بیرونی سازش کا واویلا کر رہے ہیں ، ترجمان پاک فوج وضاحت کریں گے کہ کیا قومی سلامتی کمیٹی اجلاس میں قومی اسمبلی کے 197 اراکین کو بیرونی سازش کاحصہ قرار دے کر غدار قرار دیا گیا ہے؟ عمران خان کی انا پاکستان سے زیادہ اہم نہیں ہے۔انہوں نے سوال کیا کہ دفتر خارجہ یا وزارت دفاع 7 سے 27 مارچ کے درمیان بیرونی سازش کے حوالے سے سرکاری مراسلات کو سامنے لا سکتے ہیں ، یقیناً اس سطح کی سازش کو بجائے سفارتی مراسلے کے ہماری اپنی انٹیلی جنسی ایجنسیوں کے ذریعے بے نقاب ہونا چاہئیے۔اس کے ردعمل میں پاکستان تحریک انصاف کے رہنماء فواد چوہدری نے قومی سلامتی کمیٹی سے وضاحت طلبی پر بلاول بھٹو زرداری کو آڑے ہاتھوں لے لیا ، انہوں نے کہا کہ نیشنل سکیورٹی کے معاملات پر گفتگو سے پہلے کسی عقلمند سے مشورہ کر لیا کریں ، تحقیقات ہوئیں تو آپ کو بہت نقصان ہوگا ، ہم ابھی بہت خاموش ہیں اس کو غنیمت سمجھیں۔ 

image_pdfimage_print
شیئرکریں