Voice of Asia News

روس نے نازی فلسفہ اپنالیا،صدرپوتین ہٹلرکی تقلیدکررہے ہیں‘زیلنسکی

کیف (وائس آ ف ایشیا) یوکرین کے صدر ولودی میرزیلنسکی نے یومِ فتح کی سالگرہ کے موقع پرکہا ہے کہ روس نے یوکرین کے خلاف جنگ کے ذریعے’’نازی فلسفہ‘‘اپنا لیا ہے اور روسی صدر ولادی میرپوتین نازی رہ نما ایڈولف ہٹلرکی تقلید کر رہے ہیں۔یوکرینی صدریومِ فتح کے موقع پر اپنے روسی ہم منصب کی تقریر کا جواب دے رہے تھے۔انھوں نے کہا کہ ہم یہ کبھی نہیں بھولیں گے کہ دوسری جنگ عظیم میں ہمارے آباء واجداد نے کیا کیا تھا۔صرف کوئی پاگل شخص ہی جنگ کے 2194 دنوں کو دٴْہرانا چاہتا ہے۔وہ شخص،جو آج ہٹلر کی حکومت کے ہولناک جرائم کو دٴْہرارہا ہے، نازی فلسفے پرعمل پیرا ہے اور اپنے ہر کام میں ان کی تقلیدکررہا ہے۔انھوں نے مزید کہاکہ وہ تباہ ہو چکا ہے کیونکہ جب اس نے ان کے قاتل کی نقالی شروع کی تو لاکھوں آباء واجداد نے اس پر لعنت کی۔اس لیے وہ سب کچھ کھو دے گا‘‘۔ان کا اشارہ روسی صدرکی طرف تھا۔نومئی کویوم فتح کی سالگرہ منائی جاتی ہے۔اس تاریخ کو دوسری جنگ عظیم کے اختتام پر نازی جرمنی کو شکست ہوئی تھی۔زیلنسکی نے مزید کہا کہ روس کی مسلط کردہ جنگ جیتنے کے بعد یوکرین میں فتح کے دو دن منائے جائیں گے۔قبل ازیں روسی صدرولادی میرپوتین نے یوم فتح کے موقع پر اپنی تقریر میں یوکرین پر فوجی چڑھائی کا ایک نیاجواز پیش کیا اورکہا کہ ’’روس کی پڑوسی ملک میں فوجی مداخلت ناگزیر ہوگئی تھی کیونکہ مغرب کریمیا سمیت ہماری سرزمین پر حملے کی تیاری کر رہاتھا۔صدر پوتین نے نازی جرمنی کے خلاف دوسری عالمی جنگ میں فتح کی 77ویں سالگرہ کے موقع پر ماسکو کے ریڈ اسکوائرمیں فوجی پریڈ سے خطاب میں روس کو کمزوراور تقسیم کرنے کے بیرونی خطرات کی مذمت کی اور بارباران معروف دلائل کا ذکرکیا جوانھوں نے یوکرین پرروسی فوج کے حملے کے جواز میں پیش کیے تھے کہ نیٹو اتحاداپنی سرحدوں سے متصل علاقوں میں خطرات پیدا کررہا تھا۔انھوں نے دوسری جنگ عظیم میں سوویت افواج کی بہادری کا تذکرہ کیا اوراپنی فوج پر زوردیا کہ وہ یوکرین میں فتح حاصل کرے۔روس 24 فروری کو یوکرین میں شروع کیے گئے حملے کو اپنی خصوصی فوجی کارروائی قراردیتا ہے جس کا مقصد ملک کو نازی قوم پرستوں سے پاک کرنا ہے۔

image_pdfimage_print
شیئرکریں