Voice of Asia News

اگر سلیکٹر ہوتا تو عمران ملک بھارتی ٹیم میں شامل ہوتے، کیون پیٹرسن

ممبئی(وائس آ ف ایشیا)انگلینڈ کے سابق کپتان کیون پیٹرسن نے اپنے ایک مضمون میں کہا کہ اگر وہ بھارت کے سلیکٹر ہوتے تو عمران ملک ٹیم میں شامل ہوتے۔انگلینڈ کے سابق کپتان کیون پیٹرسن آئی پی ایل ٹیم سن رائزرز حیدرآباد کے فاسٹ بولر عمران ملک کی تیز رفتاری کے مداح ہوگئے۔ وہ چاہتے ہیں کہ ہندوستانی سلیکٹرز جلد عمران ملک کو ٹیسٹ ٹیم میں شامل کریں۔مقبوضہ کشمیر سے تعلق رکھنے والے 22 سالہ عمران ملک اس آئی پی ایل میں مسلسل 150 کلومیٹر فی گھنٹہ کی رفتار سے بولنگ کر رہے ہیں۔گزشتہ میچ میں انہوں نے آئی پی ایل کی تاریخ کی تیز ترین گیند پھینکی تھی۔ اس گیند کی رفتار 157 کلومیٹر فی گھنٹہ تھی۔پیٹرسن نے اپنے ایک مضمون میں واضح طور پر کہا ہے کہ انگلینڈ کے خلاف اولڈ ٹریفورڈ میں ہونے والے ٹیسٹ میچ کے لیے عمران ملک کو ہندوستانی ٹیم میں شامل کیا جانا چاہیے۔کیون پیٹرسن نے مضمون میں لکھا کہ اگر وہ سلیکٹر ہوتے تو عمران ملک کو بھارتی ٹیسٹ ٹیم میں ضرور شامل کرتے۔پیٹرسن نے کہا کہ انگلینڈ کے بلے بازوں کو یقیناًعمران ملک کی گیندیں کھیلنا مشکل ہو گا۔پیٹرسن لکھتے ہیں کہ اس وقت آئی پی ایل میں بہت سے ہندوستانی نوجوان تیز گیند باز ہیں۔ غیر ملکی بولرز میں صرف لوکی فرگوسن اور الزاری جوزف ہی ان کی رفتار کا مقابلہ کر رہے ہیں۔کے پی نے کارتک تیاگی اور محسن خان دونوں کی تیز رفتار بالنگ کی بھی تعریف کی لیکن ایک بولر جو سب سے زیادہ پرجوش ہے وہ عمران ملک ہے۔کیون پیٹرسن نے کہا کہ عمران ملک نے دہلی کے خلاف 157 کلومیٹر فی گھنٹہ کی رفتار سے گیند پھینکی۔ یہ واقعی حیرت انگیز رفتار ہے۔واضح رہے کہ عمران ملک اس سیزن میں سن رائزرز کی جانب سے اب تک 10 میچوں میں 15 وکٹیں لے چکے ہیں۔

image_pdfimage_print
شیئرکریں