انتخابات 2020ء ‘ صدر ٹرمپ نے میڈیا پر تنقید کے ساتھ مہم کا آغاز کر دیا

فلوریڈا (وائس آف ایشیا)امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ نے 2020 کے صدارتی انتخابات کی مہم کا باقاعدہ آغاز کر دیا ہے۔ ریاست فلوریڈا میں بڑے جلسہ عام سے خطاب کرتے ہوئے صدر ٹرمپ نے اعلان کیا کہ وہ آئندہ انتخابات میں صدارت کے عہدے کے لیے کھڑے ہوں گے۔خطاب کے دوران انہوں نے گذشتہ صدارتی مہم میں کیے گئے وعدوں کو دہراتے ہوئے ایک بار پھر غیر قانونی امیگریشن، میڈیا اور سابقہ صدارتی حریف ہلری کلنٹن کو تنقید کا نشانہ بنایا۔صدر ٹرمپ نے ریلی کو مخاطب کرتے ہوئے کہا کہ میں آپ سے وعدہ کرتا ہوں کہ میں آپ کو کبھی مایوس نہیں کروں گا۔صدر ٹرمپ کا کہنا تھا کہ حریف جماعت ’ڈیموکریٹس‘ امریکہ میں شدت پسندانہ تبدیلیاں لے کر آئیں گے اور سرحد پار سے آنے والے تارکین وطن کے لیے قانونی چارا جوئی کریں گے تاکہ انتخابات میں ان سے ووٹ حاصل کر سکیں۔ہمارا ملک قانون ماننے والے شہریوں کے لیے پناہ گاہ ہونا چاہیے نہ کہ غیر ملکی مجرموں کے لیے۔انہوں نے کہا کہ ڈیموکریٹس ملک تباہ کرنا چاہتے ہیں اور ایسا نہیں ہوگا۔صدر ٹرمپ نے اپنے حریفوں کو ’بائیں بازو کا شدت پسند ہجوم‘ قرار دیا تھا جو امریکہ میں سوشلزم نظام لے آئیں گے۔2020 میں کسی بھی ڈیموکریٹ کو ووٹ دیناشدت پسندانہ سوشلزم کو پروان چڑھانے اورامریکی خواب کی تباہی کے مترادف ہوگا۔ڈیموکریٹ جماعت سے دو درجن صدارتی امیدوار نامزدگی کے لیے آپس میں مدمقابل ہیں۔ جن میں سے اکثریت رائے شماری میں ڈانلڈ ٹرمپ سے آگے ہیں۔
وائس آف ایشیا19جون 2019 خبر نمبر28




دنیا کی آبادی میں 2050ء تک 2 ارب نفوس کا اضافہ ہوجائیگا‘اقوام متحدہ

نیویارک (وائس آف ایشیا)اقوام متحدہ نے خبردار کیا ہے کہ دنیا بھر کی آبادی میں 2050 تک تقریباً 2 ارب نفوس کا اضافہ ہوجائے گا اور پاکستان ان 10 ممالک کی فہرست میں 9ویں نمبر ہے جہاں موجودہ آبادی کا نصف حصہ 2050 میں دگنا ہوجائیگا۔ رپورٹ کے مطابق عالمی ادارہ اقوام متحدہ کے پاپولیشن ڈویژن کی جاری کردہ ورلڈ پولیشن 2019 رپورٹ میں پاکستان کی موجودہ آبادی کا نصف حصہ 2050 تک دگنا ہوجانے پر تشویش کا اظہار کیا گیا۔رپورٹ کے مطابق دنیا بھر کی موجودہ آبادی 7 ارب 70 کروڑ ہے جو 2050 تک تقریباً 9 ارب 70 کروڑ تک پہنچ جائیگی۔آبادی سے متعلق جائزہ رپوٹ میں کہا گیا کہ پاکستان کی موجودہ آبادی 21 کروڑ 70 لاکھ نفوس پر مشتمل ہے حیرت انگیز طور پر2017 کے بعد سے آبادی میں تقریباً 1 کروڑ 20 لاکھ افراد کا اضافہ ہوا۔اقوام متحدہ کے مطابق دنیا کے 8 ممالک کی آبادی کا نصف حصہ 2050 تک دگنا ہوجائے گا۔رپورٹ میں کہا گیا کہ دیگر 8 ممالک میں بھارت، نائجیرہ، کانگو، ایتھوپیا، تنزانیہ، انڈونیشا، مصر اور امریکا شامل ہیں۔بھارت سے متعلق رپورٹ میں انکشاف کیا گیا کہ بھارت میں موجودہ شرح پیدائش کے تناظر میں 2027 تک اس کی آبادی تناسب کے اعتبار سے چین کو شکست دے دی گی۔واضح رہے کہ چین دنیا کا سب سے زیادہ آبادی والا ملک کہلایا جاتا ہے۔علاوہ ازیں پاکستان اور نائجیرہ میں آبادی کا تناسب 1990 اور 2019 کے درمیان دگنا ہوا، پاکستان 8ویں سے 5ویں اور نائجیرہ 7 ویں سے 10 ویں فہرست پر پہنچا۔اقوام متحدہ کے محکمہ آبادی کی رپورٹ میں کہا گیا کہ دنیا میں موجودہ نوجوان طبقہ جو افزائش نسل کی صلاحیت رکھتا ہے، ان کی تعداد گزشتہ ادوار کے مقابلے میں بہت زیادہ ہے۔رپورٹ میں کہا گیا کہ 2019 میں دنیا بھر کی آبادی کا 40 فیصد حصہ ان مملک سے تعلق رکھتا ہے جہاں خواتین نے زندگی بھر میں دو سے چار بچوں کو جنم دیا۔اقوام متحدہ کے مطابق ان ممالک میں سرفہرست بھارت، انڈونیشا، پاکستان، میکسیکو، فلپائن اور مصر شامل ہیں۔
وائس آف ایشیا19جون 2019 خبر نمبر22




مالی،دوگاؤں میں دہشتگردانہ حملے38 افراد ہلاک متعدد زخمی

مالے(وائس آف ایشیا)مالی دوگاؤں میں حملوں کے نتیجے میں 38 افراد ہلاک جبکہ متعدد زخمی ہوگئے غیر ملکی خبر رساں ادارے کے مطابق حکام نے بتایا کہ وسطی مالی کے دوگاؤں گنگافانی اور پورو میں دہشتگردانہ حملے کئے گئے جسکے نتیجے میں 38ا فراد ہلاک جبکہ متعدد زخمی ہوگئے حکام کا کہنا ہے کہ حملے کے فوری بعد سیکیورٹی فورسز نے ان علاقوں کو گھیرے میں لیکر آبادی کو تحفظ فراہم کیا جبکہ زخمیوں کو ہسپتال منتقل کردیا گیا فوری طور کسی گروپ نے حملے کی ذمہ داری قبول نہیں کی۔




آئل ٹینکر پر حملے بارے امریکی فوٹیج اور تصاویر بے بنیاد ہیں ،روس

ماسکو(وائس آف ایشیا)روس نے عمانی سمندر میں آئل ٹینکر پر حملے میں ایران کے ملوث ہونے بارے جاری کی گئی امریکہ فوٹیج اور تصاویر کو مسترد کرتے ہوئے کہاہے کہ ہمارے پاس ایسا کوئی انٹیلی جنس مواد نہیں ہے جو واقعے کے مجرم کو ثابت کرتا ہو غیر ملکی خبر رساں ادارے کے مطابق اپنے ایک انٹرویو میں روسی وزیر خارجہ سرگئی لاوروف نے کہا کہ روس آئل ٹینکر پر حملے بارے امریکی فوٹیج اور تصاویر کے مبینہ ثبوت کو ابہام کے طور پر لے رہے ہیں جو کہ اسکے قریبی اتحادیوں کے درمیاں بھی سنجیدہ سوالات کو جنم دے رہے ہیں انہوں نے کہا کہ ہم اسطرح کے تمام واقعات کی وسیع پیمانے پر تحقیقات کے خواہاں ہیں اور در حقیقت ایران بھی بہت شروع سے ایسی تحقیقات کا حامی ہے انہوں نے کہا کہ ایران تمام فریقین سے مطالبہ کرتا ہے کہ وہ صبر کا مظاہرہ کرتے ہوئے کوئی بھی سخت اقدام اٹھانے سے گریز کریں انہوں نے تمام خلیجی ممالک کے درمیان مذاکرات کی ضرورت پر زور دیتے ہوئے کہا کہ عربوں اور فارسیوں عربوں اور کردوں اورسنیوں اور شیعوں کے درمیاں اختلافات کسی کے مفاد میں نہیں ۔




گولن تحریک سے تعلق کے شبے میں 128 ترک فوجیوں کی گرفتاری کاحکم

قاہرہ (وائس آف ایشیا)ترک حکام نے امریکا میں خود ساختہ جلا وطن لیڈر فتح اﷲ گولن کی جماعت سے تعلق کے شبے میں 128 فوجیوں کی گرفتاری کاحکم دیا ہے۔ ترک حکام کا کہنا ہے کہ ان فوجیوں پر سنہ 2016ء کی ناکام فوجی بغاوت میں ملوث ہونے کا شبہ ظاہرکیا جا رہا ہے۔خبر رساں ایجنسی نے ذرائع کے حوالے سے بتایا کہ ترک پولیس گولن تحریک سے تعلق کے شبے میں 128 فوجیوں کی گرفتاری کے لے چھاپے مار رہی ہے۔ان میں سے نصف فوجی مغربی ساحلی علاقے ازمیر اور باقی ملک کے دیگر 30 علاقوں سے تعلق رکھتے ہیں۔ذرائع کاکہنا ہیکہ پولیس کومطلوب فوجیوں میں امریکا میں مذہبی رہ نما فتح اﷲ گولن کی تحریک کے ساتھ وابستگی کا شبہ ہے۔ ترک حکومت کا دعویٰ ہے کہ سنہ 2016ء کی ناکام فوجی بغاوت کی منصوبہ بندی فتح اﷲ گولن نے کی تھی تاہم وہ بار بار اس الزام کی سختی سے تردید کرچکے ہیں۔ترکی میں فوجی بغاوت کی ناکام کوشش کے بعد اس میں ملوث ہونے کے شبے میں 77000 افراد کو گرفتار کرکے ان کے خلاف مقدمات چلائے جا رہے ہیں جب کہ ڈیڑھ لاکھ سرکاری ملازمین جن میں فوج اورپولیس کے اہلکار بھی شامل ہیں کو ملازمت سیفارغ کردیا گیا ہے۔
وائس آف ایشیا19جون 2019 خبر نمبر40




ایرانی میزائل طیارہ بردار بحری جہازوں کو ٹھیک ٹھیک نشانہ بنا سکتے ہیں‘کمانڈرسپاہ پاسداران

تہران(وائس آف ایشیا)سپاہِ پاسداران انقلاب ایران کے کمانڈر نے کہا ہے کہ ان کے ملک کے بیلسٹک میزائل سمندر میں طیارہ بردار بحری بیڑوں کو ٹھیک ٹھیک نشانہ بنانے کی صلاحیت کے حامل ہیں۔بریگیڈئیر جنرل حسین سلامی نے سرکاری ٹیلی ویژن سے نشر کی گئی تقریر میں کہا ہے کہ یہ میزائل سمندر میں طیارہ بردار بحری جہازوں کو ٹھیک ٹھیک نشانہ بنا سکتے ہیں۔یہ میزائل ملک ہی میں تیار کیے گئے ہیں۔ان کا سراغ لگانا اور انھیں دوسرے میزائلوں سے نشانہ بنانا بہت مشکل ہے۔انھوں نے یہ بھی دعویٰ کیا ہے کہ ایران کی بیلسٹک میزائل ٹیکنالوجی نے مشرقِ اوسط میں طاقت کے توازن کو تبدیل کر دیا ہے۔انھوں نے یہ بیان خلیج عْمان میں گذشتہ جمعرات کو دو تیل بردار بحری جہازوں پر حملے کے بعد جاری کیا ہے۔ اس حملے کے بعد امریکا اور ایران کے درمیان جاری کشیدگی میں مزید اضافہ ہوچکا ہے۔امریکا نے ایران پر اس حملے کا الزام عاید کیا ہے جبکہ ایران نے اس کی تردید کی ہے۔ امریکا نے ایران کے ساتھ کشیدگی میں اضافے کے بعد حال ہی میں ایک اور طیارہ بردار بحری جہاز بھیجا ہے اور مزید ایک ہزار فوجی بھیجنے کا اعلان کیا ہے۔
وائس آف ایشیا19جون 2019 خبر نمبر26a




عراقی سرزمین دوسروں کیخلاف استعمال نہیں ہو سکتی‘عراقی وزیراعظم

بغداد (وائس آف ایشیا)عراق کے وزیر اعظم عدل عبدل مہدی نے مسلح افواج کے جنرل چیف کی حیثیت سے کسی بھی غیر ملکی طاقت یا ملک پر حکومت کی اجازت کے بغیر عراقی سرزمین کے استعمال کرنے پر پابندی عائد کر دی ۔یہ فیصلہ عراقی وزیر اعظم عبدل مہدی کی سرکاری ویب سائٹ پر شائع ہونے والے چار نکاتی بیان میں سامنے آیا۔بیان میں کہا گیا ہے کسی بھی غیر ملکی طاقت پر عراقی حکومت کی اجازت، معاہدے اور کنٹرول کے بغیر عراقی علاقے کے استعمال یا اسے منتقل کرنے پر پابندی ہے۔وزیر اعظم نے عراقی مسلح افواج کے فریم ورک یا کمانڈ اور نگرانی سے باہر کسی بھی مسلح عراقی یا غیر عراقی قوت کے قیام پر بھی پابندی عائد کر دی ہے۔عدل عبدل مہدی نے عراقی مسلح افواج کے فریم ورک کے اندر کسی بھی مسلح افواج کو منتقل کرنے یا آپریشن کرنے، گوداموں یا صنعتوں کو جو عراق کی افواج کے زیر اثر نہ ہوں پر بھی پابندی عائد کر دی ہے۔خیال رہے کہ عراقی وزیر اعظم کا یہ فیصلہ ایک ایسے وقت سامنے آیا ہے جب امریکہ نے حال میں ایران پر الزام عائد کیا کہ اس نے خلیج فارس میں آئل ٹینکروں کو نقصان پہنچایا ہے جس کی ایران تردید کرتا ہے۔خلیج عمان میں دو تیل بردار ٹینکروں پر حملے کے بعد امریکہ اور ایران کے درمیان کشیدگی مزید بڑھ گئی ہے جس کے بعد امریکہ نے اعلان کیا ہے کہ وہ مشرق وسطیٰ میں مزید ایک ہزار اضافی فوجی بھیج رہا ہے۔امریکی وزیرِ خارجہ مائیک پومپیو نے ان ٹینکروں پربلااشتعال حملوں کا الزام ایران پر عائد کیا تھا جبکہ تہران کی جانب سے یہ الزام مسترد کر دیا گیا تھا۔اس سے قبل چین نے امریکہ کی طرف سے ایران پرانتہائی دباؤ بڑھانے پر تنقید کی تھی۔چین کی وزارت خارجہ کے ترجمان وانگ یی نے امریکہ کو خبردار کرتے ہوئے کہا تھا کہ ایران پر دباؤ بڑھانے سے مشرق وسطیٰ میں ایک نیا پنڈورا بکس کھلنے کا خطرہ ہے۔ایران کے صدر حسن روحانی نے سرکاری ٹی وی پر تقریر کرتے ہوئے کہا کہ ان کا ملک کسی کے خلاف جنگ کا ارادہ نہیں رکھتا ۔ انھوں نے کہا کہ عالمی برادری دیکھ سکتی ہے کہ امریکہ کا رویہ کیا اور ایران کا رویہ کیا ہے۔
وائس آف ایشیا19جون 2019 خبر نمبر23




میکسیکومیں آتش فشاں ایک بار پھر پھٹ پڑا

میکسیکو سٹی ( وائس آف ایشیا) میکسیکومیں آتش فشاں ایک بار پھر پھٹ پڑا ،راکھ کے مسلسل اخراج کے باعث 4کلومیٹر کی بلندی تک دھویں کے بادل چھاگئے۔غیر ملکی خبر رساں ادارے کے مطابق میکسیکو میں آتشفشاں پھرپھٹ پڑا۔ذرائع کا کہنا ہے کہ اس آتش فشاں پھٹنے سے قریبی آبادی کے لوگوں کی زندگی کو خطرات لاحق ہوگئے ہیں تاہم ماہرین اس کی مکمل نگرانی کررہے ہیں۔حکام نے شہریوں کو منہ اور ناک ڈھانپنے کر رکھنے کی ہدایت جاری کر دی۔
وائس آف ایشیا18جون 2019 خبر نمبر110




بھارت، لیچی کھانے سے بچوں کی ہلاکتیں 108 ہوگئیں

نئی دہلی ( وائس آف ایشیا) بھارت، لیچی کھانے سے بچوں کی ہلاکتیں 108 ہوگئیں۔بھارتی خبر رساں ادارے کے مطابق بھارت کی ریاست بہار میں لیچی کھانے سے پْراسرار دماغی بیماری میں مبتلا ہو کر مرنے والے بچوں کی تعداد 108ہو گئی۔لیچی کھانے سے پیدا ہونے والی خطرناک دماغی بیماری میں مبتلا سینکڑوں بچے انتہائی نگہداشت کے وارڈ میں زیر علاج ہیں، دماغی بیماری کو مقامی طور پر چمکی بخار کہا جاتا ہے۔ماہرین کے مطابق لیچی فروٹ میں پایا جانے والا زہریلا مواد بچوں کی موت کا سبب ہو سکتا ہے، بچوں میں ہونے والی یہ بیماری موسم گرما میں لیچی کے سیزن میں پیدا ہوتی ہے۔بھارتی ریاست بہارمیں 2014ء میں بھی اسی بیماری سے ڈیڑھ سو ہلاکتیں ہوئی تھیں۔
وائس آف ایشیا18جون 2019 خبر نمبر115




محمد مرسی کو آہستہ آہستہ موت کے منہ میں دھکیل دیا گیا ، اخوان المسلمون

 
نکوسیا( وائس آف ایشیا ) اخوان المسلمون نے مصری حکام کو محمد مرسی کی جان بوجھ کر آہستہ آہستہ موت کیلئے ذمہ دار ٹھہرایا ہے جیسا کہ سابق اسلام پسند صدر پیر کو قاہرہ میں ایک عدالت میں بے ہوش ہونے کے بعد انتقال کرگئے ہیں ۔ اخوان المسلمون فریڈم اینڈ جسٹس سیاسی جماعت نے اپنی ویب سائٹ پرجاری ایک بیان میں کہا ہے کہ مصری حکام نے انہیں آہستہ آہستہ موت کے منہ میں دھکیلا ۔ انہوں نے ان کی ادویات بند کیں اور خراب خوراک دی انہوں نے انہیں بنیادی انسانی حقوق سے محروم رکھا ۔
وائس آف ایشیا18جون 2019 خبر نمبر111




دنیا میں 2 ارب سے زائد افراد کو پینے کا صاف پانی دستیاب نہیں، اقوام متحدہ

نیو یارک ( وائس آف ایشیا) اقوام متحدہ نے کہا ہے کہ دنیا میں2 ارب سے زائد افراد پینے کے صاف پانی سے محروم ہیں،اس طرح ہر تیسرا شخص اس سہولت سے محروم ہے۔ غیر ملکی خبر رساں ادارے کے مطابق اقوام متحدہ کے اداروں یونیسیف اورعالمی ادارہ صحت کی مشترکہ مانیٹرنگ پروگرام کی رپورٹ2000-2017ء کے مطابق عالمی ادارہ بنیادی سہولیات کی فراہمی میں عدم مساوات کے خاتمے کیلئے عالمی سطح پر اقدامات کررہا ہے تاکہ لوگوں کو پینے کے صاف پانی کی فراہمی اور نکاسی آب جیسی بنیادی سہولیات کو یقینی بنایا جاسکے۔رپورٹ کے مطابق دنیا بھرمیں4.2 ارب افراد نکاسی آب کی سہولیات سے محروم ہیں جبکہ 3 ارب افراد کو ہاتھ دھونے جیسی بنیادی سہولت بھی دستیاب نہیں۔ اعداد و شمار کے مطابق ہر دس میں سے ایک فرد بنیادی سہولیات سے محروم ہے جن میں144 ملین ایسے افراد بھی شامل ہیں۔جو زمین پر موجودآبی ذخائر سے ٹریٹمنٹ کے بغیر پانی پینے پر مجبور ہیں جبکہ دنیا بھر کی دیہی آبادی میں ہر دس میں سے 8 افراد کو صاف پانی اور نکاسی آب جیسی بنیادی سہولیات بھی دستیاب نہیں ہیں۔اقوام متحدہ نے رکن ممالک کی حکومتوں پر زوردیا ہے کہ عالمی سطح پرمعاشی اور جغرافیائی تضادات کے خاتمے کیلئے اپنے عوام کی فلاح و بہبود پر سرمایہ کاری کریں،انسانی وسائل کے شعبے پر سرمایہ کاری میں اضافے سے بنیادی سہولیات کی فراہمی کو یقینی بنایا جائے۔
وائس آف ایشیا18جون 2019 خبر نمبر117




امریکہ سے تنازعہ پر دنیا نے ہمارے موقف کی تعریف کی ہے ، ایران

 
تہران( وائس آف ایشیا ) صدر حسن روحانی نے منگل کے روز کہا ہے کہ واشنگٹن کے ساتھ تنازعہ پر دنیا نے ایران کی تعریف کی ہے اور یہ کہ امریکہ نے تاریخی جوہری معاہدے پر کاربند رہنے کے حوالے سے معاہدوں کو توڑا ہے جس کا ایران مسلسل احترام کررہا ہے ۔ روحانی نے سرکاری ٹیلی ویژن پر براہ راست نشر ہونے والی تقریر میں کہا کہ آج ہم امریکہ کے ساتھ آ منے سامنے ہیں جس میں دنیا میں کوئی ایسا ملک نہیں ہے جو ایران کی تعریف نہیں کرتا انہو ں نے مزید کہا کہ ایران اپنے دستخطوں کے ساتھ مخلص ہے ایران عالمی معاہدوں کے ساتھ وفادار ہے اور ایک ملک جو آج ہمارے خلاف کھڑا ہے ایسا ملک ہے جس نے تمام معاہدوں اور عالمی سمجھوتوں کو توڑا ہے ۔روحانی نے آٹھ مئی کو اعلان کیا تھا کہ ایران معاہدے کے تحت افزودہ یورینیم اور بھاری پانی کے اپنے ذخیرے پر بعض پابندیوں پر عملدرآمد روک دے گا یہ اقدام بقول ان کے امریکہ کے معاہدے سے یکطرفہ انخلاء کا ردعمل ہے ۔تہران اس وقت تک جوہری معاہدوں پر عملدرآمد کو مزید کم کرنے کی دھمکی بھی دے چکا ہے جب تک کہ معاہدے کے دیگر شریک ممالک برطانیہ ، چین ، فرانس ، جرمنی اور روس امریکی پابندیوں کے پیش نظر اس کی مدد نہیں کرتے ۔
وائس آف ایشیا18جون 2019 خبر نمبر106




کویت میں تین برس میں 20 ہزار غیر ملکیوں کے اقامے منسوخ

 
کویت سٹی ( وائس آف ایشیا)کویت میں حکام کے مطابق گذشتہ تین برس میں 20 ہزار غیر ملکیوں کے اقامے منسوخ کیے گئے ہیں۔کویتی وزیر مملکت برائے اقتصادی امور مریم العقیل نے بتایا ہے کہ ان غیر ملکیوں کے اقامے منسوخ کیے گئے جن کی تعلیمی قابلیت ان کے پیشوں سے مطابقت نہیں رکھتی تھی۔کویتی اخبار کو انٹرویو دیتے ہوئے مریم العقیل نے کہا کہ قانون محنت کے مطابق کویت میں مقیم غیر ملکیوں کے پیشے ان کی تعلیمی قابلیت سے مشروط ہیں۔ کارکنوں کے پیشہ ورانہ امتحان کے بعد انہیں اقامے جاری کیے جاتے ہیں۔ وزیر مملکت نے مزید کہا کہ وزرات داخلہ کے تعاون سے تعلیمی صلاحیت سے عدم مطابقت رکھنے والے گرفتار 500 غیر ملکیوں میں سے 194 کو ملک سے بے دخل کیا جاچکا ہے جبکہ کے مقدمات قومی کمیٹی برائے افرادی قوت میں زیر سماعت ہیں۔گھریلو ملازمین کے حوالے سے سوال پر وزیر مملکت کا کہنا تھا کہ قومی کمیٹی برائے افرادی قوت کو متعدد شکایات موصول ہوئی تھیں جن میں کہا گیا تھا کہ ریکروٹنگ ایجنسیوں کی جانب سے غیر ہنرمند افراد کو بھیجا گیا ہے۔ کمیٹی نے قانون کے مطابق ان ایجنسیوں کے خلاف کارروائی کرتے ہوئے انہیں اس بات کا پابند کیا کہ وہ لی گئی فیس واپس کرنے کے ساتھ کارکنوں کو ان کے ملک جانے کا ٹکٹ بھی فراہم کریں ۔کویتی وزیر کا کہنا تھا کہ کویت میں قانون محنت کے مطابق غیر ملکیوں کو ان کی تعلیمی صلاحیت کے مطابق اقامے جاری کیے جاتے ہیں مثال کے طور پر اکاؤنٹینٹ کے لیے لازمی ہے کہ وہ کم ازکم بی کام ہو۔ اسی طرح فنی ماہرین اگر اپنی فیلڈ کے مطابق تعلیمی صلاحیت نہیں رکھتے تو انہیں اقامے جاری نہیں کیے جاتے۔ خلاف ورزی کرنیوالوں کے اقامے منسوخ کر کے ریکروٹنگ ایجنسیوں پر جرمانہ عائد کیا جاتا ہے ۔ کویتی حکومت انسانی سمگلنگ کے سد باب کے لیے عالمی قوانین پر عمل پیرا ہے۔ انسانی حقوق کا تحفظ بھی ہماری اولین ترجیجات میں شامل ہے جس کیلئے ایسے افراد اور اداروں کے خلاف سخت کارروائی کی جاتی ہے جو انسانی سمگلنگ میں ملوث ہوتے ہیں ۔وزیر اقتصادی امور کا کہنا تھا کہ انسانی سمگلنگ جیسے مکروہ فعل کی بیخ کنی کیلئے وزارت محنت نے جامع پروگرام مرتب کیے ہیں جن پر عمل کرنا ہر ادارے کا فرض ہے۔ تعلیمی صلاحیت کی شرط اسی لیے عائد کی گئی ہے تاکہ انسانی سمگلنگ کا سد باب کیا جاسکے۔
وائس آف ایشیا18جون 2019 خبر نمبر37




معزول مصری صدر محمد مرسی کو سپرد خاک بدقسمتی سے عوامی جنازے کی اجازت نہیں دی

 
قاہرہ ( وائس آف ایشیا)مصر کے معزول صدر محمد مرسی کو مشرقی قاہرہ کے قبرستان میں سپرد خاک کردیاگیا۔ محمد مرسی مصری تاریخ کے پہلے منتخب جمہوری صدر تھے جن کی حکومت کا تختہ الٹ کر فوج نے کنٹرول حاصل کر لیا تھا- پیر کو عدالت میں مقدمے کی سماعت کے دوران انکا انتقال ہوگیا تھا۔ مصر ی پبلک پراسیکیوشن نے پوسٹ مارٹم کی کارروائی مکمل ہوجانے کے بعد تدفین کا اجازت نامہ جاری کیا تھا۔ اس موقع پر سخت حفاظتی انتظامات کئے گئے۔ مصری حکام نے عوامی جنازے کی اجازت نہیں دی تھی۔ محمد مرسی کے وکیل عبدالمنعم عبدالمقصود نے بتایا کہ تدفین میں مرسی کے اہل خانہ اور وکیل شریک ہوئے۔محمد مرسی کے صاحبزادوں احمد اور عبداﷲ نے اس سے قبل فیس بک کے اپنے اکاؤنٹ پر اطلاع دی تھی کہ انکے گھر والوں کو تدفین کی کارروائی کے بارے میں کچھ بھی معلوم نہیں۔ مرسی کے بیٹے احمد اور عبداﷲ نے یہ بیان ان اخباری رپورٹوں پر تبصرے کے طو رپر جاری کیا تھا جن میں دعویٰ کیا گیا تھا کہ مصری حکام نے خاندان کے قبرستان میں انکے والد کی تدفین کی اجازت نہیں دی۔ انتقال سے قبل مصر کے سابق صدر محمد مرسی نے جج سے اپنا موقف پیش کرنے کی اجازت طلب کی تھی۔ انہوں نے انتہائی جذباتی انداز میں اپنا موقف پیش کیا۔ بیان دینے کے بعد انکے چہرے سے تھکاوٹ نظر آرہی تھی۔ انہوں نے خود پر جاسوسی کے الزام کی تردید کی اور جیل میں بعض سرگرمیوں کی شکایت بھی کی۔
وائس آف ایشیا18جون 2019 خبر نمبر36




جرمنی اور برطانیہ کا ایران کو افزودہ یورینیم کے ذخائر میں اضافے کے منصوبے پر انتباہ

لکسمبرگ ( وائس آف ایشیا)جرمنی اور برطانیہ نے ایران کو خبردار کیا ہے کہ وہ جولائی 2015ء میں طے شدہ جوہری سمجھوتے کی خلاف ورزی سے گریز کرے اور افزودہ یورینیم کے ذخائر میں اضافہ نہ کرے جبکہ یورپی یونین کی خارجہ پالیسی کی سربراہ فیڈریکا مغرینی نے ایران کی دھمکیوں کو’’ سیاسی ہتھکنڈا ‘‘ قرار دے کر مسترد کردیا ہے۔ایران نے سوموار کے روز دھمکی دی ہے کہ وہ آیندہ دس روز کے بعد افزودہ یورینیم کی مقدار کو تین سو کلو گرام سے بڑھا دے گا لیکن ساتھ ہی اس نے کہا ہے اگر جوہری سمجھوتے کے دوسرے فریق اپنے وعدوں کو پورا کرتے ہیں تو وہ اپنے اس ارادے سے باز آجائے گا اور تین سو کلو گرام کی حد پار نہیں کرے گا۔ایران جوہری سمجھوتے کے فریق پانچ ممالک جرمنی ، فرانس ، برطانیہ ، چین اور روس پر دباؤ ڈال رہا ہے کہ وہ اس کو امریکا کی پابندیوں سے بچانے کے لیے عملی اقدامات کریں اور بالخصوص تیل کی برآمدات کو جاری رکھنے کے لیے اس کی مدد کریں ۔واضح رہے کہ امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ نے مئی 2018ء میں ایران اور چھے بڑی طاقتوں کے درمیان طے شدہ تاریخی جوہری سمجھوتے سے دستبردار ہونے کا ا علان کردیا تھا اور نومبر میں ایران کے خلاف دوبارہ سخت اقتصادی پابندیاں عاید کردی تھیں۔ان میں خاص طور پر اس کی تیل کی تجارت کو ہدف بنایا گیا ہے جس کی وجہ سے اس کی تیل کی برآمدات نصف سے بھی کم رہ گئی ہیں۔جرمن وزیر خارجہ ہائیکو ماس نے ایران کے دس روزہ نئے الٹی میٹم کو مسترد کردیا ہے اور اس پر زور دیا ہے کہ وہ جوہری سمجھوتے کے تقاضوں کو پورا کرے۔انھوں نے لکسمبرگ میں یورپی یونین کے وزرائے خارجہ کے اجلاس کے بعد گفتگو کرتے ہوئے کہا کہ’’ ہم یقیناً ( ایران کی جانب سے) یک طرفہ طورپر سمجھوتے کی ذمے داریوں سے دستبرداری کو قبول نہیں کریں گے۔برطانوی حکومت کے ترجمان نے بھی ان کی اس بات کی تائید کرتے ہوئے کہا ہے کہ ’’سمجھوتے پر دست خط کرنے والے یورپی یونین کے تین رکن ممالک مسلسل یہ بات واضح کررہے ہیں کہ ڈیل کے تقاضوں کی پاسداری میں کوئی کم نہیں ہوسکتی۔ترجمان نے کہا کہ ایران اس وقت جوہری سمجھوتے کے تقاضوں کو پورا کرنے کا پابند ہے۔ہم آیندہ اقدامات کے لیے اپنے یورپی شراکت دار دونوں ممالک ( فرانس اور جرمنی ) سے رابطے میں ہیں۔دریں اثنا یورپی یونین کی خارجہ پالیسی کی سربراہ فیڈریکا مغرینی نے واضح کیا ہے کہ ان کی تنظیم محض ایران کی غوغا آرائی کی بنیاد پر کوئی اقدام نہیں کرے گی بلکہ ا قوام متحدہ کے تحت جوہری توانائی کی بین الاقوامی ایجنسی ( آئی اے ای اے) کی جائزہ رپورٹس کا انتظار کرے گی۔انھوں نے وزرائے خارجہ کے اجلاس کے بعد صحافیوں سے گفتگو کرتے ہوئے کہا کہ ’’ جوہری سمجھوتے پر عمل درآمد سے متعلق ہمارا جائزہ کبھی ایران کے بیانات پر مبنی نہیں رہا ہے اور نہ ایسا ہوگا بلکہ ہمارا جائزہ آئی اے ای اے کی زمینی حقائق کے مطابق فنی رپورٹس پر مبنی ہوتا ہے۔قبل ازیں ایرانی صدر حسن روحانی نے کہا کہ یورپ کے پاس تہران سے طے شدہ جوہری سمجھوتے کو بچانے کے لیے بہت تھوڑا وقت رہ گیا ہے۔انھوں نے تہران میں متعیّن نئے فرانسیسی سفیر سے ملاقات میں گفتگو کرتے ہوئے کہا کہ ’’یہ ایک بہت اہم موقع ہے ۔ فرانس اب بھی سمجھوتے کیدوسرے دست خط کنندہ ممالک کے ساتھ مل کر کام کر سکتا ہے اور وہ اس بہت مختصر وقت میں ڈیل کو بچانے کے لیے تاریخی کردار ادا کرسکتا ہے۔
وائس آف ایشیا18جون 2019 خبر نمبر33




وائٹ ہاؤس کا اسرائیلی حکام کو بحرین میں فلسطین کانفرنس میں مدعو نہ کرنے کا اعلان

واشنگٹن ( وائس آف ایشیا)وائٹ ہاؤس نے اسرائیلی حکومت کے عہدے داروں کو بحرین کے دارالحکومت منامہ میں آئندہ ہفتے فلسطین کے اقتصادی منصوبے کی معاونت کے لیے ہونے والی مجوزہ کانفرنس میں مدعو نہ کرنے کا اعلان کیا ہے۔ ٹرمپ انتظامیہ کے ایک سینیر عہدہ دار کا کہنا ہے کہ یہ فیصلہ کانفرنس کی غیر سیاسی حیثیت کو برقرار رکھنے کے لیے کیا گیا ہے۔اس عہدہ دار نے اپنی شناخت ظاہر نہ کرنے کی شرط پر کہا ہے کہ منامہ میں 25 اور 26 جون کو ہونے والی اس کانفرنس میں فلسطین کے کاروباری نمایندوں کی شرکت متوقع ہے لیکن فلسطینی حکومت کے عہدے دار اس میں شرکت نہیں کریں گے۔واضح رہے کہ فلسطینی حکومت نے اس کانفرنس کے بائیکاٹ کا اعلان کیا تھا اور کہا تھا کہ اس سے امریکا نے اس سلسلے میں کوئی مشاورت نہیں کی ہے۔فلسطینی وزیراعظم محمد اشتیہ کے زیر قیادت حکومت نے وائٹ ہاؤس کے سینیر مشیر جیرڈ کوشنر کے مجوزہ امن اقدام کے بائیکاٹ کا بھی اعلان کیا تھا۔چناں چہ ٹرمپ انتظامیہ نے اسرائیلی حکومت کے عہدے داروں کو بھی اس کانفرنس میں شرکت کی دعوت نہ دینے کا فیصلہ کیا ہے۔اس کانفرنس میں عرب حکومتوں اور یورپی ممالک کے مندوبین کی شرکت متوقع ہے۔منامہ میں ہونے والی اس کانفرنس میں جیرڈ کوشنر اور صدر ڈونلڈ ٹرمپ کے مشرقِ اوسط کے لیے خصوصی ایلچی جیسن گرین بلاٹ امریکی صدر کے طویل عرصے سے التوا کا شکار مجوزہ اسرائیل ، فلسطینی امن منصوبے کے اقتصادی حصے کا اعلان کریں گے۔صدر ٹرمپ اس منصوبے کو ’’ صدی کی ڈیل‘‘ قراردیتے ہیں ۔اس کا مقصد غربِ اردن اور غزہ پٹی میں عرب ڈونر ممالک کی سرمایہ کاری کی حوصلہ افزائی کرنا ہے۔اس کے بعد اس دیرینہ تنازع کے حل کے لیے منصوبے کے سیاسی حصے کو منظرعام پر لایا جائے گا۔
وائس آف ایشیا18جون 2019 خبر نمبر32




امریکی پابندیوں میں سختی ‘ پاسداران انقلاب کو شدید مالی بحران کا سامنا

تہران/وشنگٹن( وائس آف ایشیا)امریکا کی جانب سے ایران پرعاید کردہ کڑی پابندیوں کے بعد پاسداران انقلاب کو شدید مالی بحران کا سامنا ہے۔ اس بحران سے نمٹنے کے لیے پاسداران انقلاب عراق اور شام میں موجود اپنے حامی گروپوں سے مدد کے حصول کے لیے کوشاں ہے۔امریکی خباروال اسٹریٹ جرنل کی رپورٹ کے مطابق امریکی پابندیوں میں سختی اور ایرانی معیشت کا گلہ گھونٹے جانے کے بعد پاسداران انقلاب کو رقوم کے حصول میں بہت مشکل پیش آ رہی ہے۔ اس مشکل سے نمٹنے کے لیے پاسداران انقلاب نے رقم کے حصول کے نئے ذرائع تلاش کرنا شروع کیے ہیں۔ ان نئے ذرائع میں شام،عراق اور بعض دوسرے ملکوں میں موجود ایرانی حمایت یافتہ گروپ بھی شامل ہیں جن سے مدد لینے کی کوشش کی جا رہی ہے۔ رپورٹ میں کہا گیا ہے کہ پاسداران انقلاب امریکی پابندیوں کو غیر موثر بنانے کے لیے متبادل مالی ذرائع کے حصول کے لیے سرگرم ہے۔ امریکا اور ایران کے درمیان کشیدگی اور خلیج عمان میں حالیہ ایام میں تیل بردار جہازوں پرہونیوالے حملوں کے بعد پاسداران انقلاب کو ایک نئے اور سخت چیلنج کا سامنا ہے۔امریکی پابندیوں کے نتیجے میں ایران اس وقت سخت معاشی دباؤ میں ہے۔ ایسے حالات میں پاسداران انقلاب نے شام اور عراق میں نئے مالی ذرائع تلاش کرنا شروع کیے ہیں۔ اسمگلنگ نیٹ ورک کا دائرہ وسیع کیا جا رہا ہے۔ پاسداران انقلاب کے حوالے سے امریکی مشیروں اور ماہرین اقتصادیات نے امریکی حکومت کو مطلع کیا ہے کہ پابندیوں نے پاسداران انقلاب کو غیرمعمولی طورپر متاثر کیا ہے۔
وائس آف ایشیا18جون 2019 خبر نمبر31




ایران میں خامنہ ای کے جانشین کے تقرر کے طریقہ کار پراختلافات میں شدت

 
تہران ( وائس آف ایشیا)ایران کی خبر گان کونسل کیارکان میں اسلامی جمہوریہ کے سپریم لیڈر آیت اﷲ علی خامنہ ای کے جانشین کے انتخاب اور طریقہ انتخاب کے حوالے سے اختلافات ایک بار پھر شدت اختیار کرگئے ہیں۔ اخباری اطلاعات کے مطابق خبر گان کونسل کے ارکان میں خامنہ ای کے جانشین کی نامزدگی اور امیدواروں کے ناموں کے اعلانات کے طریقہ کار پر اتفاق رائے نہیں ہوسکا ہے۔خبر گان کونسل کے ایک سینیر رکن ھاشم ھشمزادہ ھریسی نے اتوار کوایک بیان میں کہا کہ مرشد اعلیٰ کے جانشین کے لیے امیدواروں کی خفیہ فہرست قبول نہیں کی جائے گی بلکہ جانشینی کا معاملہ کھلے عام زیربحث لایا جائے۔ہاشم ہریسی کے بیان کے برخلاف کونسل کے ایک دوسرے رکن محسن اراکی کا کہنا تھا کہ کونسل کی ایک ذیلی کمیٹی نے خامنہ ای کے جانشین کے لیے ایک خفیہ فہرست 100 فی صد مکمل تیار کرلی ہے۔ یہ فہرست خامنہ ای کی اپنی نگرانی میں تیار کی گئی ہے۔خبر رساں ادارے ارنا کے مطابق ھریسی کا کہنا ہے کہ اعلانیہ فہرست خود خامنہ ای کے عہد میں بھی رائج اور قانونی طورپر موجود رہی ہے۔ ملک کا نیا سپریم لیڈر منتخب کرنے کے لیے کسی خاص کمیٹی کے ذریعے کارروائی کے بجائے اعلانیہ چناؤ کیا جانا چاہیے۔اپنے ایک انٹرویو میں محسن اراکی کا کہنا تھا کہ خبر گان کونسل کے صرف تین ارکان نے خفیہ طورپر خامنہ ای کے جانشین کے لیے مجوزہ امیدواروں کی فہرست تیار کی ہے۔ ضرورت پڑنے پر یہ فہرست کونسل کیتمام ارکان کے سامنے پیش کی جائے گی۔خیال رہے کہ ایران میں سپریم لیڈر آیت اﷲ علی خامنہ ای کی خرابی صحت کے بعد ان کے جانشین کے تقرر کی باتیں گذشتہ کئی سال سے جاری ہیں۔ خامنہ جو اس وقت عمر رسیدہ ہونے کیساتھ ساتھ پروسٹیٹ کینسر کا بھی شکار ہیں کسی بھی وقت داعی اجل کو لبیک کہہ سکتے ہیں۔ ایرانی مقتدر حلقوں میں یہ خدشہ بھی موجود ہیکہ اگر خامنہ ای کی زندگی میں ان کے جانشین کا تقرر نہ ہوسکا تو ان کی وفات کے بعد قیادت کا خلاء پیدا ہوسکتا ہے۔ اگر خامنہ ای کی زندگی میں ان کا جانشین مقرر نہ ہوا تو ایران ایک نئے خلفشار کا شکار ہوگا اور عوام حکومت کیخلاف اٹھ کھڑے ہوں گے۔
وائس آف ایشیا18جون 2019 خبر نمبر28




امریکا کا مزید ایک ہزار فوجی مشرق وسطیٰ میں تعینات کرنے کا اعلان‘جنرل پیٹرک

واشنگٹن ( وائس آف ایشیا)امریکی وزارتِ دفاع پینٹاگان نے ایک بیان میں مزید 1000 فوجیوں کو مشرق وسطیٰ میں تعینات کرنے کا اعلان کیا گیا ہے۔عرب ٹی وی کے مطابق امریکی نائب وزیردفاع پیٹرک شاناھن نے ایک بیان میں کہا کہ سینٹرل کمانڈ کی درخواست پرعمل درآمد کرتے ہوئے مزید ایک ہزار فوجیوں کو مشرق وسطیٰ میں تعینات کرنے کا فیصلہ کیا گیا ہے تاکہ خطے میں فضائی، بری اور بحری خطرات سے نمٹنے میں مدد لی جاسکے۔بیان میں مزید کہا گیا ہے کہ ایران کی طرف سے حالیہ ایام میں ہونے والے حملوں کے شواہد بتاتے ہیں کہ تہران معاندانہ روش پرعمل پیرا ہے۔ خطے میں امریکا اور اس کے مفادات کو ایرانی فوج اور اس کے حمایت یافتہ عناصر سے خطرات لاحق ہیں۔جنرل پیٹرک کا کہنا تھا کہ ان کا ملک امریکا کے ساتھ جنگ نہیں چاہتا۔ ان کا کہنا تھا کہ ہمارا پہلا مقصد خطے میں امریکی مفادات اور وہاں پرکام کرنے والے امریکی شہریوں کی جان ومال کا تحفظ ہے۔ ہم خطے میں اپنے مفادات اور شہریوں کے تحفظ کے پیش نظر انٹیلی جنس اداروں کی مصدقہ معلومات کی روشنی میں سیکیورٹی پلان تیار کرتے ہیں۔قبل ازیں دو امریکی عہدیداروں نے رائیٹرز سے بات کرتے ہوئے انکشاف کیا تھا کہ امریکا مشرق وسطیٰ میں مزید فوج بھیجنے کی تیاری کررہا ہے تاکہ خطے میں ایران کی طرف سے درپیش خطرات کا تدارک کیا جا سکے۔ ان کا کہنا تھا کہ گذشتہ ہفتے بحر عمان میں تیل بردار جہازوں پرحملوں کے بعد خطے میں امریکی فوج کی اضافی نفری کی ضرورت بڑھ گئی ہے۔نام ظاہر نہ کرنے کی شرط پرفوج بھیجنے کی خبردینے والے اہلکاروں نے یہ نہیں بتایا کہ آیا اضافی نفری کب بھیجی جائے گی۔مئی کے آخر میں امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ نے 1500 امریکی فوجی مشرق وسطیٰ بھیجنے کا اعلان کیا تھا۔ ان کا کہنا تھا کہ مشرق وسطیٰ میں مزید فوج بھیجنے کے معاملے میں انہیں اپنی انتظامیہ کی اکثریت کی حمایت حاصل ہے۔خیال رہے کہ امریکا نے مشرق وسطیٰ میں ایک ایسے وقت میں اضافی نفری تعینات کرنے کا فیصلہ کیا ہے جب دوسری جانب امریکا اور ایران کے درمیان جاری محاذ آرائی اپنے عروج پرہے۔اگرچہ دونوں ملک مذاکرات کی بات بھی کرتے ہیں مگر ایران پر الزام ہے کہ وہ امن بات چیت کے لیے امریکی شرائط کو نظرانداز کررہا ہے جب کہ ایران کا کہنا ہے کہ مذاکرات کے لیے امریکی ناقابل اعتبار ہیں۔
وائس آف ایشیا18جون 2019 خبر نمبر27




کینیڈا:20لاکھ سے زائد افراد کی ریلی کے دوران پریڈ پر فائرنگ ،4 افراد زخمی

 
ٹورنٹو( وائس آف ایشیا )کینیڈا کے شہر ٹورنٹو میں 20 لاکھ سے زائد افراد کی ریلی کے دوران ریپٹرز کی پریڈ میں فائرنگ سے 4 افراد زخمی ہوگئے۔واشنگٹن پوسٹ میں شائع رپورٹ کے مطابق ٹورنٹو پولیس چیف مارک سینڈورز نے بتایا کہ باسکٹ بال کی چیمپئن بننے والی کینیڈین ٹیم ٹورنٹو ریپٹرز کی پریڈ جاری تھی کہ اچانک فائرنگ شروع ہوگئی۔انہوں نے بتایا کہ جس جگہ فائرنگ ہوئی اس وقت کینیڈا کے وزیراعظم جسٹن ٹروڈو بھی اسٹیج پر موجود تھے۔پولیس چیف نے دعوی کیا کہ سیکیورٹی پر تعینات پولیس اہلکاروں نے 3 مشتبہ افراد کو گرفتار کرکے ان کے قبضے سے 2 ممنوعہ اسلحہ برآمد کرلیا۔سوشل میڈیا پر وائرل ہونے والی متعدد ویڈیوز میں دیکھا جا سکتا ہے کہ فائرنگ کے بعد خوفزدہ ہجوم باہر کی جانب بھاگا۔اس حوالے سے بتایا گیا کہ 4 افراد زخمی ہیں تاہم ان کی زندگی کو خطرہ لاحق نہیں۔ایک سوال کے جواب میں پولیس چیف نے بتایا کہ زخمی ہونے والوں میں بعض شدید زخمی بھی ہوئے ہیں تاہم انہوں نے شدید زخمیوں کی نوعیت نہیں بتائی۔ٹورنٹو میں باسکٹ بال چیمپئن بننے والی کینیڈین ٹیم کی جیت کا جشن منانے کے لیے 20 لاکھ افراد ریلی میں شریک تھے۔اس دوران فائرنگ اور بھگدڑ مچنے سے دو افراد زخمی ہوئے۔ٹورنٹو کے شہر کے میئر جان ٹوری نے پولیس کی بروقت کارروائی پر شکریہ اداکیا۔