Breaking News
Voice of Asia News

ایک ارب افراد دنیا میں تمباکو نوشی کرتے ہیں 25 فیصد خواتین

 

لاہور(وائس آف ایشیا ) تمباکو نوشی کے خلاف مناسبت سے ایک ورکشاپ کا اہتمام کیا گیا۔   تمباکو نوشی کے اعداد و شمار بتاتے ہوئے کہا کہ تقریباً ایک ارب افراد دنیا میں تمباکو نوشی کرتے ہیں جن میں سے 25 فیصد خواتین ہیں۔ ہر سال 35 لاکھ افراد تمباکو نوشی سے ہونے والی بیماریوں سے موت کے گھاٹ اُتر جاتے ہیں اور اگر یہی صورتِ حال رہی تو 2020 تک یہ تعداد ایک کروڑ سالانہ ہوسکتی ہے۔ انہوں نے بتایا کہ پاکستان میں تقریباً 2 کروڑ افراد تمباکو استعمال کرتے ہیں اور یہ افراد سگریٹ ، پان، گٹکا اور نسوار وغیرہ پر سالانہ 2 ارب روپے ضایع کرتے ہیں۔ انہوں نے مزید کہا کہ سگریٹ کے دھویں میں 4000 سے زیادہ مضر کیمیائی مادے ہوتے ہیں جن میں 50 سے زائدکینسر کرسکتے ہیں۔ پاکستان میں تمباکو نہ صرف سگریٹ میں استعمال ہورہی ہے بلکہ اس کو پان، گٹکا ،نسوار، مین پوری وغیرہ کی صورت میں بھی استعمال کیا جاتا ہے۔انہوں نے بتایا کہ گٹکا کراچی کے مضافات میں بری طرح پھیل چکا ہے اور تقریباً 90 فیصد مرد حضرات اس کو استعمال کررہے ہیں اور ان علاقوں میں منہ کے سرطان میں بہت اضافہ ہورہا ہے۔  تمباکو نوشی بہت سے جسمانی اور نفسیاتی امراض کو پیدا کرتی ہے اور ان امراض اور تمباکو نوشی سے چھٹکارا پانے کے لیے ہم سب کو مل کر کوشش کرنی ہوگی۔ انہوں نے بتایا کہ ڈاؤ یونیورسٹی اوجھا میں ترک تمباکو نوشی کا ایک کلینک بھی چلارہی ہے اور اس سے کافی افراد فائدہ اٹھا رہے ہیں  اسلام میں ہر قسم کے نشے کی ممانعت ہے اور تمباکو بھی کیونکہ نشہ ہے اس لیے اس کی بھی ممانعت ہے۔

image_pdfimage_print
شیئرکریں
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •