Voice of Asia News

نمک کا زیادہ استعمال کرنے والے افراد کورونا وائرس سے زیادہ متاثر ہوسکتے ہیں

نئی دہلی ( وائس آف ایشیا ) بھارتی ماہرین کی جانب سے دعویٰ کیا گیا ہے کہ زیادہ نمک استعمال کرنے والے افراد کورونا وائرس سے زیادہ متاثر ہوسکتے ہیں۔ بتایا گیا ہے کہ کورونا وائرس ان لوگوں کو شکار بنا رہا ہے جن کا قوت مدافعت بہت خراب ہے۔ بھارتی ماہرین کا کہنا ہے کہ نمک کا زیادہ استعمال قوت مدافعت کو کمزور کرتا ہے۔اس لئے نمک کا استعمال مریضوں کے جان کو خطرے میں ڈال سکتا ہے۔ اگر کوئی انسان روزانہ6 گرام نمک استعمال کرتا ہے اس کا مطلب ہے کہ نمک سے قوت مدافعت بْری طرح متاثر ہو سکتا ہے۔ ماہرین کا کہنا ہے کہ انسان کی قوت مدافعت 5 گرام تک نمک کے استعمال سے متاثر نہیں ہوتی جس کا اعتراف ورلڈ ہیلتھ آرگنائزیشن نے بھی کیا ہے۔ نمک کا کیمیائی نام سوڈیم کلورائڈ ہے اس سے بلڈ پریشر میں اضافے کے ساتھ ہارٹ اٹیک یا سٹروک جیسی بیماریوں کا سبب بھی بن سکتا ہے۔ماہرین کا کہنا ہے کہ کھانے میں کم نمک استعمال کریں آپ کی قوت مدافعت متاثر نہیں ہوگی۔ واضح رہے کورونا وائرس نے اس وقت پوری دنیا کو اپنی لپیٹ میں لیاہوا ہے جس کے بعد اس کی تباہ کاریوں کا سلسلہ جاری ہے۔ ابھی تک دنیا بھر میں اس سے متاثرہ افراد کی تعداد 7 لاکھ 86 ہو گئی ہے اور 38 ہزار افراد اس کی وجہ سے ہلاک ہو گئے ہیں۔ بھارت میں بھی کورونا وائر س نے اپنے قدم جما لئے ہیں جس کے بعد اس کی تباہ کاریو ں نے بھارت کو بھی اپنی لپیٹ میں لے لیا ہے۔انہی خطرات کومدنظر رکھتے ہوئے بھارتی وزیراعظم نریندر مودی نے ملک بھر میں لاک ڈاون کا اعلان کر دیا تھا جس کے بعد شہر کے مختلف مقامات پر احتجاج دیکھنے میں ا?یا تھا۔ لیکن اب مقامی میڈیا کی رپورٹس کے مطابق لاکھوں افراد نے ہجرت کا فیصلہ بھی کیا تھا ، جس کے بعد بھارتی وزیراعظم نریندرمودی نے عوام سے معافی بھی مانگ لی ہے۔
وائس آف ایشیا،01 اپریل2020خبر نمبر 92

image_pdfimage_print

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے