Voice of Asia News

وزیراعظم شوگر مافیا کا حاتمہ کرہں۔

 وبا کے دنوں میں ٹیلی ویژن چینلز پر ہر وقت کرونا سے متاثرہ مریضوں کی تعداد اور انکی اموات کی سرخیاں چلتی رہتی ہیں فضا میں عجب قسم کی سوگواری اور خوف طاری ہے ان حالات میں چینی کا حالات میں چینی کا خود ساختہ بحران پیدا کرنے والوں کے خلاف رپورٹ کا منظر عام پر انا اپک تناظر میں خواشگور بھی ہے چلو چند دن وبا کی خبریں کم اور اس رپورٹ کی باتیں زیادہ ہوں گی برقی اور قلمی زرائع ابلاغ پر اس رپورٹ کے حوالے سے واویلا جاری ہے کچھ عرصہ قبل وطن عزیز میں چینی کا حور ساختہ بحران پیدا ہوا تھا تب وزیراعظم عمران خان کے حکم پر ایف آئی اے نے نے  تحقیقات کا آغاز کیا تھا واجد ضیا کی زہر نگرانی تحقیقات شروع ہو گئی تھی واجد ضیا کی شہرت ایک دلیر اور ایماندار آفسیر کی ہے وہ اس سے قبل پانامہ لیکس اور جعلی بینک اکاؤنٹس کیس کی تحقیقات کرکے نیک نامی کما چکے ہیں انہوں نے ابتدائی تحقیقاتی رپورٹ وزیراعظم عمران خان کو پیش کر دی ہے اس رپورٹ کو وزیراعظم عمران خان نے فورا عوام کے سامنے پیش کر دیا ہے اس رپورٹ میں تحرہک انصاف کے مرکزی رہنما جہانگیر ترین کو 56 کروڑ کی سبسڈی اور وفاقی وزیر خسرو بحتار کو 45 کروڑ کی سبسڈی دینے کا زکر ہے اس کے علاہ آصف علی زرداری اور اومنی گروپ کی 10 شوگر ملز اور شریف  خاندان کی 9 شوگر ملز نے بھی بہتی گنگا سے اشنان کیا ہے  یہ پاکستان کی سیاسی تاریخ میں پہلا موقع ہے کہ شوگر مافیا کے خلاف چینی کا حور ساختہ بحران پیدا کرنے پر کوی تحقیقات شروع ہوی ہیں اور تحقیات کے نتیجہ میں بنائی جانے والی رپورٹ کو منظر عام پر لایا گیا ہے چنیئ کا حور ساختہ بحران پر دور میں ہوا مشرف پلس قاف لیگ  پپلز پارٹی کی حکومت مسلم لیگ نون کی حکومت اور اب تحریک انصاف کی حکومت میں یہ حود ساختہ بحران منظر عام آہا مگر جسا کہ سطور بالا میں لکھا گیا ہے کہ آج سے پہلے کبھی کسی حکمران نے اس بحران کے ذمہ دران کے حلاف کاروائی نہیں کی گی اس بات پر وزیراعظم عمران خان کو دار نہ دینا زدیاتی ہو گا نہ صرف انہوں نے شوگر مافیا کے خلاف تحقیقات کرنے کا حکم دیا بلکہ رپورٹ کو منظر عام پر لایا گیا جب وزیراعظم کو رپورٹ پیش کی گئی اس میں 3 اہم ترین نام تھے جہانگیر ترین خسرو بحتار اور مونس الٰہی۔ جہانگیر ترین تحریک انصاف کے مرکزی رہنما ہیں اور 2018 کے بعد تحریک انصاف کی حکومت سازی میں پیش پیش رہے خسرو بحتار الیکشن سے قبل تحریک انصاف میں شامل ہوے پارٹی ٹکٹ حاصل کیا اور حکومت بن جانے کے بعد وفاقی وزیر بن گہے  مونس الٰہی مسلم لیگ قاف سے ہیں اور حکومت کے اتحادی ہیں ان تنیوں ناموں کے باوجود وزیراعظم عمران خان نے تمام تر دباؤ کو مسترد کیا اور رپورٹ کو عوام کے سامنے پیش کر دیا گیا جو ایک قابل تحسین اقدام ہے 25 اپریل کو وزیراعظم کو حتمی رپورٹ پیش کر دی جائے گی  دیکھیں کے وی شوگر مافیا کے خلاف کیا حکم نامہ جاری کرتے ہیں اس رپورٹ کے منظر عام آنے کے بعد اہک بات تو عیاں ہو گہی ہے شوگر مافیا اس ملک میں کس قدر طاقتور ہے اور کابینہ سے سبڈی لہنے کی منظوری کسے لیے لیتا ہے پنجاب اور سندھ کو اپنے رجوڑاے سمجھ کر حکمرانی کرنے والے دو طاقت ور  خاندان زرداری اور شریف جو پچھلے 30 سالوں سے صدر وزیراعظم اور وزیراعلی جسے طاقت ور عہدوں پر فائز رہ چکے ہیں اور جہانگیر ترین اور خسرو بحتار جو پہلے قاف لیگ اور تحریک انصاف کی حکومت کا حصہ ہیں درحقیقت یہ لوگ سلیلسن مافیا ہیں جو ہر حکومت میں شامل ہوتے ہیں اور اپنے مفادات کا تحفظ کرتے ہیں اور عوام کی جیبوں پر ڈاکہ ڈالنے کے لئے ہم نوالہ ہم پیالہ ہو جاتے ہیں۔ مقام خہرت یہ ہے کہ قاہد حزب اختلاف شہباز شریف نے ارشاد فرمایا ہے کہ یہ  رپورٹ وزیراعظم عمران خان اور وزیراعلی اعلیٰ عثمان بزدار کے خلاف چارج شیٹ ہے۔ ہہ وہی شہباز شریف ہیں جن کے دور میں ماڈل ٹاؤن میں قتل عام ہوا اس پر عدالت کمشن بنایا گیا تب شہباز شریف نے کہا اگر کمشن کی رپورٹ میں میرا تذکرہ ہوا تو میں استعفی دے دوں گا مگر جب کمشن نے ان۔ کو رپورٹ دی تو انہوں نے رپورٹ کو منظر عام لانے نہیں دیا پھر لاہور ہائیکورٹ کے حکم پر رپورٹ منظرعام پر ای تو شہباز شریف نے استعفیٰ نہیں دیا الٹا اپنے اہک درباری رانا ثنا اللہ کے زریعے جسٹس علی باقے نجفی پر الزامات لگائے گئے  شہباز شریف کے اس بیان کے بعد یہ بات سامنے آئی ہے وہ واجد ضیا صاحب کی رپورٹ کو ٹھیک سمجھتے ہیں اب اگر واجد ضیا کی شوگر مافیا کے خلاف رپورٹ ٹھیک ہے تو پھر پانامہ لیکس پر ان کی رپورٹ کسے غلط ہو سکتی ہے لہذا شہباز شریف کو اس پر قوم سے معافی مانگنی چاہیے ہی سب کچھ بلاول بھٹو زرداری کو بھی کرنا چاہتے کیونکہ جعلی بینک اکاؤنٹس کیس کی تحقیقات واجد ضیا صاحب نے کی تھی اگر وہ وہاں غلط تھے تو ہاں ٹھیک کسے ہو گہے ہیں۔ اس رپورٹ کا سب سے دلچسپ حصہ چوہدری منیر اور مونس الٰہی کی شراکت داری کا ہے چوہدری منیر مریم نواز کے سمدی ہیں اور مونس الٰہی مریم نواز کے سیاسی مخالف لیکن جب بات نوٹ کمانے کی آتی ہے تو سارے سیاسی مخالف اہک ہو جاتے ہیں   ۔ اب قوم وزیراعظم عمران خان کی طرف دیکھ رہی ہے وہ 25 اپریل کے بعد کیا فیصلہ کرتے ہیں وزیراعظم صاحب آپ نے پحاس فیصد کام کیا ہے پحاس فیصد ابھی باقی ہے اگر آج اس شوگر مافیا کو لگام نہ ڈالی تو یہ کبھی قابو نہیں اے گا وزیراعظم صاحب آپ نے کمال جرآت کا مظاہرہ کر کے شوگر مافیا کو بے نقاب تو کر دیا ہے اب ان کا احتساب بھی کریں ان سے وہ رقم نکلوہں جو عوام کی جیب سے نکالی گی ہے وزیراعظم صاحب قوم آپ کی طرف دیکھ رہی ہے
image_pdfimage_print
شیئرکریں
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے