Voice of Asia News

مقبوضہ کشمیر گذشتہ 31 کے دوران شہیدوں723 95 میں342 2 خواتین شامل

سری نگر(وائس آف ایشیا ): بھارت کے زیر قبضہ جموں و کشمیر میں بھارتی فوجیوں کی ریاستی دہشت گردی کی بلاجواز کارروائیوں کی وجہ سے گذشتہ 31 سالوں کے دوران شہید723 95شہریوں میں342 2 خواتین شامل ہیں۔کشمیرمیڈیاسروس کی رپورٹ کے مطابق بھارتی فوجیوں نے اس دوران 11،224 خواتین سے بدتمیزی کی رپورٹ کے مطابق 1989 سے لے کر اب تک923 22خواتین کو بیوہ کیا گیا ۔ رپورٹ میں کہا گیا ہے کہ قابض فوجی کشمیریوں کی جاری آزادی کی جدوجہد کو دبانے کے لئے باقاعدگی سے خواتین کو جنسی طور پر ہراساں کرنے میں ملوث رہے ہیں۔ رپورٹ میں کہا گیا ہے کہ اگرچہ مردوں کو لاپتہ ہونے کا نشانہ بنایا گیا تھا ، لیکن خواتین لاپتہ افراد سے ماؤں ، بیویاں ، بہنوں اور بیٹیوں کی حیثیت سے منسلک ہونے کی وجہ سے بری طرح متاثر ہوئی تھیں۔ رپورٹ میں بتایا گیا ہے کہ مقبوضہ علاقے میں بھارتی پولیس اور فوجیوں کے ذریعہ ہونے والے تشد د کی وجہ سے ایک لاکھ سے خواتین ذہنی مریض بن گئی ہیں ۔رپورٹ میں کہا گیا ہے کہ خواتین مزاحمتی رہنماؤں ، آسیہ اندرابی ، فہمیدہ صوفی اور ناہیدہ نسرین سمیت آدھی درجن سے زیادہ خواتین گذشتہ چار سالوں سے بھارت کی بدنام زمانہ تہاڑ جیل میں غیر قانونی نظربند ہیں جبکہ انشا طارق جان ، حنا بشیر بیگ ، حسینہ بیگم اور نسیمہ بانو۔ ، ایک شہید توصیف احمد شیخ کی والدہ ، مختلف جیلوں میں بند ہیں۔ رپورٹ میں کہا گیا ہے کہ کورونا وائرس وبائی مرض کے وقت ان کی فیملی اپنی بیٹیوں کی خیریت سے پریشان ہیں۔رپورٹ میں کہا گیا ہے کہ ڈوڈا میں ، ایک 90 سالہ غلام محمد بٹ گذشتہ سال اس کی بیٹی کے ساتھ دیکھنے کی خواہش کے ساتھ فوت ہوگیا تھا ، جسے بھارتی فوجیوں نے جون 2000 میں اغوا کیا تھا۔ رپورٹ میں کا گیا ہے کہ بھارتی فورسز کے اہلکار کشمیریوں کو دبانے کے لئے علاقے میں خواتین کے ساتھ بدسلوکی کو جنگ کے ہتھیار کے طور پر استعمال کررہے ہیں ’صرف اپنے حق خود ارادیت کے حصول کے لئے جدوجہد کر رہے ہیں۔ رپورٹ میں کشمیری مزاحمتی رہنماؤں اور انسانی حقوق کے گروہوں سے مطالبہ کیا گیا ہے کہ وہ کنن پوش پورہ اجتماعی عصمت دری اور سانحہ شوپیاں سمیت خواتین کے خلاف عصمت دری ، قتل اور انسانی حقوق کی پامالی کے دیگر واقعات کی غیر جانبدارانہ تحقیقات کریں۔ فروری 1991 میں کپواڑہ کے کنن پوش پورہ میں 100 سے زیادہ خواتین کو اجتماعی عصمت دری کا نشانہ بنایا گیا تھا جبکہ مئی 2009 میں شوپیاں میں وردی میں دو خواتین ، آسیا اور نیلوفر کو اغوا کیا گیا تھا ، اس کے بعد انھیں زیادتی کا نشانہ بنایا گیا تھا۔ اس کے بعد ایک 9 سالہ بچی ، آصفہ بانو ، جنوری 2018 میں جموں خطے کے علاقے کٹھوعہ میں بھارتی پولیس اہلکاروں اور انتہا پسند ہندو تنظیموں سے وابستہ جنونیوں نے اغوا کیا تھا اور اجتماعی عصمت دری کی تھی۔

image_pdfimage_print
شیئرکریں
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے